منگل، 27 دسمبر، 2011

خبر اور اخبار

بی بی سی کی ایک خبر کے مطابق
http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/12/111225_orakzai_bombing_ra.shtml
پاک فوج نامی لوگوں نے جنگی جهازوں سے پاکستان کے ایک علاقے اورکزئی پر بم مارے هیں ـ
جس ميں کئی پاکستانیوں کی املاک کے تباه هونے کا بھی بتایا گیاهے اور خدشه هے که کوئی دس پاکستانی اس بم باری میں فوت کر دیے گئے هیں ـ
یاد رهے که پاکستان ميں پاکستانیوں کی حفاظت کا کوئی معقول انتظام نهیں ہے
مختلف ناموں سے جانے جانے والے ٹولے پاکستانیوں کو شمال سے لے کر جنوب تک مار رهے هیں
بلوچستان میں مسخ شده لاشیں ملتی هیں اور دوسرے علاقوں میں بم دمھاکےهوتے هیں
اس غارت گری سے تنگ آ کر بنگالی پاکستانیوں نے انیس سو اکہتر میں اپنا ملک علیحده کر لیا تھا

ایدهر گبھرو لاشاں ڈگیاں سینے پاٹے ماواں دے
اودهر ٹھیک نشانے بدلے ،لگدے تغمے تلّے رهے

دوش ناں دیوں هواواں نوں سر توں اڈیاں تمبوواں دا
کلّے ٹھیک نئیں ٹھوکے خورے ، ساتھوں رسے ٹلہے رهے

جمعہ، 23 دسمبر، 2011

لاشوں کی طاقت

ایک بات دیکھی هے
که جب کهیں کسی نے ایک بڑی اکثریت کو بیوقوف بنانا هوتا هے تو
قبروں کا ، میتوں کا سهارا لیتا هے
کوریا كی جنگ میں امریکه نے انچن میں فوجیں داخل کرکے کوریا کو دو حصوں میں تقسیم کردیا
شمالی اور جنوبی کوریا
شمالی میں کم ال جون حکمران بنا جو که جنگ کا هیرو بھی تھا
چورانوے میں اس کا بیٹا کم ال سونگ حکمران بنا
اور اس نے ابے کی موت کا تین سال سوگ منایا
تین سال !!!ـ
سوگ میں هی گزار دیے
اور مردے کو شیشے کے شوکیس میں رکھ کر سب کو دیدار کروایا اور
اور ابے کی لاش کو هوا بنا بنا کر حکومت کرتا رھا
اب یه کم ال سونگ بھی مر گیا هے جی
اور اس کا بیٹا بھی وهی طریقه اختیار کرنے جارها هے
کامیابی یا ناکام کا انحصار اس ملک کی فوج پر هے
اور انے والے دنوں میں هی پته چل سکے گا
مذہب بناناے کا بھی یهی فارمولا هے که
کسی لاش کی باتیں کر کے
کسی مرنے والے کے اقوال پر اپنے خیالات کو لوگوں پر لاگو کر دینا
اس وقت موجودمذاہب مين سے ایک مذہب کا بانی جب مر گیا تو اس کے ساتھ ساری حیاتی اواره گردی کرنے والے مراثی کو خیال ایا که اب میں کیا کروں تو؟
اس نے بابے کے نام پر ایک نیا مذہب بنا کر دیا
لاش غائب کرکے رب پر الزام دیا ـ
اسی طرح بهت سے لوگ یهی کرتے هیں که
کسی لاش کا کهتے هیں اور
لوگوں کو بیوقوف بنانے لگتے هیں
اور لاش کے تازه احکامات کو خواب میں سن کر لوگوں تک پہنچاتے هیں
اور کام چلاتے هیں
میں نے اوپر جولکھا ہے وه
غیر اسلامی معاشروں کا لکھا ہے
اسلام ميں اسطرح هوتا هے یا نهیں اس کے متعلق ميں اپنے خیالات کا اظہار نهیں کروں گا!!ـ
کیوں؟؟؟
کیونکه



ں
ب ں ٹ
ک گ غ




ج س ش د غ








ہے!!ـ

جمعرات، 22 دسمبر، 2011

فرشتوں کے کام

یه مسلم لیگ بچے دے دے کر پھاوی سی هو گئی هے
اس لیے اس سے پچے دلوانے والے فرشتوں نے کچھ اور سوچا هے که
اب فرشتوں کے نئے بچے مسلم لیگ کا نام لے کر پیدا نهیں کیے جائیں گے
بلکه
انقلاب کا سابقه یا لاحقه لگا کر پیدا کیے جائیں کے اور اس سابقے اور لاحقے کے اگے پيچھے کے نام بھی بدلنے کی گنجائش رکھی جائیں گی
بڑا رواج تھا جی
لنگی کا ان دنوں جب پاکستان بنوانے کے لیے مسلم لیگ سرگرم کیا پاؤں گرم دل گرم اور پته نهیں کیا گیا کرم تھی که
ایک جگه کسی مخیر نے مسلم لیگیوں میں لنگیاں بانٹیں
سوتی لنگیاں تھیں که ایک هی دهلوائی میں سکڑ گئیں
اسی مخیر نے بڑے فخر سے پوچھا که کیسی هیں میری دی گئی لنگیاں
تو
منچلے نے جواب دیا که
کانگرس کی حمایتی لگتی هیں
که جب ان سے مسلم دھانپتے هیں تو " لیک " ننگی هو جاتی هے
اوراگر "لیک" ڈھانپیں تو" مسلم " ننگا هو جاتا هے
مجھے تو جی اب پاکستان کی سیاست دیکھ کر لگ رها هے که
روحانی خانوادوں کے کاروبار ميں اب سیاست کی دوکاندایان بھی داخل هوچکی هیں
اور انے والی تین چار دھائیوں میں سیاسی جماعتوں کی خانقاهیں بھی هوں گی جن کے سجاده نشین ملک کی حکومت کے لیے کوشش کیا کریں گے
بی بی شهید ، بابا شهید ، شهید جمهوریت ، پیر سیاست ، شهید انقلاب وغیره وغیره قسم کے نام هوں گے ـ
لیکن
اگر الله پرست لوگ آئے اور انهوں نے ساری سیاسی اور روحانی اور تعویذی اور وظیفی خانقاهوں پر بلڈوزر چلا دیے اور لوگوں کے دیکھتيے هیں دیکھتے قبروں والے بابے ان بلڈوزروں کو روک بھی ناں سکے
تو؟؟
چھڈو جی !!ـ
یه اوپر والا خاور کا خواب هے اور توحید کے داعی هزاروں سال سے یه خواب دیکھتے آئے هیں
اس خواب کے لیے قتل بھی هوتے هیں اور دربدر بھی
بے عزت بھی هوتے هیں اور بدنام بھی
لیکن اس خواب کو پورا بھی کرتے هیں اور نام چھوڑ جاتے هیں
لیکن
بڑا هی واهیات جانور هے
انسان بھی که
ایک اسی سبق کو جلد بھول جاتا هے اور
میرے رب ! الله سائیں کے ساتھ لوگوں کو ، چیزوں کو شریک کرنے لگتا هے
اور ملک کے حالات پاکستان جیسے هو جاتےهیں
خاور ان حالات کو بے دین معاشرے کے حالات کہتا ہے
اور بد انیش لوگ اس کو دین(سسٹم) کهتے هیں
آپ بھی اپنے اردگرد دیکھیں که کون کون انقلاب لانے کی باتیں کر رها هے
اور اس کا منشور کیا هے عزم کیا هے؟؟
بس انقلاب!!ـ
مولبی طاهر صاحب بھی قائد انقلاب کہلوائے تھے اور بھائی الطاف بھی انقلاب کی باتیں کرتي هیں اور
اسی لیے عمران خان کے انقلاب ميں کراچی ميں تعاون کو روش اپنائی هے
جی
ایم کیو ایم نے
کیوں که فرشتوں کا حکم ہے
اور فرشتے انقلاب لانا چاهتے هیں
اب اس بات کا مجھے بھی علم نهیں ہے که
فرشتوں کے نزدیک " انقلاب " کے معنی کیا هیں ـ
یاد رهے فرشتوں کے الفاظ معنی عوام سے مختلف هوتے هیں

جمعہ، 16 دسمبر، 2011

ترقی کی کوشش

کاروبار کو کچھ وسعت دینے کا پروگرام ہے
جاپان سے گاڑیوں کے پرانے پرزه جات کو یو اے ای المعروف دبئی کو ایکسپورٹ کرنے کا پروگرام پکا هو چکا هے
اس مہینے کی آٹھائیس تاریخ کو مجھے سکریپ یارڈ کا اجازت نامه ملے ایک سال هو جائے گا
اگر چه که کٹائی کا کام تقریباً ایک مهینه بعد هی شروع هو سکا تھا

یهان جاپان سے پرانے انجن اور گاڑیوں کے دوسرے پرزه جات دبئی کے نام پر شارجه ایکسپورٹ کیے جاتے هیں
اب تک میں جو کام کرتا تخا وه کچھ اس طرح تھا که گاڑی کاٹ کر رکھ دیتے تھے
اور ایکسپورٹ کرنے والے لوگ آ کر اس کے پرزه جات خرید کر لے جاتے تھے
لیکن اس مين ایک قباحت یه نظر آئی که بهت سا مال ڈیڈ سٹاک نما بن جاتا تھا
اور کچھ مال خریدنے کے لیے انے والے ایکسپوٹر مجھ سے سیانے تھے
اور هینڈ کر جاتے تھے
مثلاً ایک خان صاحب هیں جو که صرف چھوٹی چیزوں کی ایکسپورٹ کرتے هیں
هارن ، بریک سلینڈر، ریڈی ایٹر ، جیک پانے ، سی ڈی ٹیپ پلئر وغیره
لیکن جب بھی آئیں کے کهیں گے که انجن خریدنے کے لیے آیا هوں
ون کے زیڈ کا انجن هے ؟
جی وهاں پڑے هیں دو عدد!!ـ
اور ٹو ایل کا انجن؟؟
وه پڑا هے ایک عدد !!ـ
یه تو ٹربو والا هے
مجھے نان ٹربو چاهیے
ایک ٹرک کھڑا هے هائی ایس کا اس ميں هے نکال دوں ؟؟
اس مکالمے کے بعد خان صاحب قیمت وه بتائیں گے که
بندے کی پتلاں هی گرم هو جائیں ـ
اس لیے سودا تو هونے سے رها
اس لیے خان صاحب فرمائیں گےـ
جی اب کے پاس آئے هیں تو اب خالی هاتھ کیا جانا ، کچھ هارن وغیره هی دے دو !!ـ
لیکن هارن زیاده هوتے نهیں هیں که سبھی گاہک مانگتے هیں اس لیے میں کهتا هوں که
یه دو یاتین هی پڑے هیں لے لیں !!ـ
کتنے پیسے دوں ؟؟ خان صاحب سوال کرتے هیں ـ
لے جاؤ خان صاحب ، اب ان کا لیں آپ سے ـ
اور یهی سننا چاهتے هیں خان صاحب ، اور هارن لے کر چلتے بنتے هیں
اور ان کا شکوه که چھوٹے کارباری هو جی خاور صاحب ، اپ کے پاس همارے مطلوبه انجن هوتے هی نهیں هیں
تو جی
اس لیے
اب میں خود ایکسپورٹ کروں گا
کنٹینر کھڑا کرکے لوڈنگ کرنے کی جگه امید هے که دو دن تک تیار هو جائے گی ـ
لوڈ کرنے کی فورک لفٹ بھی دو تین دن میں لے آئیں گے
اس وقت جو فورک لفٹ استعمال کر رها هوں ان ميں ایک تین ٹن کی هے اور اور ایک چار ٹن کی لیکن هر دو میں مسئله هے که کنٹینر کی اندرونی اونچائی سے اونچی هیں اس لیے کنٹینر ميں داخل نهیں هو سکتیں
کنٹینر کے لیے مخصوص فورک لفٹ کا انتظام کیا هے که یه لفٹ ایک مخصوص جیک کے ذریعے چیز کو تو اٹھاتی هے لیکن کنٹینر میں داخل هو سکتی هے ـ
لوڈنگ ، کاغـذی کاروایاں اور پانی میں سفر کے بعد یه کنٹنر دبی پہنچنے کے لیے کتنا وقت لیتا هے
اس سے قطع نظر میں جنوری کے تیسرے یا چوتھے هفتے دبئی کا سفر کروں گا
وهاں شارجه میں اپنے جاننے والوں کا یارڈ ہے جس ميں کنٹینر کھول کر فروخت کیا جائے گا!ـ
اب میں یه چاهتا هوں که دبئی میں کچھ سلام دعا والے بندے مل جائیں
که جس سے معلومات مل سکیں
کچھ کا ایڈریس میں لے کر جاؤں گا اور کچھ لوگوں سے مل کر معلومات لیں کے
اگر اب کے کوئی جانے والے دبئی مین سکریپ کا کام کرتے هیں تو ان کا خاور کو بتائیں ـ
یا اگر کوئی اردو کا بلاک لکھنے والا دبئی شارجه میں رهتا هے تو ان سےملاقات کر کے بڑی هی خوشی هو گی
جیسے هی هوٹل کا کنفرم هوتا هے
ميں بلاگ پر پوسٹ کردوں گا
لیکن اکر اپ آپنا فون نمبر دے دیں تو اسانی رهے گی
بس ڈر هے تو اس بات کا که دبئی ميں بڑے بڑے سیانے لوگ هیں
اور میں سدا کا ساده دل ، کهیں کوئی هینڈ ناں کر جائے
که ابھی تو مالی حالت بھی صحیع نهیں هےـ

اتوار، 11 دسمبر، 2011

مذهب کی افیم

مذہب ایک افیم کی طرح کی چیز هوتی هے
کسی سیانے کا قول هے اوپر والا میرا نهیں !!ـ
عمران حمید نے لکھا ہے كه
آپ کی اکثر تحاریر اس قسم کی کیوں ہوتی ہے کہ کیونکہ میں نے سنا پڑھا نہیں لہذا ایسا نہیں ہوتا یا پھر اگر میں نے ایسا جانور نہیں دیکھا اس سے ملتا جلتا جانور دیکھا ہے تو ایسا جانور ہو ہی نہیں سکتا؟

اگر میرا رویه وقعی ایسا هے تو یه بهت هی احمقانه رویه هے
مجھے اس پر غور كرنا هو گا اور كر بھی رها هوں
كه ایسے هی رویے كے تو میں خلاف هوں لیكن كهیں نادانستگی میں خود بھی اسی رویے کا شکار تو نهیں هو چکا؟؟
پاک مذہب کے نشے کے نشئی لوگ کسی بھی بندے کو اسی بحث میں کھینچ نے کی کوشش کرتے هیں که مذہب پر بات کرو جی
اور اگر بات کر لیں تو ؟
ان کے اسلام کی توهین هو جاتی هے
مہروں کے لڑکے بھینیس چرانے جاتے تھے تو ان کی باتيں بڑی دلچسپ هوتی تھیں که
هماری مج کے سینگ
اور همارے مج کا دوده
اور ایسے ایسے مغالطے که بندے کا هاسا هی نکل جائے
همارے بڑے بزرگ هندو هوا کرتے تھے
توحید کی سمجھ لگنے سے پہلے
شجرے والے مسلمانوں سے معذرت کے ساتھ که مجھے اپنے بڑوں کے هندو هونے سےکوئی شرمندگی نهیں هے
میرے نزدیک شرمندگی والی بات یه هے که
میں توحید کے فلسفےمیں شک کا شکار هو جاؤں
جب همارے بزرگ هندو سے مسمان هوئے تو برادری والوں نے کها
گنگا جل جیسے پوتر پانی تمہیں مسلمانی ميں کهاں ملیں گے
تو مولوی نے بزرگوں کو بتایا که
آب زم زم هے ناں جی
بجرنگ بل جیسا نعره جس سے دشمن کا دل دهل جائے اس کا کیا کرو کے جی؟
مولوی نے بتایا
یاعلی کا نعره ہے ناں جی
بجرنگ بلی کے وزن کا
دهارمک معاملات کو نمپٹانے اور شراپ وغیره سے پچانے کے لیے برہمن کہاں سے لاؤ گے؟؟
اسلام کے ٹھیکداروں نے بتایا که
سید صاحب آل رسول هیں ناں جی
هندو نے کها که هماری رکھشا کرنے والے لاکھوں دیوی دیوتا هے
تو مسلمانوں کو بتایا گیا که
همارے ولی هوتے هیں غوث اور ابدال هوتے هیں
قلندر هوتے هیں اور مونث قلندر بھی هوتی هے
لو جی اب اپنی اپنی مج کے سینگ بڑے کرو
یا مج کی کرامات کا تذکره
مجھے اسلام میں بتایا گيا
که سب مسلمان برابر هوتے هیں
اور پھر سید او آل رسول کے برابر ناں هوںے کا درس دیا گیا
مجھے بتایا گیا که
اسلام ایک مکمل ترین ضابطه حیات ہے
اور پھر وه درس دیے گئے که٠٠٠٠٠٠٠٠ـ
چلو جی اس طرح کرلیتے هیں
اسلام ایک بهترین معاشره چاهتا هے
تو؟
اب زم زم کے غیر معمولی پانی کے ثابت هوجانے سے معاشرے میں کیا تبدیلی آئے گی؟
سارے طغرے تعویذ اور وظیفے مل کیا کرلیتے هیں ؟
یا کیا کیا هے جی ان سب چیزوں کی بهتات نے پاکستان ميں ؟؟
مذهب کی افیم کھاؤ اور نعره لگاؤ
یه تہذیبی نرگسیت نهیں هے
منافقت هے
جی هان منافقت
اور وه بھی انتہائی اعلی سطح کی منافقت
توحید کا فلسفه
اور شرک کا معاشره
برابری کا درس اور نسلی تفاخر کا معاشره
معاشرتی تعمیر کا دعوه
اور معاشرتی تقابل تک ناں کر سکنے والی سوچ اور تعلیم
اور جب آئینه دیکھاؤ تو
سب یه رویه اختیار کرتے هیں که
یه شرک کرنے والے
یه نسل تفاخر والے
یه معاشرے میں انتشار پھلانے والے
سب دوسرے مسالک ے هی
میرا مسلک
تو جی
وه هے ، یه هے وغیره وغیره هے

ایپل کے بانی سٹیو جابز کا باپ بھی الجزائر کا مسلمان تھا
اس لیے کمپوٹر کی ساری ٹکنالوجی بھی مسلمانوں کے نام کر لو جی

جمعرات، 8 دسمبر، 2011

دین سلام

ایک تو جی میں اج کل "دین سلام " والوں سے بڑا تپا هوا هوں
هر بات میں دین سلام
اور کم علمی که انتها که دین کے لغوی معنی تک نهیں معلوم
اور ناں هی اسلام کے لغوی معنے معلوم هیں
تو جی
دین سلام دین سلام کرکرکے
ایتوں کے طغرے لگا لگا کے
آب زم زم کی جھوٹی تحقیات کے طغرے
اور اصلی بات که
سلام کے لغوی معنی ہیں طاعت و فرمانبرداری کے لیے جھکنا
یا
عیوب و نقائص سے پاک اور بری ہونا یاپھر کسی عیب یا آفت سے نجات پانا، اور سلام کے ایک معنی صلح کے بھی ہیں
اور یه ساری باتیں پاک دین (نظام پاکستان ) میں تو پائی نهیں جاتیں
اور ناں هی کسی اور ملک کے دین (نظام) میں پائی جاتی هیں
جو مسلم کهلواتا هے
هاں یه صفات
دین جاپان ، دین امریکه اور دین یورپ میں بدرجه اتم پائی جاتی هیں
اؤ ادیان (سسٹمز) پر بات کریں که کس کے دین (سسٹم ) میں کیا خامیاں هیں ؟؟
اور کیا خوبیاں هیں ؟؟
شائد که تیرے دل میں اتر جائے میری بات!!!ـ

اتوار، 4 دسمبر، 2011

لڑایاں اور مانگے

حمید پور کے چوھدیوں کا لڑکا گھبرایا هوا
دیڑے پر پہنچا
ابا جی مجھ سے بنده مر کيا هے
گولی لگنے سے !!!ـ
ابا جی بڑے سیانے تھے
اوئے فوراً بندوق لے کر !!ـ
یه لو جی مصطفے نے هاتھ میں پکڑی بندوق جلدی سے ابا جی کو دینے کی کوشش کی ـ
اوئے جھلیا !ـ اے نهیں ، اس سے تو بنده مار کر آئے هو اندر سے دوسری لے کر آؤ!ـ
هونهار پتر جلدی سے دوسری بندوق لے کر آتا ہے
ابا جی کیا کرتے هیں که
پاس هی کام کرتے هوئے چوہڑے کی طرف بندوق سیدھی کرتے هیں اور اس کو گولی ماردیتے هیں
چوہڑے کے ٹھنڈا هونے سے پہلے هی بیٹے کو کهتے هیں
اور پتر مصطفے جلدی سے تھانے پہنچ اور
پرچه کٹوا کر آ که دشمنوں کی گولی سے همارا چوھڑا مارا گیا هے اور هماری جوابی فائرنگ سے ان کا کوئی بنده بھی زخمی هو گیا ہے
ابا جی کی سوچ تھی که اس طرح دونوں طرف سے ایک ایک قتل کے پرچے سے کیس برابر هو جائے گا اور
بات صلح اور کچھ لینے دینے سے ٹل جائے گی
اور پھر هوا بھی ایسے هی !!!ـ
مانگی کی رسم پنجاب میں پرانوں سے پائی جاتی ہے
ایک گھر کی دیوار بنانی هے
گھر والے لوگوں کو مانگی کا کهیں کے
سب گاؤں والے یا کچھ آ جائیں گے
سب مل کر ایک دن کا کام کریں گے دوپهر کو میٹھے چاول کھائیں گے
کچھ بھاگ جائیں کے کچھ کام کو ختم کرنے تک رهیں گے
ان لوگوں کو مانگے کہا جاتا تھا پنجابی میں ـ
لیکن اب لڑائیوں میں فائرنگ کرنے کے لیے جو لوگ بلائے جاتے هیں
ان کو بھی مانگے کهتے هیں
همارے گاؤں کا بالا گجر ویگن چلاتے چلاتے
بدمعاش هو گیا
پھر مانگا جانے لگا
ایک دن چھچھر والی ميں ایک جگه کے قبضے کے لیے گئے
بالے نے للکارا مارا
اوئے بالا گجر آ گیا جے
بھاگ جاؤ اوئے!!!ـ
اندر کوئی اس سے بھی بڑا مانگا بیٹھا تھا
اس نے ایک هی گولی چلائی جو بالے کو سر میں لگی
بالا مر گیا
دوسرے مانگے بھاگ گئے
بالے کی بیٹی اور بیوی لاوارث هو گئیں
اقتصادیات کے اصول طلب اور رسد کے مطابق
جس مال کی طلب تھی پاک معاشرے میں وه پھر پچیس پچیس روپے میں رسد دینے لگیں ـ
اب جب جی پاک فوج امریکه کے مانگے بن چکے هیں
اور اس کام میں سالهاسال سے هیں
تو جی اگلی پارٹی کی گولیوں سے بھی مریں گے
اور حمید پور کے چوھدریوں کی طرح لاشوں کی تعداد پوری کرنے کے لیے
چوھدریوں کی گولیوں سے بھی مریں گے ناں جی؟؟
اس لیے ميں ابھی پاک فوج کے جوانوں کی موت کے افسوس تک نهیں پہنچ سکا که
که
ابھی پچھلےگیاره سال سے مارے جانے والے عام پاکستانیوں کی میتوں کی تعداد هی اتنی زیاده هے که
ان کا افسوس ختم هو لے
پھر
میں مانگے کے سپاهیوں کا افسوس بھی کرلوں گا!!ـ
غائب کر دیے گئے لوگ !ـ
مسخ لاشیں
بم دھماکوں میں مرنے والے
بھی اتنے هی پاکستانی تھے جتنا که کوئی بھی فوجی هو سکتا هے
تنخواهیں لے کر جنگ کی تربیت لے کر اسلحے کے ساتھ مرنے والے فوجیوں سے زیاده مجھے
زیاده افسوس ہے ان پاکستانیوں کا
جو غائیب کر دیے گئے !!ـ
جو مسخ لاشیں بنا دیے گئے!!ـ
بقول ظہیر کیانی کے خاور تھرڈ پرسن
جیسے عام پاکستانیوں کو کس نے غائب کرکے مسخ شده لاشوں میں تبدیل کیا؟؟؟
کوئی نهیں بتائے گا
وقت کا صدر پاکستان بھی اپنی بیوی کے قاتلوں کی طرف انگلی اٹھا کر دیکھے تو!!!ـ

جمعرات، 1 دسمبر، 2011

ابابیل کا گھونسلا

پاکستان گیا تھا
میں !ـ
بائیس نومبر سے انتیس تک صرف ایک هفتے کے لیے
که مشین ریڈ ایبل پاسپورٹ بنوانا تھا
رقم کے لگنے سے دفتری کاموں کی سپیڈ کا وه حال دیکھا که جاپان اور دوسرے ترقی یافته ممالک بھی ایسی سپیڈ دیکھانے سے قاصر نظر اتے هیں
پاسپورٹ آفس میں ارجنٹ پاسپورٹ باره دن ميں ملنے کا لکھا تھا
میں نے منگل کو جمع کروایا
اور ایجنٹ نے جمعو کو دینے کا وعده کیا
میں نے ایجنٹ
وعده پورا کرنے پر انعام کا لالج دیا
تو؟
جعمرات کو دن کے ایک بجے پاسپورٹ لے کر ایجنٹ
گاؤں پهنچ چکا تھا
اس لیے اس دفعه کا خاور کا پاکستان کا دوره
جزوی طور پر کامیاب رها
ایک دوست هیں
حاجی صاحب
ان کو پتھروں کا شوق هے ، جاپان سے جاتے هوئے ان کے لیے کچھ ناں کچھ لے جاتا هوں
اس دفعه ٹائیگر آئی نام کے نگ تھے
ننھا بھائی کے گودام پر حاجی صاحب نے ایک بات بتائی
که جی پاکستان میں بھی اکر بنده بهت سی کوشش کرے تو امول قسم کے پتھر اکٹھے کیے جاسکتے هیں
اس بهت ساری محنت کی تفصیل انہوں نے یه بتائی که
ابابیل کا گھونسلا تلاش کرتا پڑتا ہے
بقول ان کے ابابیل اپنا گھونسلا پلوں کے نیچے یا پہاڑوں ميں ایسی چٹانوں کی چھاؤں میں بناتی هے که جهاں انسان پہنچ ناں سکے
جیسا که سینکڑوں فٹ اونچی چٹان که جس پر انسان چڑھ هی ناں سکے
اور ابابیل اپنا گھونسلا اپنے منه کی تھوک سے بناتی هے
اب جی جب اس گھونسلے میں ابابیل کے بچے چھوٹے چھوٹے هوں تو ان کو زرد رنگ لگا دیا جائے تو
ابابیل سمجھتی هے که
بجے بیمار هو گئے هیں
اور ابابیل پتھروں سے اپنے بچے کا علاج کرتی هے که
مختلف پتھر اس کے پاس لا کر رکھتی
تاکه ان پتھروں کے اثر سے بیمار بجے شفا پاجائیں
اب جب جی یه بهت سے پتھر اکٹھے کر لے
تو اس کے گھونسلے سے یه اٹھا لیے جائیں
وغیره وغیره
اور پھر وغیره
میں نے حاجی صاحب کی بات سنی لیکن ان کو کوئی جواب نهیں دیا که
بات ایسے هو جائے گی جیسے پانی میں مدھانی
ناں لسی ناں مکھن
بس ریڑکا لگائے جاؤ
که خاور کا علم کهتا ہے که کم یاب چیز کو انسان بیماریوں کا علاج جانتا رها هے
اور جس علاقے میں عام هو ، اس علاقے کے لوگوں کو اس کاعلم بھی نهیں هوتا
ابابیل
ایک هجرت کرنے والا پرنده هے
جو که پاکستان ميں سردیوں میں نظر اتا ہے
ٹھٹرتا هوا
بجلی کی تاروں پر غول کے غول نظر اتے هیں
میں اسے سردیوں کا پرنده سمجھتا رها هوں
اس پرندے کی خوش قسمتی که اس کو مذہبی تحظ حاصل هے
ورنه پاکستان میں پرندوں کو کھا هی جانے کا وه کلچر پروان چڑھا ہے
الله کی پناه
فاخته جیسا بھولا پرنده بھی انسان کو دیکھ کر دور سے هی اڑ جاتا هے
حاجی صاحب نے دو پرندوں کو اکٹھا کر لیا هے
ایک ابابیل
اور دوسری ایک چڑیا هوتی هے جو چین اور ویت نام کے پہاڑوں میں پائی جاتی هے
یه چڑیا اپنے منه کے تھوک سے گھونسلا بناتی ہے اور چٹانوں ميں انسانی پہنچ سے دور بناتی ہے
اس چڑیا کا یه گھونسلا جاپان اور چین ميں کھیا جاتا هے
اور
اچھی خاصی مہنگی ڈش کے طور پر جانا جاتا هے
کیونکه اس کےگھونسلے کا حصول خاصا جان جوکھوں کا کام ہے
لیکن
یه کام کرنے والے جیالے بھی هیں
جو بانسوں کے تکنیکی استعمال سے اس کو اتار هی لیتے هیں
لیکن
اس چڑیا کے متعلق پتھروں کو اکٹھا کرنے یا علاج کے متعلق میں نے کچھ نهیں سنا هوا
اور ابابیل
جو که پاکستان مين سردیوں کا پرنده هے
جاپان میں گرمیوں کا پرنده ہے
اگست اور ستمبر میں غول کے غول نظر اتے هیں اور فیکٹریوں گوداموں ، پرانے گھروں میں گھونسلے بنا کر انڈے بچے پیدا کرتے هیں
جاپان دوستوں میں ابابیل کے سردیوں کا پرنده هونے کا کہیں تو
ان کا جواب هوتا هے که نهیں ابابیل
تو گرمیوں کا پرنده ہے
جو انڈے بچے پیدا کرنے کے لیے جاپان اتا ہے

بس یه جی ایک مثال ہے
پاکستان کے نالج کی
که مغالطے هی مغالطے
اور مبالغے هی مبالغے
اور ان مغالطوں اور مبالغوں کو هی حقیقت جاننے کا یقین !!!ـ
الله کی پناه

ہفتہ، 19 نومبر، 2011

ایوارڈ لینا ہے

یارو اج کل ایک ایوارڈ کا بڑا ذکر چل رها هے
اردو کی بلاگنگ کی دنیا میں
اچھے خاصے معقول اور سمجھ دار لوگ بھی اس دوڑ میں شامل هیں
کچھ تو هو گا هی اس ميں
لیکن میں نے یهاں اپنا بلاگ رجسٹر نهیں کروایا
کیوں؟؟
اس لیے که یقین جانیں ميں اس سائیٹ کو نهیں جانتا که
یه لوگ هیں کون
اور کیا بیچتے هیں
اس لیے
خود ایوارڈ دینے والے کی کوالٹی کیا ہے
بڑے پرانے ٹرانسپوٹر هیں جی کمہار لوگ
خچروں اور گدھوں پر صدیوں سے سامان کی ٹرانسپورٹ کرتے هیں
لیکن کیا اپ کسی کمہار سے اج کی ٹرانسپورٹ "ٹرک "پر سیر حاصل گفتگو کرسکتے هیں ؟؟
هاں!!!ـ
اگر کمہار ٹرکوں کا مکینک بن گیا هو تو
ورنه نهیں
تو جی ایک سائیٹ هے هی انگریزی میں
اور اپ اس سے اردو کے لیے دادا مانگ رهے هیں ؟
هے ناں پاک سوچ!!ـ
هر دیسی چیز کی دادا انگریزوں سے

هاں اکر اردو کے سب رنگ یا سیاره کی لسٹ ميں شامل کوئی لکھاری ، متذکره سائیٹ کے متظمین میں شامل هے تو دوسری بات هے
لیکن میں ایسے کسی کو نهیں جانتا

قدوس صاحب نے ورڈپریس ڈاٹ پی کے شروع کیا
اور ختم هو گیا
علی عمران نے اردو ٹیک شروع کیا ور ختم هو گیا
مجھے علم هے که معاملات ميں مشکلات بن جاتی هیں
زندگی میں کئی کام ایسے هوئے هیں که باوجود کوشش کے ناکام هو گئے
سب سے بڑی مشکل
فنڈ کی بن جاتی هے
اور دوسری بڑی مشکل هوتی هے
بندے کی انا !!ـ
که کسی سے مدد نهیں مانگنی هے
میں بھی بڑا خود دار هوں
کسی سے اپنے لیے مانگتے هوئے مر هی جاتا هوں
لیکن کسی کے لیے کسی سے مدد مانگ هی لیا کرتا هوں که
معاشرے کی تعمیر کا سلسله چلے
اب جو کام قدوس صاحب یا علی عمران نے شروع کیا تھا
وه شروع تو انفرادی طور پر کیا هے لیکن
کام ایک اجتماعی تھا
هر دو صاحبان کو میں هلکے پھلے اندازميں کها بھی تھا که
اگر کنگ سے کچھ هو سکے تو؟؟
لیکن جی پته نئیں که مجبوریوں کا کیا تسلسل تھا
ان صاحبان کے ساتھ
که یه ایک بہت بڑی حقیقت هے کائینات کی که
جس کے ساتھ بیت رهی هوتی هے
وهی اس کی کیفیت کو جاتنا هے
اب بھی اگر
اپ دونوں ميں سے کوئی ایک
یا دونوں مل کر
یا پھر وهی دومیں مجھے دے دیں
میں کر لیتا هوں که
اپ کے لیے ایک ان لیمٹ سپیس والا هوسٹ لے لیتا هوں
جس پر صرف ایک هی دومین چلے
اور اردو کے بلاگ بنانے والوں کی حوصله افزائی کی جائے اور انگریزی والوں کو بھی
روکا ناں جائے
میں کسی ایک کا نام لکھ کر دوسروں کی حوصله شکنی نهیں کرنا چاهتا
لیکن میں جانتا هوں که جوان بلاگروں ميں بهت سے اس بات کی کوالٹی رکھتے هیں که ان کے ایک گروپ کو سائیٹ کی ذمه داریان دے دی جائیں
ادائیگیوں والے معاملے کو میں سنبھال لیتا هوں
اور تکنیکی معاملات کو اردو کے باصلاحیت بلاگروں پر چھوڑ دیا جائے
جیسا که اپ لوگوں کو علم هی هے که
اگر ورڈ پریس پر سائیٹ بنائی جائے تو ایک وقت ميں کئی ایڈمن بنائے جاسکتے هیں
ایڈمن کا ایک گروپ هو جو معاملات کو باہمی مشورے سے چلائے
میرے نزدیک بلاگر وه هیں جو
انفرادی طور پر لکھتے هیں ،ناں که کسی ادارے کی تنخواه پر
بی بی سی والے یا جنگ والے اپنی کسی سائیٹ کا نام بلاگ رکھ بھی لیں تو کیا هے
که پیسے کے زور پر رکھ سکتے هیں
لیکن کیا وهاں لکھے هوئے پر عام لوگ ایسے هی تبصرے کر سکتے هیں جیسا که اردو کے سب رنگ کی لسٹ والے بلاگ پر کیے جاسکتے هیں
نهیں ناں ؟؟
تو یه بلاگنگ تو ناں هوئی ناں جی
یه تو کالم نگاری کے کوئے کو چونا لگا کر سفید کی جانے کی کوشش هے ناں جی
اس لیے
اپ لوگ جو
اصلی والے اردو گے بلاگر هیں
اگے آئیں
اور جب اپ لوگ کسی کو ایوارڈ دیں گے تو
یه هو گا اصل والا ایوارڈ
اردو کے سبھی بلاگرون کو میرا ای میل ایڈریس معلوم هے
اب بھی اکر خود داری اڑے ائے تو مجھے میل کر لیں
ميں اپ کی شرم رکھتے هوئے
مدد مانگنے والی ذمه داریان اپنے اپ پر لے لوں گا

منگل، 15 نومبر، 2011

ناکام دوره

جاپان کے غیر معروف کاروباری ،معروف لکھاری اور نقاد خاور کھوکھر پاکستان کے ناکام دورے سے واپس جاپان پهنچ گئے هیں
پاکستان کے متذکره دورے کے متعلق خاور کو پهلے هی علم تھا که یه ایک ناکام دوره هے
اس دورے ميں پاکستان ميں خاور نے بهت سی بے مقصد ملاقاتیں بھی کی اور بہت سی بے مقصد کانفرنسں بھی
خاور کی شمولیت والی یه کانفرینسیں عموماً دھریک کے درخت کی چھاؤں میں هوئیں ، جهاں شرکاء کی تعداد عموماً پانچ سے دس هوا کرتی تھی
ان شرکاء میں دوکان پر انے والے گاهکوں کی تعداد کو بھی شامل کیا گیا هے
کیونکه خاور بہرحال اپنے قصبے اور اردگرد کے دیهات میں خاصا مقبول بنده رها هے
ان کانفرنسوں میں شمولیت کے لیے جو رفقاء سب سے دور سے تشریف لاتے تھے
ان میں شامل هیں
جناب نعمت الله سمور
اور
یونس گورایه
جو که حافظ آباد کے نواحی علاقے سے اتے تھے
گاؤں سے علامه افتخار احمد خالد، آفتاب چیمه (ٹیلی فونوالے)اپنا چاچا اقبال ، اور برادری کے لطیف ، عنصر ، ننھا ، سیٹھ عابد ، اور بہت سے سیٹھ
کیونکه میری برادری کو لوگ علاقے میں سیٹھ کے سابقے کے ساتھ بلاتے هیں
پاکستان کے اس دورے کے مقاصد
خور خاور کو بھی معلوم نهیں تھی
بس
ایک موهوم سی سوچ اپنے غریبی کے دنوں کے دوستوں کو یه جتلانے کی تھی که دیکھو جی خاور اب کچھ امیر هو گیا هے
لیکن
غریبی کے دوستوں کو مل کر احساس هوا که وه بھی پاکستام ميں رہتے هوئے کچھ ناں کچھ کر رهے هیں اور اپنی زمین پر هونے کی وجه سے
خاور سے بھاری هیں
اس لیے ناکام دوره
اور بھی ناکام ثابت هوا
اور خاور کو شدت سے احساس هوا که پاکستان نهیں چھوڑنا چاهیے تھا
کیونکه خاور جاپان سے كمائی كركے ایک دن واپس پاكستان جانے کا تارگٹ لے کر ایا تھا
خاور کا یه دوره اس تارگٹ کے پورا هونے سے پہلے کیا گیا هے
جس لیے خاور کو واپس جاپان انا هی پڑا
اس لیے
خاور کا یه دوره ناکام دوره
ثابت هوتا هے
وجه تحریر بالا
کمپیوٹر میں جب وائرس آجاتا ہے تو کمپیوٹر کو اس کا علم نهیں هوتا هے
کمپیوٹر اس وائرس کو بھی اپنی هی کوالٹی سمجھ کر
چلائے جاتا هے
اسی طرح
جب بندے میں وائرس آتا هے
میں اس وائرس کو ملک صاحبان کا وائرس کهتا هوں
تو بنده بھی اس کو اپنی کوالٹی سمجھتا هے
اس وائرس کی پہچان هے که جس ميں یه وائرس آ جائے وه بندے کو اوپر سے نیچے دیکھتا ہے
جس طرح كمپیوپر كے وائرس كا
صرف اس كوچلانے كو هی علم هوتا هے
اسی طرح
ملک صاحب وائرس کا بھی اردگرد کے لوگوں کو هی علم هوتا هے که
"ان" صاحب میں بھی وائرس آچکا هے
لیکن اکر وائرس ناں ایا هوا هو تو؟
زرا سا سوچنے سے
یه نتیجه نکالا جا سکتا هے که
خاور سے جتنے سال پہلے جاپان آئے تھے
حالات کی بہتری کی وجه سے صرف اتنا هی کاروبار
خاور کی نسبت بڑا ہے
ورنه
خاور اپ سے اچھے مکان ميں رهتا هے
اپ سے اچھے اوزار اور مشینیں استعمال کرتا هے
کباڑیے کے کام کی وجه سے سوٹ نهیں پہنتا
ورنه گھر پر جو سوٹ پڑے هیں
کرسٹنڈیور ، ورسچ ، ارمانی ، پئرکارڈن، هیوگوبوس، وغیره
هوسکتا هے که اپ کے سارے کپڑے اس ایک سوٹ کی قیمت کے بھی ناں هوں
اور سب سے بڑی بات که خاور
سقراط کی طرح جانتا هے که خاور ایک کم علم بنده هے
اور اپ کو اس بات کا بھی علم نهیں هے که اپ ایک بے علم بندے هیں،
اسی لیے
وائرس زده لوگوں کے پاکستان کے دورے، کامیاب دورے هوتے هیں
اور اپنے مقصد کو بھول نان سکنے والے
خاور کا پاکستان کا دوره ناکام ثابت هوا

جمعہ، 11 نومبر، 2011

دبئی کا دوره


جاپان میں مقیم پاکستانی جو که بقول خاور میڈ ان جاپان امیر هیں
ان کو دورے بہت پڑتے هیں
مرگی کا دوره
پاگل پن کا دوره
وغیره نهیں
بلکه ایک خاص قسم کا دوره پڑتا هے
جس کا ذکر جاپان کی خبری سائیٹوں پر هوا کرتا هے
اور یه سائیٹس هیں که ان ميں سے کچھ کے مدیراں تو اتنے جھوٹے هیں که جوتوں سمیت انکھوں میں اترنے کا محاوره ان پر فٹ هوتا هے
ایک دورے کی خبر کچھ اس طرح سے هوتی هے
رانا پداں والا پاکستان گے کامیاب دورے سے واپس جاپان آگیا ہے
اب کوئی ان سے پوچھے که
جو بنده کمائی کرنے کے لیے جاپان ایا تھا
که ایک دن پاکستان واپس جائے گا
اگر وه پاکستان جاکر پھر جاپان هی واپس اتا هے تو یه دوره کامیاب کیسے هوا؟؟
چھڈو جی ایسی گہری باتاں جاپان کے میڈ پاکستانیوں کی سمجھ سے بالاتر هیں
که
یهان روزنامه سائتاما کی خبروں کو سمجھ سکنے والے بندے
ایک فیصد بھی هوں که ناں هوں
حالانکه جاپان کے متعلق خبروں کی اردو میں یه سائیٹ هو سکتا هے که دنیا کی سب سے بڑی سائیٹ هو
اصلی میں میں بات یه کرنا چاهتا تھا که
میں کچھ ایکسپورٹ کا کام کرنا چاهتا هوں
دبئی کے لیے آئیڈیا دیا هے جی
بھائی رمضان نے
اس وقت میرے یارڈ میں کوئی دو کنٹیروں کا مال پڑا هوا هے
جو که میں فوراً بھی دبئی روانه کرسکتا هوں
لیکن
کیش کی طرف سے یه حالت هے که
کل جو مال اوکشن سے خریدا هے اس کی ادائیگی کروں تو؟؟
بٹوے ميں پڑے نوے هزار کے علاوه کچھ نهیں بچتا
اور ان حالات میں اگر مال دبئی بھیجوں
اور
کوئی هینڈ هو جائے تو؟؟
اس لیے میں نے سوچا که دبئی کا ایک پھیرا لگا لوں
که
پاکستان سے ننھے بھائی کا فون آگیا که
اپ کا پاسپورٹ مشین دیڈ ایبل نهیں هے اور دبئی والے اپ کو ویزا نهیں دیں گے
اس لیے اپ پاکستان سے هوتے هوئے( مشین ریڈ ایبل پاسپورٹ بنوا کر) دبئی چلیں جائیں
میں نے یهاں جاپان ميں میڈیا والے پاکستانوں کو فون کیا هے اور پیغام ریکارڈ کروایا هے که
خاور کو دبئی کا دوره پڑنے والا هے
لیکن اس دوره پڑنے میں پرانا پاسپورٹ وهی کردار ادا کر رها هے جو
مرگی کے دورے میں پرانا جوتا ادا کرتا هے
یعنی که پرانا پاسپورٹ دبئی کا دوره پڑنے کو روکتا ہے
اور پرانا جوتا
مرگی کے دورے کو
یهاں پاکستان کی ایمبیسی ميں ایک صاحب هیں
مروان صاحب
بڑی دلچسپ شخصیت هیں
میں نے ایک دفعه ان کو پوچھا که کیا اپ کو معلوم ہے که بلاگر کیا هوتے هیں؟
تو
ان کا جواب تھا
هاں ناں !!ـ وهی لوگ جو فارغ بیٹھے انٹر نیٹ پر کچھ لکھتے رهتے هیں
میں نے جی ان مروان صاحب سے مشوره کیا هے که
کیا کروں تو
ان کا مشوره هے پاکستان جانا هی پڑے گا
لیکن
ناصر کا کهنا هے که
اکر ایمبیسی والے ایک خاص قسم کا کاغذ لکھ دیں تو دبئی والے ویزا دے دیتے هیں
لو جی بند کرے تے کی کرے؟
پیسے کول کوئی نئیں جے
دوره ایک بھی مشکل تھا یهاں دو دو پڑنے کے امکان بنے هوئے هیں

مجھے تو لگتا هے که مجھے جاپان سے باهر کا دوره پڑنے سے پہلے کوئی اور دوره ناں پڑجائے

جمعرات، 10 نومبر، 2011

وائرس کی موت

سیانے کہتے هیں که قطب شمالی کے برف زاروں میں بسنے والے لوگوں کا سب سے بڑا سکھ یه ہے که وه بهت سی بیماریوں سے بچے هوئے هیں
اس لیے نهیں که
عام دنیا سے دوری کی وجه هے
بلکه اس لیے که جب سردی مائنس دس سے نیچے جاتی ہے توبهت سے وائیرس کی بقا ممکن نهیں رهتی
سردی کی ایک بیماری فلو جس سے که سرد ممالک ميں پناه گزین پاکستانی بھی واقف هیں
جس سے ناک بند کھانسی اور بخار هو جاتا هے
اس کے وائرس بھی قطب شمالی کی سردی میں پنپ نهیں سکتےـ
سالوں پہلے جب میں جوان تھا اور دنیا کی سیر کے نام پر اواره گردی کیا کرتا تھا
یهاں جاپان میں تھا که فلو هو گيا
یهاں سے کوریا گیا
ایک ماه کے قیام میں مسلسل ناک بند بڑی کوفت سی رهی
اگلی منزل بنکاک تھی میں سے سوچا که گرمی سے ناک کا حال کچھ ٹھیک هو جائے گا
لیکن ناک مسلسل بند
بنکاک سے پاکستان گیا
پاکستان کی پاک مٹی جو که
وه وه خاک اڑائی هے لوگوں نے که قوم کے سروں میں ڈالی هوئی هے اڑا اڑا کر
اس ماحول ميں یه ناک کا بند هونا جس کو زکام کهتے هیں غالباً
بھلا کیسے ٹھیک هوتا؟؟
کچھ میں دوائیاں لینے کا سست هی واقع هوا هوں ، کوشش هوتی هے که بس ایسے هی ٹھیک هو جائےچھوٹی موٹی بیماری

کچھ دن ، ایک یا دو هفتے پاکستان میں گزار کر واپس بنکاک کے راستے جب کوریا اترا تو
جهاز میں بتایا کیا که سیول کا درجه حرارت مائنس گیاره هے
اس وقت تک میں فلو کو ٹھنڈ کی بیماری سمجھا کرتا تھا
اس لیے سنجیدگی سے باهر جاتے هیں دوائی لینے کا فیصله کیا
ایمگریشن ، کسٹم کو پار کرکے
ائر پورٹ کا بیرونی دروازه آٹو میٹک میں کھل کر راسته دیتا هے
باهر قدم رکھتے هیں سردی کے احساس سے زیاده
یه هوا که میرا سانس کھینچنے کا دل چاها
اور سانس کھلتی چلی گئی
ایک جادو تھا که کیا بات تھی
میں اج تک اس احساس کو نهیں بھول سکا که
کتنے ہفتوں سے بند ناک چند سیکنڈ میں ایسی کھلی که فرحت کا ایک احساس سارے جسم مں پھیل گیا

اتوار، 6 نومبر، 2011

بڑی عید

میرے علم کی کمی بھی هو سکتی هے که
همارے یهاں چھوٹی عید کو عید کی مبارک کے لیے اور بڑی کو قربانی کے لیے هی سجھا جاتا تھا
بڑی عید پر مبارک کے پیغامات ، میں نے پچھلے کچھ سالوں میں هی دیکھے هیں
چھوٹی عید پر عید کارڈوں کا ایک سیلاب هوتا تھا
اور بڑی پر ایک بھی کارڈ نهیں هوا کرتا تھا
ان دنوں
جب همارے قصبے کا ڈاکخانه ماسٹر عزیز دین صاحب کے پاس هوتا تھا اور اس کے بعد میرے والد کے پاس
ميں سن ستر اور اسی کے شروع کے سالوں کی بات کر رها هوں
هاں پھر سرمے والی سرکار جناب جرنل ضیاع صاحپ کا زمانه اتا ہے
جس ميں اسلام تو ایا نهیں
اسلامی جذبات پر بڑا عروج آیا هے
باقی جی الله پروردگار آپ سب کی قربانی قبول فرمائیں
اور حقوق العباد میں قربانی کی توفیق عطا فرمائیں
آمین

ہفتہ، 29 اکتوبر، 2011

بنکاک ڈوب رها هے


تھائی لینڈ کا دارلحکومت بنکاک ، پانی میں ڈوبا هوا هے
دو هزار دس کی مردم شماری کے مطابق
اس شهر کی ابادی کوئی ساڑهے بیاسی لاکھ هے
اپریل ستره سو بیاسی میں تھائی لینڈ کا کیپیٹل بننے والے اس شهر میں هر مہینے
کوئی باون هزار نئی کاروں کا اضافه هوتا هے
سات سو چار سڑکوں اور کوئی چار هزار تین سو پانچ گلیوں پر مشتمل یه شهر هر روز
کوئی آٹھ هزار نوسو ٹن کوڑا کرکٹ پیدا کرتا هے
بنکاک کے پرانے ائر پورٹ تک میں پانی کھڑا هے
جهاز اڑ نهیں سکتے


پانی هے که پشتو محاورے کے گل محمد کی طرح بس کھڑا هی هو چکا هے

گرم مرطوب موسم والے اس شهر میں جانے کو دل چاہتا هے
لیکن چار یا پانج دن کے بعد نکل بھاگنے کو مچلنے لگتا هے
میں نے اس شهر میں ٹریفک کی کھنٹوں جام بھی دیکھی هے اور
ٹرین کے پل بنتے اور ان پر ٹرین کے چالو هونے کو بھی دیکھا هے
پچھله دفعه میں بنکاک گیا تھا
دو هزار ایک کے اگست میں
پاکستان سے میرا چھوٹا بھائی غلام مرتضی (ننھا) اور ایک کزن عمر فاروق بھی آئے تھے
چار که پانچ دن سیر وغیره کی تھی
اس کے بعد بنکاک جانے کا موقع هی نهیں ملا
جاپان کی کئی بڑی بڑی کمپنیان اس شهر میں اپنی فیکٹریاں رکھتی هیں
که مزدوری سستی هے
اور
ماحول محفوظ



سونی ، توشیبا، اور کئی دوسری کمپنیوں کی فیکٹریاں پانی میں ڈوب چکی هیں
ایک میٹر سے زیاد پانی گوداموں اور فیکٹریوں میں داخل هو چاک ہے
یهاں جاپان مين ٹی وی پر دیکھا رهے تھے که
جن سڑکوں پر گاڑی چلا کر فیکھری جاتے تھے
اس پر کشتی میں فیکٹری تک گئے هیں
اور سڑک پر پانی ميں ڈوبے هوئے ٹرک جن کے صرف چھت نظر آرهے هیں
جا بجا پڑے هیں
فکٹری کا جو ملازم تھا اس کے منه سے بار بار
مشینوں کے بارے فکر مندی کے الفاظ نکل رهے تھے
مشینیں جو که مال کی ماں هوتی هیں
ایجادات کو جنم دیتی هیں
ان کی فکر کرنے والے بندے کے احساسات کوئی
تکنیکی ذہن رکھنے والا بنده هی جان سکتا هے
یا میرے جیسا
مکینک ٹائیپ بنده که
مجھے اوزاروں سے بڑے محبت هے
توشیبا اور سونی کے علاوه بھی کئی جاپانی کمپنیوں نے
جن چیزوں کو اگلے مهینوں میں مارکیٹ میں لانے کا وعده کیا تھا
ان وعدوں کو کینسل کر رهی هیں
بنکاک میں پانی کھڑا هے
لاشیں
کوڑا کرکٹ
ٹوائیلٹوں کا پانی
اور کئی عوامل مل کر بیماریوں کی جو فضا بنائیں گے
ان کے متعلق ایک فکر مندی کی فضا چھائی هوئی هے
آزاد لوگوں کی سرزمین کو ویت نام کی جنگ کے دوران جو کلچر امریکی سپاهیوں نے دیا تھا
صرف اسی سے واقف
بہت سے پاکستانی تھائی لینڈ کا ایک علیحده هی ایمیج رکھتے هیں
تھائی کی اس مصیبت کا پاکستان میڈیا ،
کیا ذکر کررها هے؟؟
کچھ ذکر هے بھی که نهیں ؟؟

اتوار، 16 اکتوبر، 2011

ملک بخیل اکبر



بخیل بھی ایسے ایسے هوتے هیں که
سخی کو تو حیران کرتے هی هیں
عام سابنده بھی حیران هو جاتا هے
اور
سب سے بڑا بخیل هو تا هے معلومات دینے میں بخیل
یهاں جاپان میں بہت سے بخیل هیں
لیکن همارے جاننے والا ایک خاندان ہے
جس خاندان کے بہت سے افراد جاپان میں هیں
اس خاندان کی کوالٹی هے که
اگر کوئی
صاحب ان خاندان کے فرد سے پوچھے
که
کیا حال ہے؟؟
تو
یه صاحبان ایک لمحے کے لیے
سوچیں گے
که
حال بتانے کی معلومات اس بندے کو دینے سے اس بندے کو کوئی کاروباری فائده تو نهیں هو رها

تو هی بتائیں کے که مزاج کیسے هیں
هے ناں بخیلی کی
انتہا
یهاں بلاگ لکھ لکھ کر
کتابیں لکھ لکھ کر
اور لوگوں کو متوجه کرکرکے معلومات بانٹنے والے
قبیلے کے لوگ بھی هیں !!ـ
جن میں خاور بھی شامل ہے
کمتر درجے کا هی سہی!!ـ

پاگل هیں ناں جی معلومات بانٹنے والے لوگ
لیکن یارو انے والے زمانوں میں
اگر کسی کا نام اگر لوگ جانتے هوں گے تو

کس کا جانتےهوں گے
ملک بخیل اکبر کا
یا میرے قبلیے کے لوگوں کا؟؟؟

جمعہ، 14 اکتوبر، 2011

میں بزدل هوں


یارو اس زمین پر سب سے قدر والی چیز ہے
زندگی
جی هاں جان
جس گے لیے بند کیا کیا جتن کرتا ہے اور
کشٹ اٹھاتا ہے
پینترے بدلتا هے
لیکن یارو کچھ لوگ هیں که یه قیمتی ترین چیز
جان!!ـ
ہتھیلی پر لیے پھرتے هیں
الله کے نام پر دینے کےلیے
اور
جان دے کر کهتے هیں
جان دی که دی هوئی اسی کی تھی
حق تو یه هے که حق ادا ناں هوا
جب میت گھر پہنچتی ہے تو
ماں کو مبارک ملتی ہے
شهید کی ماں
میں بزدل هوں که
یا
جان کے لیے هلکان
یا که اپنی ذمه داریوں کی مجبوریوں میں بندھا
لیکن
مجاهدوں کو دل ميں اچھا جانتا هوں
میں ان کے ساتھ شامل نهیں هوں
لیکن
ان کی عزت کرتا هوں
هاں پاکستان کے اخباری تعلیم یافته لوگ کہـ سکتے هیں که
لیکن
جی
وه خود کش حمله
اسلام میں تو خود کشی حرام هوتی هے

قران میں هے که جنگ ميں تمهارا پاؤں پیچھے نهیں پڑنا چاهیے
مگر جنگ کے حربے کے لیے
یعنی که مرجاؤ یا جیت جاؤ
تیسرا اپشن نهیں ہے
اور یه هے جنگ کا حربه
ناں که خود کشی
لیکن اس سے بھی ضرور ی بات یه هے که
پاکستان ميں هونے والے بم دھماکے کیا وقعی خود کش حملے هوتے هیں ؟؟
اگر هاں تو
جنرل ضیاع کے دور ميں شروع هوئے یه حملے ضیاع کے دور میں بم دھماکے کیوں کہلواتے تھے
اور اج خود کش حملے کا نام کس نے دیا هے
اور یه خود کش کیا درختوں پر لگتے هیں که کبھی کسی کے ماں باپ بھائی بہن کی کهانی غیر سرکاری ذریعے سے ملی هی نهیں هے
ڈرون حملوں ميں مرنے والوں کے لواحقین
بدله کس سے لیں کے؟؟
حمله آور لوگوں سے هی لیں کے نان جی؟؟
کون هیں یه حمله آور لوگ جو پاکستانیوں کو مار رهے هیں؟؟
نیٹو اور اس کے اتحادی بشمول پاک فوج اور حکمران !!ـ
تو جی حملے بھی انہی پر هوں گے ناں جی

غیروں سے كها تم نے غیروں سے سنا تم نے
کچھ هم سے کہا هوتا کچھ هم سے سنا هوتا

جمعرات، 13 اکتوبر، 2011

قادیانی اور قادری لوگ


یه مولوی طاهر  قادری کے ماننے والوں کا قادیانیوں سے اختلاف جهاں تک مجھے سمجھ لگی هے صرف اس لیے هے که
لوگوں کو شک ناں هو جائے که دونوں فرقوں کی ڈیوٹی ایک هی ہے
پہلے کی برطانیه سرکار نے لگائی تھی اور دوسرے کی
امریکه سرکار نے لگائی هے که
کسی بھی طرح جهاد کو کینسل کرو
تھوڑی سی بھی سمجھ بوجھ رکھنے والا
اگر تحقیق کرئے تو مولوی طاهر قادری اور مرزا قادیانی کے حالات زندگی میں بڑی مماثلت پائی جاتی هے
هر دو نے خود کو اہلسنت کهلوایا
هر دو کو
اپنے دور کے میڈیا ميں ایک بڑا اسلامی عالم شو کیا گيا
هر دو کو عیسائی عالوں سے مناظروں میں جتایا گيا
هر دو نے عیسائی عالموں کی کتابوں کے مقابلے میں کتابیں لکھیں
هر دو نے روحانیت کی منزلیں طے کی
هر دو کو ان کے زمانے ميں هی عالموں نے جھوٹا قرار دیا
هر دو نے گوروں کے خلاف جدو جہد کو "خلاف اسلام " کا فتوی دیا
مرزا قادیانی نے
برطانیه سرکار کے خلاف والوں کے خلاف فتوا دیا
اور مولوی طاهر قادری نے امریکه کے خلاف
جدوجهد کرنے والے کے خلاف فتوا دیا
هر دو نے جهاد کے اعلان اور کرنے کی ذمه داری حکومتوں کی بتائی
یعنی که
اگر مشرف حکومت پر قبضه کر لے
یا امریکه افغانسان اور عراق پر حمله کرکے ایک ڈمی حکومت هی کیوں ناں بنا دے
اس کے خلاف
جدوجہد
طاهر القادری اور قادیانی مسلک کے مطابق غیر اسلامی هے
لیکن یه حکومتیں جو بھی ظلم بندوق اٹھانے والوں پر کریں گی وه عین اسلامی اور
شریعت طاهر القادری اور قادیانی کے مطابق هو گا
صرف ایک جگه فرق هے
که ایک نے نبی کا دعوا کر دیا
اور دوسرا صرف ولی هونے کا ڈرامه کر کے
مشن پر کا جاری رکھے هوئے هے
اور یه اس لیے هے که پرانے تجربے کے مطابق
اگر نبوت کا دعوه کروا دیا جائے تو
لوگ بدک جاتے هیں
جیسا که
اپ
سب دیکھ سکتے هیں
سب لوگ مرزایت کی جب بھی بات کریں کے
ختم نبوت میں هی اٹک کر ره جائیں کے
کیسا ڈرامه هے که لوگ
شخصیات کی بحث میں الجھے رهیں
اور سازشی لوگ
اپنے نظریات کی زهر پھلاتے هی چلے جائیں

اتوار، 9 اکتوبر، 2011

پاک تاریخ ، ناپاک تاریخ


میں اس بات کو بہت ضروری سمجھتا هوں که
پاکستان ميں دی گئی جھوٹ کی تعلیم پر بات هو
اور کئی طرح کے لوگوں میں یه بات هونی چاهیے
تاکه
معاملات کے سمجھنے کی بات چلے
لیکن مسئله یه هے که
تین نسلیں اس جھوٹ کی تعلیم پا کر تیار هوئی هیں
اس لیے
اصلی معاملے تک پہنچنا مشکل هے

میں کوئی اعلی تعلیم یافته بنده نهیں هوں که
باتوں میں کہرائی پیدا کرکے
معاملات کو الجھاتا هی چلا جاؤں
میں بات کروں گا که میرے طبقے کے لوگ کیسے سوچتے هیں
دوکاندار، ریڑھی بان
کلرک
یعنی که عام سے لوگ
عوام
جولوگ که معاشره هوتے هیں
بات وهاں سے شروع کرتے هیں که
قائد اعظم محمد علی جناح کو
کراچی میں هی پیدا کرنے کی کیا ضرورت تھی
اور اس کے پیچھے کیا مفادات یا نظریات تھے
کیا فرق پڑتا تھا که اگر
بابے کی پیدائیش
سنده کے اسی گاؤں کی رہنے دیتے جهاں وه پیدا هوا تھا
جهاں پرائمری سکول میں جایا کرتا تھا؟؟
اس کے بعد
جب بابے نے فوج کے چیف اف ارمی سٹال
کو کشمیر پر کنٹرول کا حکم دیا تو
اس کے جواب اور کردار پر بات هونی چاهیے
اور پھر
اج کے ازاد کشمیر(بقول پاکستان) کو کس نے آزاد کروایا تھا
اور اس وقت
فوج کیا کررهی تھی؟
اس کے بعد پینسٹھ کی جنک
کس نے شروع کی
اور اس کا نتیجه کیا نکلا
سنده طاس معاهده
اور پنجاب کے دریا راوی اور چناب کیا هوئے که
اج راوی ایک بڑے سے نالے کا منظر پیش کرتا هے
سانحه مشرقی پاکستان
جس کو عام لوگ
اکہتر کی جنگ کهتے هیں
میرے طبقے کے لوگ یه یقین رکھتے هیں که
هندو نے مشرقی پاکستان پر حمله کردیا تھا جس میں بنگلیوں نے غداری کی اور هندو کا ساتھ دیا جس کی وجه سے
پاک فوج کو شکست هوئی
ورنه جی پاک فوج تو بڑی ٠٠٠٠٠٠٠
لیکن اصل بات کیا تھی؟؟
الیکشن میں مجیب کی جیت
فوج کے سربراه کا کردار
مشرقی پاکستان کا اپنے حقوق کا مطالبه
اور فوج کی داد شجاعت
ترانے
حسن بنگال کی پامالی
مکتی باہنی کی مزاحمت
اس کے علاوه کی بهت سی باتوں کے بعد جا کر کهیں
پلٹن میدان سجتا هے
جهاں جرنل اروڑا نے پاک جرنیل نیازی کو بے عزت کیا تھا
الیکشن کے بعد پلٹن میدان سجنے تک کی باتیں
پاک تاریخ میں سے غائب کیوں هیں؟؟
جرنل ضیاع کا نوے دن
نظام مصطفے
هارس ٹریڈنگ
ریفرینڈم
اور اس ریفرنڈم میں کیے گئے سوال کا تجزیه هونا چاهیے
کارگل کی جنگ اور اس میں کیا هوا
کسی نےکیا؟؟
ان چیزوں پر بات هونی چاهیے
که کیا بات هے که جهاں جهان فوج کی بے عزتی هوتی نظر آئے وهاں باتوں کو چھپایا جارها هے
اور جهان جهاں فوج کا کردار چھپایا جاسکتا هے
وهان جھوٹ کی تکرار سے فوج کو پرموٹ کیا جارها هے؟
باقی جهان تک بات هے پاکستان بننے سے پہلے کی تاریخ کی تو
اس کو عالم اسلام کی تاریخ کے نام پر پاکستان ميں
کچھ اس طرح پڑھایا جارها هے که
لطیفے سے لگتے هیں جی
ایک تھا بادشاه
جو که ٹوپیاں بنا کر گزارا کرتا تھا
اوئے بھولے لوکو
ٹوپیوں کی کمائی سے تو لال قلعے کی ٹیپ بھی نهیں کروائی جاسکتی
اور اس بادشاه کو تو سکھوں کے قتل اور بھائیوں کے قتل کے ساتھ ساتھ ابا جی کو قید رکھنے جیسی مصروفیات بھی تھیں
ٹوپیاں بنانے کا وقت کب ملتا تھا جی ؟؟

یقین جانیں که هندو سے میں بھی اندر سے نفرت محسوس کرتا هوں
که ایک احساس جاگزیں هو چکا هے میرے اندر
که
هندو بڑا چالاک هے
دھوکه کرجائے گا
لیکن جب یه سوچتا هوں که
هند پر حملے هی هوئے هیں
هند کبھی بھی جارحیت کا مرتکب نهیں هوا تو؟؟
بھی جی هندو چالاک هی محسوس هوتا هے
یه هے
تعلیم کا اثر

جمعہ، 7 اکتوبر، 2011

الله اسے غریق رحمت فرمائے

جوان عمری کی موت هے که اپنی عمر کی پچاسویں دھائی میں هی دنیا سے کوچ
سٹیو!!ـ
همارے عهد کا ایک عظیم ادمی جو که
امیر بھی هوچکا تھا
ستانوے تک لوگ کہنے لگے تھے که میک (ایپل کمپیوٹر کی کمپنی)مر جائے گا
لیکن اٹھانوے میں آئی میک کی مارگیٹنگ نے
میک کو ایک نئی زندگي دی

یه آئی میں میں نے ننانوے کے اپریل میں لیا تھا
انہی دنوں کهیں پڑھا که جاپان کی ٹوکیو یونورسٹی نے
اپنی تحقیقات کے لیے میک کے کمپیوٹر لیے هیں
ائی میک کے اس ماڈل میں پہلی بار ڈی وی ڈی آئی تھی
کام پر ایک بٹ صاحب نے پوچھا تھا که خاور صاحب اپ کے گھر میں تو ڈی وی ڈی پلئیر بھی هو گا!!ـ
میں نے جواب دیا که ڈی وی ڈی چلانے کی مشین بھی هے
تو انہوں نے تاسف امیز
نظروں سے دیکھا تھا
که
بڑے چھاڈو هو جی تسی لوگ بھی
کیونکه ان دنوں کسی کے پاس ڈی وی ڈی پلئر هونا بڑي بات هوا کرتی تھی

اور یه پاور بک میں دو هزار تین میں استعمال کررهاتھا
جس ميں عربی قیورٹی کی سهولت کی وجه سے میں وکی پیڈیا پر کام کرنے اور اپنا اردو کا بلاگ بنانے کے قابل هوا
که اس وقت تک لوگ بل گیٹس کی کھڑکیوں پر چوری کا انپیج استعمال کیا کرتے تھے
اُس زمانے میں میرو اردگرد کے لوگ یونکس استعمال کرتے تھے
جن میں میں ایپل والا " اوپرا اوپرا " سا لگتا تھا
ونڈو والے تو اُن لوگوں کے لیے قابل نفرین تھے جی

سٹیو کے مرنے سے دنیا کا کچھ نقصان نهیں هو گا
که
انے والے زمانوں کے لوگ بڑے هی ٹیلنٹ والے هیں
لیکن
میرا دل سٹیو کے مرنے پر اداس ضرور هوا هے
الله اسے جنت نصیب کرنے
که
هر کسی کو هر چیز الله هی
عطا فرماتا هے

منگل، 4 اکتوبر، 2011

صدقه اور بلائیں

هم جن چاولوں کو لونے (نمک والے)چاول کہتے هیں ، دوسرے لوگ ان کو پلاؤ کا نام دے کر کھاتے هیں
جس پنجابی میں مسی روٹی کہتے هیں اس کو یورپی لوگ ، پیزا کا نام دے کر کھاتے هیں
اسی طرح کی بہت سی چیزیں هوتی هیں جن کے نام یا تو زبان کی وجه سے بدل جاتے هیں یا ماحول کی وجه سے
پاکستان میں
چیزوں کے نام بدل دئے جاتے هیں
لوگوں کو بیوقوف بنانے کے لیے
دستور کو آئین کا نام دے کر عام لوگوں کے فهم سے دور کردیا جاتا هے اور
لینے والے هاتھ سے دینے والا هاتھ بهتر هونے كو
اس طرح غلط كر دیا جاتا هے كه بھیک لینے والا داتا بنا بیٹھا هوتا هے
خود کو عظیم اور نسلی اور پته نهیں کیا سے کیا منوانے کے لیے مسخروں کی طرح کی خرکتیں کرنے والے
مقدس لوگ
بھیک کھاتے هیں
وه بھی لوگ هیں جن پر قبول ان کے صدقه ان پر حرام هے
صدقه جس کے متعلق
کها جاتا هے که
صدقه بلاؤں کو کھا جاتا هے
لیکن خود پر صدقه حرام هونے کا کہنے والوں میں ایسے ایسے لوگ پائے جاتے هیں
جن کےمتعلق
خاور کهتا هے
که یه وه بلائیں هیں
جو صدقه هی کھاجاتی هیں

صدقه چاہے کافروں نے هی دیا هو
ایڈ کے نام پر
دوسری دنیا میں صدقه بلاؤں کو کھاتا هو گا
پاکستان میں
ایسی ایسی بلائیں هیں جو
جو
صدقه هی کھا جاتی هیں

اتوار، 25 ستمبر، 2011

منکر حدیث یا منکر کتاباں


یارو
پنجابی میں کہتے هیں ناں
آلے (طاق) والا خط
که کسی بادشاه نے عالموں سے کها که پتر کو خط پڑھنے کے قابل بنا دو
اور وه وه ایک مهینے میں
ورنه قتل کردوں گا تو
ایک سیانے نے اس کو طاق میں رکھا هوا خط رٹا دیا تھا
یا پھر همارے اردو کے کسی کالم نگار نے لکھا تھا که ککس ایک هی چیز پر مضمون کرلیں
مثلاً
هاکی کا میچ
اور هر بات کی تان
هاکی کی کمنٹری پر کھینچ کر
واه واه کروالیں
اسی طرح
هم لوکوں کا طاق کا خط بن کے ره گیا هے
اسلام
میں کوئی مذہپ کا ٹھیکیدا ر نهیں هوں
که اپ کو کتابوں میں لکھی بونگیاں کے خوالے دے دو کر اپنا بھی اور دوسروں کا بھی دماغ خراب کروں
اور
قران کو میں نے سمجھنے اور هدایت کے لیے پڑھا اور سمجھا ہے
ناں که
ایتوں کے نمبر یاد رکھ رکھ کر دوسروں کو زچ کرنے کے لیے
اور یه بات بھی میرے ذهن میں هوتی هے که
جب میں قران کی کسی آیت کی بات کروں تو
سامنے والے کو اس آئت کریمه کا معلوم هو
بات چلی تھی فیس بک پر
که
کھوتے کے گوشت کے منع کی بات
قران میں نهیں هے
اس لیے هم دوسری کتابوں کے مرهون منت هیں
اس وقت میں پاکستان میں هوں
دو دن سے بخار سے پھنک رها هوں
لائیٹ گئی هوئی هے
اس لیے میں فیس بک پر هونے والی اس دوران کی کسی بات کا عالم نهیں هوں
پہلي بات کھوتے کے گوشت کی
اور پھر
دوسری هے که قران میں نمازوں کے اوقات کی
تو
جی
همارا( همارا سے مراد میں اور میرے جیسے)ـ
ایمان مکمل هوتا ہے
ایمان مفصل والی تفصیل سے
الله پر فرشتوں پر کتابوں پر رسولوں پر
اور
باقی کی اپ خود پڑھ لیں
ورنه اپ کے اس پاس هر مسلمان کو یاد هو گی اس سے سن لیں
تو جی پرانی اسمانی کتابوں کی روشنی میں
حرام حلال کی تفصیل یه هے که
هوا میں اڑنے والے
وه جو پنجوں میں لے کر کھائیں وھ حرام اور
جو
چونچ مار کر کھائیں وه حلال
پانی کے وه جانور جو
اپنی مرضی سے پانی سے نکل کر بھی زندگی گزار سکتے هیں
وه حرام اور
جو پانی سے نکالے جانے کے بعد زندگی کو برقرار ناں رکھ سکیں
وه حرام
پانچ ناخنوں والے جانور جو که عموماً گوشت خور هوتے هیں
حرام
اور جو جانور زمین میں بل کھود کر زندگی گزارتے هیں
حرام
جن جانوروں کے کھر(پاؤں کے ناخن)دو میں پھٹے هو
ان میں سارے مویشی کھائے جاسکتے هیں
کیونکه
سور کے کھر بھی پھٹے هوتے هیں
اس لیے کوتاه علم لوگوں کی هدایت کے لیے قران میں عقل کل الله سائیں نے تاکید کردی
حالانکه
کسی بھی زبان میں مویشی کی کیٹاگری میں
گھوڑے گدھے اور سور کو شامل نهیں کیا جاتا
اج کی عالم زبان انگریزی میں بھی نهیں
اگر اپ کے پاس قران اور اس سے پہلے کی کتابوں کا علم هے تو
قران کے بعد
لکھی گئی کتابوں کے فتنوں سے بچنے کا خاصا انتظام هے
بلکل جس طرح کچھ ریسٹورانٹوں میں خواتین کے لیے پردے کا خاص انتظام هوتا هے
اسی طرح
نابالغ ذهنوں کے لیے فتنوں سے بچنے کا خاص انتظام
هوتا هے که قران میں
اور پرانی شریتوں میں
جو که کینسل نهیں کی گئی هیں
بلکه
ان میں کی گئی تبدیدلیوں کی طرف توجه کا کها گیا هے
جی هاں تبدیلیاں
جن کی اسلام میں نشاندهی کے لیے
هم لوگوں کو منتخب کیا کيا هے
دوسرا سوال تھا
نماز کے اوقات کا
تو که
اس کا جواب ہے که
قران میں صلواة کے اوقات صرف تین بتائے گئے هیں
حالانکه میں نمازاں پانچ پڑھتا هوں
اور واضع طور پر بتائے گئے هیں
اور اگر میں نے اس کی تفصیل لکھی ناں جی تو کام چور نمازی
اس کو سهولت بنا کر نمازیں چھوڑ دیں گے
اس لیے میں یهاں سورة کا نام یا ایت نمبر نهیں لکھوں گا
اور میں سوچ رها هوں که صرف ایک کتاب قران میں لکھی باتوں سے جو لاعلم ہے
اس کو کیسے علم حاصل هو گا که
پرانے مذاهب اور قران پر سوچ بچار کر سکے
یا که ایک سازز کے تحت ان کو سوچنے کا پلیٹ فارم هی دوسرا دے دیا گیا هے که
قران کے قریب نهیں جانا هے اور جو قران کی بات کرئے
اس کو
لفظوں میں الجھا کر اس طرح کا ماحول بنا دینا هے
که کوئی سننے اور پڑھنے والا بھی قران کے قریب ناں هو جائے
که
قران مذهبی دوکانداریوں کو ختم کر دیتا هے
اور یه بڑا نقصان هے دوکانداروں کا

جمعرات، 15 ستمبر، 2011

ڈینگی بخار

ڈنگی بخار
مجھے یاد هے که هر سال گرمیوں میں لوگوں کو بخار هوا کرتا تھا
جس کے لیے کونین کی گولیاں بانٹی جاتی تھی یا کھائی جاتی تھیں
همارے جیسے دیسی کھرانوں ميں نیم
یا
دھریک اور پھلا کے پتے گھونٹ کر پئے جاتے تھے
یه بخار کی وبا وهی تو نهیں هے جو پرانوں سے پنجاب میں هوا کرتی تھی
لیکن هر چیز امپورٹڈ کے شوقین
پنجابی
اب نام بھی
ڈنگی اور دوائیں بھی بدیسی چاهتے هیں
یه موسمی بخار تو نهیں هے کہیں
که کم علموں کا شیوه هوتا هے سنسنی پھلانے کا
اور
پاک حکومتی لوگوں کے کم علم هونے میں مجھے کوئی شک نهیں هے
که اگر یه اہل علم هوتے تو
کم از کم
ان کو
منافقت
جھوٹ
اور
بھیک کے عذابوں کا علم تو هوتا
ناں جی

بدھ، 14 ستمبر، 2011

تنگ لوگ

ناں جی پاکستان میں
ہے کون
جو تنگ نهیں هے؟؟
زردای!!ـ
یارو وھ بھی شریفین سے تنگ هے
پاکستانی یا تنگ هوتے هیں
یا تنگ کرتے هیں
تنگی میں گزرا کرتے هیں
لیکن بچپن میں جو لفظ تنگ میں نے پہلے پہل سنا وھ تھا جی
اس بیلٹ کا نام جو گھوڑے یا گدھے کی پیٹھ پر رکھی کاٹھی یا
پلانا کو سنبھالنے کے لیے
پیٹھ کے پیچھے سے گزاری جاتی هے

یه والا تنگ که جس کو سن سن کر باهر مقیم پاکستانی بھی تنگ آ چکے هیں
اس تنگ کی تنگی تو جی ضیاع صاحب کے
اسلامی دور ميں شروع هوئی تھی ناں جی
رشوت لینے والا بھی تنگ اور
دینے والا بھی تنگ
فوج تنگ هے که لوگوں کو ان کے پلاٹ اور رقبے نظر انے لگے هیں
سیاستدان تنگ هیں که
فوج
سکون سے لوٹنے نهیں دیتی
سارے امریکه قرضے هتھیا لیتی هے
کوئی تنگی سی تنگی هے جی پاکستان میں
اب تو سنا ہے که
مچھر بھی تنگ کرتے هیں
پاک لوگان کو
ایک تو جی پاک لوگ اس بات سے تنگ هیں که
لوگ ان کو پلید کہتے هیں
اس لیے
اب جو مچھر ان کو تنگ کرتا هے
ڈینگی والا
اس کی پیدائیش کا صاف پانی میں بتا بتا کر
اور سن سن کا تنگ هورهے هیں جی
لوگ
صاف پانی پاکستان میں هے کهاں؟؟
چھت پر رکھی ٹنکیوں میں !!!ـ
جن میں جالا لگا هوتا ہے
اوپر دھول جمی هوتی هے
اور اندر سنڈیاں!!!ـ
ان چاول کے دانوں کے سائیز کی سنڈیوں کی پاکستان ميں تنگی کی کوئی خبر وصول نهیں هوئی هے
که
کسی نے ان کو ختم کرنے کی کوشش کی هو
تنگی کو ماپنے کا پیمانه
ابھی نهیں هے که کون کس سے کتنا تنگ هے
که پاکستان ميں
فوج نے هر کام بے حساب کرنے کا کلچر
عام کردیا هے
فوج کے کے آڈٹ کا کہنے والے کو غدار کہـ کر تنگ کرکر کے
اس لیے تنگی کی مقدار بھی بے حساب ہے
هاں
جو لوگ جتنے زیادھ کام چور هیں وھ اتنے هی تنگ هیں
لوگوں کے رویے سے
اور لوگ ان کو سب سے زیادھ تنگ کرنے والا کہتے هیں

پاکستان مقیم
لوگوں کا ایک فقره
جو باهر مقیم محنتی گدھوں کو تنگ کرنے کے لیے استعمال هوتا هے
که گدھے کام زیادھ کریں اور
پیسے زیادھ بھیجیں
تو جی باهر مقیم پاکستایوں کی اکثریت کیوں که
کام چور نهیں هے اس لیے
یه لوگ تنگ هونے کی بجائے پریشان هوتے هوتے هیں
اس فقرے کو سن کر
کیا فقره هے جی
یه که
سر پیٹ لینے کو دل کرتا هے
اور جب کسی غیر پاکستانی کو کهیں تو اس کا هاسا هی نکل جاتا هے
کیا گہرائی هے
جی اس ایک فقرے میں
که
کم عقلوں کے سر سے گزر جائے گا
اور
عقل والوں کے لیے
نشانیاں هیں جی اس ميں
اور وھ
فقرھ ہے
جی























پیسے دا تے هن بن دا ای کجھ نهیں جی!!ـ
پاکستان وچ

جمعہ، 9 ستمبر، 2011

سیب کا جوس


بخدمت جناب برین واشنگ ونگ
اسلام علیکم
صورت احوال یه هےکه
یهاں مری والے سیب کےباغات جو که جرنل صاحب کی ملکیت هیں
ان میں اس دفعه
یهود وهنود کی سازش کی وجه سے تیز هوائیں چلتی هی هیں
جس کی وجه سے سارے سیب گر گئے هیں
اس لیے اب یه سیب مارکیٹ مين فروخت کے قبل نهیں رهے هیں
جرنل صاحب کے کهنے پر میں اب کو لکھ رها هوں که
اس سال ان سیبوں کا صرف جوس هی فروخت کیا جاسکتا هے

لیکن قوم میں سیب کا جوس پینے کی سکت نهیں هے
اس لیے کیوں نان کچھ ایسا طریقه کریں که لوگ اس سال زیادھ سے زیاده سیب کا جوس پینا شروع کر دیں
تاکه جرنل صاحب کے باغات کے سیب ضائع هونے سے بچ جائیں
فقط
هیڈ مالی
باغات جرنل ٠٠٠٠٠

جناب هیڈ مالی صاحب
اپ کا لیٹر ملا
هم نے اس بات کے لیے جرنل صاحب سے ڈائریکٹ رابطه کیا هے
اب اپ بے فکر هو جائیں
انچارج
سرکاری میڈیا کا برین واشنگ ونک

جناب
جرنل صاحب جیسا که اب سے فون پر بات هوئی تھی اور اپ نے حکم دیا تھا
که مالی کے خط پر ایکشن لیا جائے تو هم نے
یه ایک پیغام تیار کیا هے
اس پیغام کو ملک ميں رائج کرنے کے لیے اپ کے حکم کا انتظار ہے
اور اگر اپ کے ذهن میں اخباروں ميں شائع کروانے کی بجائے
کوئی اور طریقه هو تو اس کے متعلق گائیڈ کرکے برین واشنگ ونگ کو مشکور فرمائیں
پیغام مندرجه ذیل هے

ضروری اطلاع ؛ ڈاکٹر ندیم علی جو قائد اعظم یونیورسٹی میں مائکرو بیالوجسٹ ہیں ، انہوں نے اپنی ریسرچ سے ثابت کیا ہے کہ ایپل جوس(سیب کے رس) میں لیمن جوس( لیموں کے رس) کے چند قطرے ملا کر ڈینگی کے مریض کو پلایا جائے تو اسکا وائرس ختم ہو جاتا ہے ، مہربانی فرما کر اسے آگے بڑھائیں، تاکہ جانیں بچائیں جا سکیں


اپ کا تابعدار
میجر ٠٠٠٠٠٠

میجر
اسلام علیکم
مجھے تمهارے ونگ کا لکھا هوا یه پیغام پسند ایا
میرے خیال میں اس بیغام کو فیس بک پر لگا دو
باقی یهاں محقق بننے کے خواهشمند خود هی اس کو شئیر کرکر کے عام کردیں گے
جرنل ٠٠٠٠٠

جمعہ، 2 ستمبر، 2011

بصیر و نظیر


میرے کان گرمیوں میں بینڈے کی آواز سنتے هیں

اور

میرے ذهن کی بصارت مجھے میرا بچپن دیکھاتی هے

وه قبرستان كے پاس سے گزرنے والی کچی سڑک جس پر دهول اڑتی تھی

اور میں ننگے پاؤں هوتا تھا

میں کسی کی هنسی دیکھتا هوں

تو

مجھے میرا ذہن مجھے وه مدھر گیت سناتا هے جو دل

میں اتر کر پھر اترتے هی چلے جاتے هیں

کبھی میں دیکھ کر سنتا هوں اور کبھی

سن کر دیکھتا هوں

میرے رب نے مجھے کیا کیا لطف عطا کیے هیں که

اس کی عطا کی صفات کے تہـ در تہـ لطف اٹھاتا هوں اور

لہر در لہر بہتا هی چلا جاتا هوں

هاں میرے رب نے قران میں ایک احسان جتلایا هے

که

جس کو کینے سے پاک دل دیا

اس پر بڑا احسان کیا


میں کینے سے پاک دل کی وجه سے
کتنی هی اذیتوں سے بچالیا گیا هوں
که ورنه
ان اذیتوں ميں بھی تو ایک پرتوں کا سلسله هونا تھا

قانع لوگ


یهاں جاپان میں ایک مولوی صاحب آئے تھے جن کا تعلق منڈی بہاؤالدین سے تھا
ان سے بات چل پڑی ابروجین لوگوں (اسٹریلیا کے قدیم باشندے)کی تو کہنے لگے یه که لوگ اس دور میں بھی کیوں اتنے پسمانده هیں ؟
میں نے ان کو بتایا که عمرانایات کے ماہر کہتے هیں که انسانوں کی کچھ نسلیں بڑی هی قناعت پسند هوتی هیں که ترقی کی ضرورت هی محسوس نهیں کرتیں !!ـ
مولوی صاحب گے منه سے فوراً نکلا
جیسے همارے هاں کے مصلی لوگ!!ـ
میں نے اس اگے بات نهیں بڑھائی که مولوی صاحپ غصه کر جائیں گےـ
که گوری اقوام کا یه خیال همارے متعلق هےـ
ابروجین لوگ بهت هی قانع لوگ هیں
اتنے قانع که همارے روحانیت کے جغادری جو لکھتے هیں که
انے والے کل کی بھی فکر نهیں کرنی
رزق رب نے دینا هے
یه ابروجین بھی ایسا هی کرتے هیں که
کھیتی باڑی ميں بھی فصل اٹھنے تک انتظار کرنا پڑتا ہے
اس لیے
جانوروں کے شکار اور خود رو پھلوں سبزیوں سے یا اگر کوئی اناج قسم کی چیز هوتی هو گی تو اس سے گزارا کر لیتے هیں
ان کے بعد اتے هیں افریقی نسل کے کالے لوگ
یه لوگ بھی جو کچھ پاس هو
وه جنس مخالف کو متاثر کرنے لے لیے شو شا پر خرچ کردیتے هیں
اور مستقبل کی کم هی فکر کرتے هیں
کم فکر کرتے هیں
بلکل هی بے فکرے نهیں هیں
اس کے بعد جی هم لوگ هیں
جو تھوڑی کوشش کرتے هیں اور بس
باقی کا کام کسی معجزے پر چھوڑ دیتے هیں
یا کوئی بنی بنائی چیز مل جائے تو
اس پر قانع هو جاتے هیں
که یه هم پر هماری قناعت پسندی کا انعام هے
لیکن یه نهیں سوچتے که اس چیز کو بنانے والے
ایجاد کرنے والے
کی کیا سوج تھی که
جب کام چل هی رهے هیں تو
یه مسلسل تحقیق
جدو جهد اور خوب سے خوب تر کی تلاش ، جستجو ، کرنے والے کون لوگ هیں اور ان کی
یه سوچ هے کیا؟؟
هاں جی بات کررها هوں گوری اور پیلی اقوام کی
که پیلی اقوام یه بھی کہتی هیں که
گوری نسل
کچھ اس طرح کی هے که جیسے کچھ بچے همارے پاکستان ميں بھی ایک دم گورے سے هو جاتے هیں
پیدائیشی عجب
لیکن هر دو رنگ کی قومیں هیں که مسلسل تحقیق اور تجربات ميں لگی هیں
ان کے ممالک میں ویزے لے کر جابسنے کی خواهش هی کرتے هیں اور بس کوشش کرکے ان کے پاس چلے جاتے هیں
اور ان کی محنت ، تحقیق، اور تجربات سے بنائے گئے سسٹم کے فوائد سے اپنی زندگی کو تھوڑا
سهولت امیز بنا کر پھر
قانع هو جاتے هیں
میں سخت مخالف هوں جی قناعت کے
اپنے حال میں مست رهنے کی تلقین سے
ڈنگ ٹپاؤ قسم کی سوچ سے
اگر انجن بنانے کی مجرم قوم بھی قناعت پسند هوتی تو؟؟
انجن کو ریل سے کار تک کا سفر اور ڈیزل پٹرول انجن سے
هائی بریڈ انجن تک کے سفر میں اٹھائی گئی مشقت
هی هے
ورنه
سانوں کی
کہنے والی قوم کیا یه کرسکتی تھی


اگر بندے کاباطن صاف ، دل مطمئن اور وه مسلسل جدوجهد پر یقین رکھتا هو تو اس کا ذہن حیلوں بہانوں کی کثافت سے پاک ہو گا
اور خوشحالی اس کا مقدر هو گی
لیکن
یه قناعت هی حیلے بهانے بنانے کی بنیاد هوتی ہے

سوموار، 29 اگست، 2011

شاستر

مستان نامی ایک جگه ہے نیپال میں
جهاں پہنچنے کے لیے
ایورسٹ سر کرنے سے تھوڑی هی کم مصیبت اٹھانی پڑتی ہے

یہاں کے رهنے والے لوگ بہت هی غریب هیں
ناں خوراک اچھی اور ناں هی زندگی کی کوئی اور سہولت
ایک دن یهاں سے ایک "کافر" کا گزر هوا
یه کافر هے بقول مولوی کے
اور اگر کسی درویش نے دیکھا تو دنیا دار کتا کہے گا
اور یه کافر اگر ان دونوں کو دیکھے گا بھی تو؟

کومنٹ دینے سے زیادھ اس کو کچھ "اور " چیزوں کی فکر هو گی
تو جی یه بنده تھا ایک جاپانی
ستر کی دھائی میں جاپان کی حکومت کے ایک پروگرام کے مطابق مستان کی چوٹیوں پر گیا تھا
که یهان رهنے والے لوگوں کی بهتری کے لیے کام کرسکے
تیز هواؤں اور خشک ٹھنڈک والی ان چوٹیوں پر گھاس بھی کم هی اگتی هے
اور زمیں هے که
جس کو اردو ميں بنجر کہیں گے
بنجر که جس مٹی میں پتھر اتنے زیاد هوں که ہل چلانا بھی مشکل هو
اس بندے نے مستان کے لوگوں کو کچھ دینے کا تہیه کر لیا
اور اس نے ان کو
کھیتی باڑی کا طریقه بتایا
که
پہاڑوں سے انے والے پانی کو کھڑا کرنے کے لیے پتھروں سے روکاوٹیں کھڑی کیں
هوا سے اوٹ دینے والی پہاڑیوں کی اوٹ میں درخت اور کھاس اگائی
اور یهاں سبزیاں اگائیں
اب مجھے اس کا نام یاد نهں ارها
لیکن اس جاپانی کی عمر اس وقت
نوے سال ہے
اور ابھی زندھ ہے
گھوڑے پر بیٹھے اس بابے کے گھوڑے کی لگام پکڑ کر ایک یا دو جوان چلتے هیں
گندے کپڑے پہنے میلے سے چهروں والے دیهاتیوں کے چہرے اس بابے کو دیکھ کر کھل اٹھتے هیں
بابے کا کام هتھیلی پر سرسوں جمانے والا نهیں تھا
که
روم ایک دن میں نهیں بن جاتا
سبزیوں کی کاشت کے لیے زمین کو تیار کرنے سے لے کر
سبزیوں اور پھلوں کی پیداوار تک
ایک عرصه لگا
یه پھل اور سبزیاں مستان کے لوگوں کے دسترخوان پر رونق کا باعث بنیں
پیٹ بھر کر کھانا نصیب هوا تو
اگلے ایک عرصے ميں ان سبزیوں اور پھلوں کو مارکیٹ تک پہنچا کر
کمائی کا راسته بنایا
تب جا کر مستان کے لوگوں میں
اپنے انسان هونے کا احساس پیدا هوا
که اس وقت تک مستان کے جوان کمائی کے لیے شهروں کی طرف چلے جایا کرتے تھے که دیهاتوں میں بابے اور مائیاں هی ره جاتی تھیں
جب مقاممی لوگوں کو روزگار ملا تو
یه باهر جانے کے روحجان میں کمی آئی تو جی
جاپانی بابے نے ان دیهاتیوں کے بچوں کے لیے
تعلیم کا انتظام بھی کر دیا
که
ان کو سکول بنا دیا
اور ان کی صحت کے لیے ایک شفا خانه بھی بنوا دیا
ایک بندے نے
اپنی جوانی
کسی اور ملک کے لوگوں کی بھلائی کے لیے وقف کر کے
اپنی ساری صلاحتیں
مستان کے لوگوں کے لیے لگا دیں
پاک سوچ کے مطابق سوال پیدا هوتا هے که
اپنے لیے کیا بنایا؟؟
کچھ بھی نهیں
نان سوئس بنکوں میں اکاؤنٹ
اور ناں هی اسلام اباد کے پلاٹ
اور ناں هی سڑکوں اور پلوں کے افتتاح کی تختیاں
لیکن یه بابا
بڑا مطعمن هے نوے سال کی عمر میں بھی
کیوں که اس سے جب زمینوں کی بحالی کا کام کیا تو
سب لوگوں کی زمین جیسے اسی کی زمیں سی بن گئی
اور اپنا بھی فارم بنا لیا
جس میں ایک گھر بھی هے
ساری زندگی اچھا کھانا کھایا
اپنی مرضی کے گھر ميں رها
ایک سوال
زندگی کیا ہے؟؟؟
جواب
جو دن هم گزار رهے هیں !!ـ
تو جی اس کا مطلب هوا که اگر کسی کا اج اچھا نهیں هے تو اس کی زندگی اچھی نہیں هے
اگر کوئیاپنی اچھی زندگی کے لیے اپنا اج برا کرکے کمارها هے تو
اس کے سارے اج برے هوں گے
تو
اس کی اچھی زندگی کب شروع هو گی ؟؟
کبھی نهیں !!!ـ
تو جی بابے نے اپنی ساری زندگی
اپنی خواهش کے مطابق گزاری ہے
که اس کی خواهش هی کسی کے کام انا تھا
کسی کے کام انے کی خواهش کی تکمیل
اور اس کی لذت
کے ساتھ ساتھ
اچھا کھانا
اچھے کپڑے
اچھا مکان
اور اچھی سواری
که بابا جی کے پاس اچھے گھوڑے هیں
اب ایک بہترین بڑهاپا
لوگ بابے کے اگے پیچھے پھرتے هیں اور دل سے خواهش کرتے هیں که باباجی
همیشه زندھ رهیں

یه تحریر اس بات کے تناظر میں لکھی ہے که
پاکستان میں جب بھی
ارباب اختیار سے بات هوتی ہے که ملک کے معاشی حالات کی بہتری کے لیے کچھ کریں
تو
ان کے منه
سے نکل جاتا هے
تے پیسے کتھوں اؤن گے

اتوار، 21 اگست، 2011

هدوانے


لذتوں کی تلاش میں لذتیں ملتی هی رهتی هیں
لیکن منزلیں مارتے هوئے بندے کو پرانی والی لذتیں یاد اتی هیں اور بھلی لگتی هیں
اسی لیے اپنے گاؤں کے ایک شاعر تھے جی
عبدلحمید عدم
وه کہتے هیں
جوانی ڈھلنے په مائل هو جس حسینه کی
وه اپنے یار پرانے تلاش کرتی هے
بڑی فقیر طبیت هے عدم تیری
یه رانوں کے سرهانے تلاش کرتی هے
اخر والے مصرع پر میرا ایک یار ہے
محمد رمضان عرف بوٹی
وه کها کرتا تھا
که
آہو جی !!!ـ فقیر طبیت جو هوئی
اپنی حالت هےکه شروع جوانی کی وه لذتیں یاد اتی هیں
جن کو بس ایويں سا هی سمجھ کر چھوڑ دیا تھا
که
اب دل مانگے
کوئی موڑ هو که وهیں چلے جائیں
لیکن
پیروں میں اتنے بھنور لیے هوئے هیں که اب
گھمن گھیریاں کھا کھا گھن چکر هو گئے هیں که
مزے کا احساس بھی بدل چکا هے
وه قلفی جو
ایک انے کی اتی تھی اس کا مزه اج کی کسی ملٹی نیشنل کمپنی کی آئس کریم یا فروزن یوگرٹ میں نهیں هے

هدوانه جس کو تربوز کهتے هیں
هماری مادری زبان ميں اس کا لهجه بنتا ہے دوانا
اسی لیے وهاں گوجرانواله میں ایک دیوار پر لکھا تھا
دل دیا تھا یار کو دیوانه سمجھ کر
کھا گیا الو کا پٹھا هدوانہ سمجھ کر
بڑا منافق کا فروٹ هوتا ہے جی یه هدوانه بھی که
اوپر سے کبھی پورا مسلمان کبھی سیاھ دھاری کے ساتھ هلکا شیعه
اور کبھی پورا کالا کر کے شیعه هو جاتا هے لیکن
اندر سے یه سرخا هی نکلتا هے
کیمونسٹ
بلکل منافق فروٹ هے جی
یهاں جاپان میں اندر سے
پیلے هدوانے بھی نکلتے هیں
که ظاہر میں سبز مسلمان لگتے هیں لیکن اندر سے پیلے
اب جی پیلے کی ٹرم
ان قوموں کے لیے بولی جاتی هے جن کو هماری قوم پھینے کهتی هے
حالانکه
جاپانی پیلے سے زیادھ پنک رنگ کے هیں
هدوانے کے اندر باهر کی بات هے که همیشه منافق هوتا هے
ظاهر اس همیشه مسلمان اور اندر همیشه اس کا
کبھی کیمونسٹ اور کبھی کیمونسٹ نما
یملے سے کسی نے پوچھا که که پاکستانی حکمران هدوانے کی کس قسم میں شامل کرو گے؟؟
اس نے کها
کچے هداوانے کی کیٹاگری ميں
اوپر سے مسلمان
اندر سے انگریز (سفید) ــ
منافق بھی اور فضول بھی
ساری قوم ان هدوانوں کو چیر چير کر دیکھتی ہے اور مایوس هوتی هے اور پھر ایک اور چیرتی ہے اور مایوس هوتی ہے که یه سب اندر سے انگریز هیں
کچے هدوانے
اور پاک مولوی ؟؟
چوها کھائے هدوانے
اندر سے خالی
بلکل خالی

بدھ، 17 اگست، 2011

سہاروں کے متلاشی

ایک سیانے نے بتایا تھا کہ
رن (عورت) اور بدمعاش سہارے تلاش کرتے ہیں
رن کا تو اب نے دیکھا ہی ہو گا کہ کیسے پہلے شادی کی صورت سہارا بناتی ہے اور پھر ساری عمر اس کو کوسنے دے دے کر کمزور کرتی ہے
یا
مار کھاتی ہے
اور بد معاش؟؟
کسی ناں کسی کے سہارے پر ہی چلتا ہے
که اس کی ذہنیت میں چمچہ گیری نامی کوڈ ڈال دیا ہوتا ہے بنانے والے نے ۔

اس نے کچھ لوگوں کو چمچہ بنا کر رکھنا ہوتا ہے اور کچھ کا چمچہ بن کے رہنا ہوتا ہے
رن بھی ہو اور بدمعاش بھی تو؟؟
اس کی مثال یوں سمجھ لیں
کہ

او سر جی ،کچھ ممالک کی سیاسی پارٹیوں کا معاملہ ہوتا ہے کہ
ان کی طبیت بد معاش رن کی طرح کی ہوتی ہے
ہر پارٹی
که ایسے ممالک کی فوج بھی ایک پارٹی ہوتی ہے
جوکہ
حکومت میں ہوں کہ باہر
ان کو امریکہ کے سہارے کی ضرورت ہوتی ہے
یا چین کے کی !!،۔

یا روس کی!۔

ایک خصم جائے دوجا آئے
سیٹ خالی ناں ہو
تعلیم کی یه پوزیشن ہے کہ مغالطے ہی مغالطے پڑھ پڑھ کر
سوچ یه ہے کہ
لیاقت علی خاں کو امریکہ نہیں جانا چاہیے تھا
روس یا چین چلے جانا چاہیے تھا
کہ ان کے اُس دورے کی وجہ سے اج امریکہ
بد معاش رنوں كا خصم بنا بیٹھا ہے
اگر جی لیاقت علی خان
روس یا کہیں اور چلے جاتے تو ؟؟
اس خصم کو کوسنے دینے تھے
کسی نے اپنے پیروں پر کھڑے ہونے کی بات
سوچنی ہی نہیں ہے
کہ
سوچ کے پر جل جاتے ہیں جی
اتنی اونچائی کی بات سوچتے ہوئے
کہ
خود انحصاری بھی کوئی چیز ہوتی ہے ،۔
امریکه بد معاش نهیں ہے ورنہ
امریکہ بھی ایک سہارے کی تلاش میں ہوتا

امریکه ایک معتبر ملک ہے جس نے سہارے کے نام پر داشتہ بننے کی خواہش مند
اقوام کو سہارا دیا ہوا ہے
اور اپنی قوم کی بھلائی کے لیے ہر کام کرتا ہے
اگرچہ کہ اپنی قوم کی بھلائی کے کام کے دوران داشتہ ممالک کے لوگ مر مرا بھی جاتے ہیں تو؟؟
ہُو کئیر؟؟؟
یه پاکستان ميں کیا رویہ ہے کہ
پاکستان کا ایک خصم ہونا چاہیے
امریکہ اگر جھولی میں جگہ ناں دے تو چین کی طرف دیکھو
یه کیا رنڈی کے جیسے رویه ہے کہ
سہارا ہونا چاہئے۔
قوم کو جھوٹ کی افیم کھلا دی گئی ہے کہ
ہمارا اسلام دنیا کا سب سے اچھا اسلام ہے

ہماری فوج دنیا کی سب سے بہادر فوج ہے
ہم دنیا کی پاک ترین قوم ہیں
کیونکه ہم
استنجا کرتے ہیں
اور جب
حقائق کی تلخی سے اگر کبھی ہوش ایا بھی تو
لیس دار هو جانے والی تشریف کو محسوس کرکے کہیں گے کہ
لسوڑا گر گیا تھا
فیر مغالطہ!!!ـ

اتوار، 14 اگست، 2011

لطیفے الفاظ

جشن آزادی مبارک؟؟
یعنی که جشن کی مبارک دی جارهی هے جی پاکستان میں
چلو جی آزادی کا پلیکھا هی ملا هے
کبھی ازادی بھی مل هی جائے گی
جشن تو اصلی والا ہے ناں جی
معیار چاهے جیسا بھی هو
اور کچھ لوگ ازادی کے مغالطے کا شکار هیں اور همارے جیسے آزادی کی امید میں
اور وه بھی مل جانے کی امید میں
ناں که حاصل کرنے کی کوشش میں

کیسے کیسے الفاظ استعمال کرتے هیں جی پاکستان میں

یاد گار پاکستان؟؟؟
یاد گاریں کن چیزوں یا انسانوں کی بنائی جاتی هیں ؟؟
جو گزر چکی هوں !!ـ
ہے ناں ؟؟
رب خیر کرے جی تہاڈی سمجھ دی

بم دھماکے میں کافی لوگ مارے گئے
کتنے لوگ مر جائیں تو کافی هوتے هیں جی ؟؟؟؟
میری نظر میں تو ایک بھی کافی نهیں هے
مرنا تو دور کی بات مجروح بھی کافی نهیں هے
میرے خیال میں کافی کا استعمال کافی سے زیادھ هو چکا هے
اب وی چھڈو جی

باقی کے الفاظ معنی
آہنی هاتھ
جو ان کو دیا هوا هے امریکه نے

نپٹنا
لمیاں هی پے جانا

اجازت ناں دینا
نکلتے هوئے پیشاب کو روکنے کی کوشش

محفوظ هاتھ
امریکی حکومت

قومی سلامتی
فوجی جرنیلوں کی جائیداد کا تحفظ

نظریاتی سرحدیں
فوج کے خرچے کا آڈٹ

عالم اسلام
چنده اکٹھا کرنے کا منتر

غیر ملکی هاتھ
مٹی پاؤ جی مٹی پاؤ

پاکستانی وزارت خارجه کے ایک افسر سے بات هو رهی تهی
که میں نے پوچھا
اپ کو علم هے که بلاگ کیا هوتا ہے؟؟
اس کا جواب تھا
هاں کیوں نهیں !!ـ
وهی ناں که جو لوگ فارغ بیٹھے کچھ
لختے رهتے هیں

ہفتہ، 13 اگست، 2011

خون کا عطیه کریں


بچبن ميں لوگوں سے سنا كه فلاں ادمى جوانى ميں پچهـ لگوا كر پاء پكا خون نكلوايا كرتا تها ـ
كتنے هى بوڑهے لوگوں كى پنڈليوں پر كٹ لگے كے نشان بهى ديكهے هيں كه جوانى ميں پچهـ لگوا كر خون نكلوايا كرتے تهے ـ
ميں سمجها كرتا تها كه ايسا كر كے يه لوگ اپنى جوانى ميں دوسروں پر اپنى بەادرى كى دهاكـ بٹهانا چاهتے هوں گے ـ مگر بقول ان لوگوں كے ميرے جسم ميں خون ذياده هوتا تها اور اگر ميں پچهـ نەيں لگواتا تو مجهے گرميوں ميں چنكاں(سوئياں چبهناں) پڑتى تهيں ـ
بەت بعد ميں جا كر سمجهـ آئى كه سرد ممالكـ كے لوگوں كے جسم ميں گرم ممالكـ كے لوگوں كى نسبت خون ذياده هوتا هے ـ
اور پنجاب ميں سرديوں ميں سخت سردى اور گرميوں ميں سخت گرمى هوتى هے اس لئے سرديوں ميں جوان ادميوں كے جسم ميں خون كے بڑه جانے كى بات سجهـ ميں اتى هے اور گرميوں ميں اگر يه جب تكـ كه قدرتى طريقے سے كم هو گا اس وقت تكـ چنكاں توں پڑيں گى ـ اس لئے پرانے زمانے ميں لوگ پچهـ لگوا كر خون كى مقدار كو متوازن كر ليا كرتے تهے ـ
نقطے كى بات
اگر هم لوگ اپنے پنجاب كى اس روايت كو اج كے دور ميں لوگوں كو اچهى طرح وضاحت كر ديں اور اس پچهـ لگوانے كو خون كا عطيه دے كر اپنے خون كى مقدار كو متوازن كرنے كا طريقه بتائيں تو ايكـ تو خون كا عطيه دينے كا رواج پڑے گا اور خون كے ذيادتى سے پيدا هونے والے بيماريوں كے روكـ تهام بهى هو گى ـ

یهاں جاپان میں خون ایک انمول چیز هے
انمول ؟
جس کا مول ناں هو
جی هان جاپان میں اپ ناں خون خرید سکتے هیں اور ناں هی بیچ سکتے هیں
هاں بلڈ بنک میں خون جمع کروا سکتے هیں جهاں سے ضرورت پڑنے پر اپ کو یا اپ کے خاندان کو واپس کیا جائے گا
لیکن اکر اپ نے بلڈ بنک میں خون جمع هی نهیں کروایا تو؟
اپ کو حادثے کی صورت میں دوسروں کے اکاؤنٹ سے خون کا قرضه دیا جائے گا
تاکه اپ کی جان بچ جائے
لیکن اپ پر اس بات کی معاشرتی ذمی داری بن جائے گی که اپ یا اپ کے خاندان کے افراد اس خون کی مقدار بن میں جمع کروائیں
ایک بهت هی اچھے تعلیمی نظام سے بننے والے جاپانی معاشرے میں خون کا عطیه دینا عام سی بات ہے
ریڈ کراس والوں کی بس کہیں بھی کھڑی هو گی اور لوگ اس ميں بے تکلفی سے آ جا رهے هوں گے
جیسے که
گزرتے هوئے یاد سا آ جائے
هاں یه کام بھی کرنا تھا چلو کرتے چلتے هیں
میں ایسے لوگوں کو ذاتی طور پر جانتا هوں که
هر چار مہینے بعد
چار سو ملی لیٹر خون دیتے هیں اور بیس بیس سال سے تیس تیس سال سے ایسا کرتے هی چلے جارهے هیں
لیکن جاپان میں خون لینے والوں نے بھی ایک معیار بنایا هوا هے که
جو لوگ یورپ میں یا امریکه میں مقیم رهے هیں
ان کا خون قبول نهیں کیا جائے گا
کیوں که
گائے کی منه کھر کی بیماری کو بہانا بنایا جاتا هے
کچھ سالوں میں تو اگر اب نے برطانیه میں ایک رات بھی گزاری ہو تو اب کا خون قبول نهیں کیا جائے گا
پاکستان ميں خون کا عطیه دینے والوں میں ایک تاثر پایا جاتا هے که اس سے کمزوری آ جاتی هے
لیکن یه بات ایک مغالطه هے
جس کو که اپنی پنجاب کی روایات کی روشنی میں بھی اجاگر کیا جاسکتا هے

جمعہ، 12 اگست، 2011

مرشد پاک کی افطاری

اوے مرشدا
سناؤ بڑی افطاری کراوائی هے
سنا ہے که بہت بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی تھی؟؟
اوئے گامیا
ایک تو جب مجھے مرشد کهتے هو ناں تو تمهارا لہجه ایسا هوتا ہے که جیسے گالی دے رهے هو!!ـ
بس جی مَر شد پاک ،ایسی باتوں کو پہچاننے کی صلاخیت هی اپ کے ایک اصل اور نسلی مراثی هونے کی دلیل ہے
باقی جی تم نے یه جو شجراھ بنایا هوا هے ناں
یه اسی طرح ہے
جیسے گوجرانواله سے بسیں وایه گھووئینکی سیالکوٹ جاتی هے ناں
تم وایه سمڑیال چلے جاتے هو
کون کون سے واے پا کر تم
آل رسول بنتے هو

اور یه جو بڑی تعداد میں لوگ افظاری میں شامل هوئے تھے کیا ان کی تعداد دس تک چلی گئی تھی که صرف نو هی تھے؟؟
اوئے توں فیر میری انسلٹ کر رہے هو!!ـ
چھڈو جی انسلٹ
آپ کو مرشد پاک کہ رهے هیں اور اپ کو انسلٹ لگ رهی هے
باقی اس افطار پارٹی کے لیے خیرات کس سے لی تھی؟؟
اوئے گامے کھوتے
ڈنگر بندے
بنده بن
مرشد پاک جب اپ مراثی تھے تب بھی خیرات لیتے تھے لیکن اس وقت اپ کا ایک فن هوتا تھا که لوگوں کا شجره پڑھتے تھے اور گانا سناتے تھے
لیکن اب جب سے مرشد پاک هوئے هو
گانا سنا چھوڑ دیا هے
اور شجره اپنا بنا لیا هے
لیکن
پیشه پہلے بھی اپ کا بھیک تھا اب بھی بھیک هے
اس لیے جی اصلی گل دسو
جی
مر شده پاک!!!ـ
چپ گستاخ!!ـ
بکواس بند کر
گاما بستی پروف بنا کہتا هی چلا گیا
چھڈو جی تسی تے عصه ای کر گیے هو
اپ کے بزرگ لوگ تو غصه نہیں کیا كرتے تھے
ویسے یه تو بتائیں که اپ کی افطاری میں شامل لوگوں میں سے کسی کا روزه بھی تھا که
یا وھ سوچ
که چلو جی روزه تو رکھتے نهیں هيں اگر افطاری بھی ناں کریں تو
بلکل
هی کافر هو جائیں

سوموار، 8 اگست، 2011

گنجا چاند

استاد دامن نے یه بات کچھ دھایاں پہلے لکھی تھی


اسیں اوس دیس هاں رهن والے
جتھے زور دن رات ہے موالیاں دا

حق دار نوں حق ناں ، ملن دھکے
کم کاج هندا ، ساکاں سالیاں دا

خطره دیس وچ لٹن دا هو ویلے
صعنت کار وڈا ، ایتھے گولیاں دا

دوده پی کے وی تے ایتھے ڈنگ مارن
کی لابھ ہے ، سپان نوں پالیاں دا

باڑ کھیت دی کھیت نوں کھائی جاوے
کی فن ہے جی اینہاں رکھوالیاں دا

لیکن جو لوگ اهل اقتدار هیں پاکستان میں
یه سارے ایک هی خاندان هیں
ان کو پیدا هوتے هی ان کے نسلی هونے کا بتا دیا جاتا هے
اور یه لوگ هر حال میں حکومت میں هوتے هیں
مارشل لا هو که نام نهاد جمهوریت
یه فوجی بے چارے بھی اس خاندان ميں شامل هونے کے لیے هی حکومت پر قبضه کرتے هیں
اسی لیے
ان خاندانوں
کےلوگوں کے متعلق دامن کا ایک شعر

ایتھے گنجا کتورا وی آکھدا اے
میں او چن نئیں جنہوں گرہن لگے

بدھ، 3 اگست، 2011

رزق کی ایڈجسٹمنٹ

رزق کے متعلق جهاں تک مجھے سمجھ لگی هے کچھ اس طرح هے که
میسر زیادھ هے
لیکن کھانے کی کچھ شرائط هیں نظام قدرت میں
انگریزی میں کلوری یا کیلری کہتے هیں
ناں جی جس چیز کو
ان کی مقدار پر بندے کی حیات کی لمبائی هے
یعنی که اگر ایک بندے کو روزانه اس کی گئی مشقت کی عوض میں دو هزار کلوری کی اجازت هے یا کہـ لیں که دوهزار کلوری کا نظام ہضم دیا گیا هے تو اس کو سال میں
سات لاکھ تیس هزار کلوری سے صحت نصیب هو گی

چار کروڑ اٹھتیس لاکھ کلوری سے ساٹھ سال زندھ ره سکے گا
لیکن اگر یهی بندھ اپنی مشقت سے ڈیرھ گنا کلوری لیتا ہے تو جی ؟؟
اس کو منع کرنے کے لیے نظام قدرت میں تنبیح اور سزا کا نظام هے
پہلا انتباھ هوتا ہے
کھٹے ڈکار
پھر گیس
پھر بلڈ پریشر
اسی طرح که
اگر بندے کو سمجھ هی ناں هو یا سمجھ کے باوجود
باز هی ناں آئے تو؟؟
هارٹ اٹیک
ختم شدھ
رزق ختم

لیکن سر جی قدرت
کنجوس نهیں هے
اس میں جس طرح رزق کی فراوانی هے
اسی طرح
کلوری کی مقدار بڑحانے کا بھی طریقه هے
یاکہـ لیں که
کلوری بڑھانے کی قیمت هے
باٹر سسٹم
کچھ دو کچھ لو
جی
کلوری بڑھانے کی قیمت هے
مشقت
چاهے کام ميں کر لو
یا اکھاڑے میں
یا پھر کسی
ایکسرسائیز کلب میں
مزے کے کھانے کھانا چاهتے هو تو مشقت کرنی هی پڑے گی
دو گھنٹے کی بے تحاشا ورزش
بندے کو پچاس سال تک
کلوری کے شمار مقدار سے بے نیاز کردیتی هے
اگر کبھی کسی نے روزانه دو گھنٹے ورزش کرنے والے کو اوپر دی گئی پابندیوں میں مبتلا دیکھا ہے تو مجھے بھی بتائے
هاں هو سکتا هے که کسی اور جرم کی سزا میں کسی اور پابندی ميں مبتلا هو
اج کا موضوع رزق کا ہے
هوتا یه ہے که ورزش کے باوجود بھی کچھ
اوپر نیچے کا امکان هو تا ہے اس لیے
ایمان والوں پر ان کے رزق دینے والے الله کی طرف سے روزے فرض کیے گئے هیں که
اس ایک مہینے ميں باقی کی کلوری کی ایڈجسٹمنٹ کر لو
سحری کھاؤ
سارا دن مشقت کر کے جسم ميں موجود چربی کی شکل میں موجود کلوریز کو جلا کر ختم کرو
شام کو معده چھوٹا چھوٹا سا لگے گا افطاری کے وقت
تو جی معدے کو تنگ ناں کرو
جتنا ڈلے اتنا هی ڈالو
پھر دانت صاف کرو سادا پانی پیو
ایک مہینه
اور پھر
پيٹ کچھ کم هوجائے گا
جسم هلکا سا لگنے لگے کا
ایمان والوں کو
فکر کرنے والوں کو
سمجھ رکھنے والوں کو
صبر کرنے والوں کو
هاں لیکن ایک
اکثریت سمجھ نهیں رکھتی

جمعہ، 29 جولائی، 2011

میرے عزیز هم وطنوں

ایگ پرانی کہانی هے که
کسی جگه ایک کفن چور رهتا تھا
جس کا نام تھا مشرف
جب وھ مرنے لگا تو اس نے بیٹے کو وصیت کی که
کوئی ایسا کام کرنا که لوگ مجھے اچھاکهیں
بیٹا بڑا فرمانبردار تھا
اس نے باپ کے مرنے پر خوش اخلاقی اور لوگوں کے کام انے کا سلسله شروع کردیا
تو لوگ
جن کے متعلق پنجابی کا محاورھ ہے که
داتری کوایک طرف اور زمانے کو دونوں طرف دنت هوتے هیں
کهنے لگے که بات تو کفن چور تھا لیکن بیٹا تو جی ولی هے ولی
بس جی اسی کو کهتے هیں
چنگیاں دے گھر برے تے بریاں دے گھر چنگے
اس پر فرمان بردار بیٹوں کو پریشانی هو گئی که اب کیا کریں
تو جی انهوں نے
اپنے زرداری نامی بھائی کو باپ کی نیک نامی پر لگا دیا
اس نے کیا کیا که
کفن چوری کے کام میں دھوم مچا دی
باپ تو کفن چوری کرکے لاش دفن کردیتا تھا لیکن
جی
اس باپ کے پتر نے یه کیا که لاش کو ایسے هی پڑا رهنے دیا
سارے زمانے ميں دھوم مچ گئی که
اس کا باپ اچھا آدمی تھا
پتر نالائق نکلا هے
پس ثابت هوا که فوج کو پہلے سیاستدانوں کو بدنام کرکے ملکی حالات کو خراب کرکے حکومت پر قبضه کرنے کے لیے راسته هموار کرنا چاهیے
تاکه میرے عزیز هم وطنوں سے شروع هونے والی تقریر کے لیے عوام ذہنی طور پر تیار هوں
جیسا که
لاطینی امریکه اور افریقه کے کچھ ممالک میں فوجی سربراھ کرتے هیں
اگر کوئی فوجی سربراھ ایسا ناں کرے تو فوج کی بدنامی هوتی هے
بہت اچھی بات ہے که پاکستان کی فوج سارے کام
قومی مفاد ميں کرتی ہے
ورنه
پته نهیں پاکستان کا کیا بنتا

اتوار، 24 جولائی، 2011

امریکه شریف

جب میں نے یهان جاپان میں اپنا سکریپ یارڈ کھولا تو اس کے لیے ایک بابی کیو پارٹی بھی کی تھی
اس سال فروری میں
طوفان باد بارں کے باوجود کوئی چالیس کے قریب دوست آ هی گئے تھے
حالانکه مجھےامید سینکڑوں میں تھی
بہر حال جو آئے ان کی مہربانی اور جو نهیں آئے
ان سے درخواست هے که دوبارھ بابی کیو کرنے والا هوں نیٹ پر خبر دیکھ کر
اس دن ضرور آئیں
تو جی اس دن
سارے بالغ اکھٹے تھے اور بالغوں والے لطیفے چل پڑے
اس بات کو چھڈو که
سنانے والا کون تھا
لیکن جی
یهاں کسی نے سوال کردیا که یه لطیفے اتےکهاں سے هیں
سب کا منه خاور کی طرف هو گیا که تسی دسو جی
اوئے بھلے لوکو اج کل سب کچھ امریکه سے اتا ہے
کمپیوٹر کی تکنیک سو لے کر ادب کی باریکیاں
کهانیاں ، حتی که منافقت کی مخالفت پر کمر بسته منافت بھی اپنی منافقت کے لیے انگریزی سے ترجمعه کرتے هیں جی
دوائیاں اور ڈاکٹر تک امریکه سے اتے هیں جی
بات کو کچھ اور بڑھاتے هوئے خاور نےیه بھی کها که
اج کے دور کا نظام اور فلسفه بھی امریکه سے هی اتا هے
تو
ایک صاحب نے فرمایا که
لیکن جی هم تو مسلمان هیں ناں جی

یملا بھی یهیں تھا
اکھڑ گیا جی
هتھے سے کون سا اسلام جی
سوکھا سوکھا (اسان) اسلام سارا امریکه سے ایا هے
اوئے روس کے خاف جنگ چھیڑ کر امریکه نے هی هم کو بتایا هے نان جی که یهاں سے اپ لوگوں کو شهادت نصیب هو سکتی هے اور شهید کے گھر والوں کو ڈالر
اور
شهید کو شهادت اور اس کے گھر والوں کو ڈالر پہنچانے کی ذمه داری پاک فوج نے اٹھائی هے اور اس لے پاکستان کے سارے رقبے اور کارنر پلاٹ
حساس ادارے کے افسروں کے هوئے هیں
اسان سا اسلام
جنت میں کنواری حوریں منتظر
بغیر روزے رکھے
سحریان اور افطاریاں کا کلچر کیا
کمهاروں نے دیا هے اوئے پاکستان کو ؟؟
یه سب امریکه نے بتایا هے
عمرے کے نام پر شاپنک کا کیا
امریکه کے سوا کسی نے راسته بتایا هے تو مجھے بھی بتاؤ
کسی نے روکا
که
بس یار بس
تو خاور نے ایک شعر فارسی کا سنایا که
زبان یار من ترکی ، من ترکی نمی دانم
چه خوش بودے ، گر بودے زبان یار من در دهن ما
یملے نے کها که اب تم امریکیوں کی حمایت میں ایرانیوں کو الزام دینے جا رهے هو لیکن
اب اس شعر کے دوسرے مصرے کا معنی نهیں بتا دینا
اس شعر کے دوسرے مصرح پر بات هوئی اور خوب هوئی سب بالغ هی تھے اس بابی کیو پارٹی ميں

تو پھر اس شعر کے متعلق کیا خیال ہے

در ہيبتِ شاہِ جہاں ۔ لَرزَد زمين و آسماں
اُنگُشت در دَنداں نہاں نيمِ درُوں نيمِ برُوں

اور اس شعر سے وابسطه مغل شهزادی کا قصه بھی تھا اور اس کے بات بدلنے کا انداز
که کیا خوب بات کو بدلا

حالانکه اس نے جو چیز ادھی اند ادھی باهر دیکھی تھی وه دانتوں میں دبی انگلی نهیں تھی

مغلوں کی ہم جنس پرستی
یا افیم خوری
یا
شراب نوشی
یا
اندرون خانہ جنسی تعلقات
کی باتاں بھی هوئیں
جن
کا که پاکستان میں نہیں پڑھایا جاتا
پاکستان ميں تو جی مغلوں کے اسلام کی
کی باتاں هوتی هیں جی
اسلام کی
ٹوپیاں بنانے والے
ٹوپی ڈراموں کی
باتیں هوتی هیں

سوموار، 18 جولائی، 2011

گرمی

جاپان میں بہت گرمی هے
اور میرا سکریپ یارڈ بھی هے
تاتے بیاشی میں
جهاں هر سال گرمی کی شدت
جاپان کی گرمی کا ریکارڈ هوتا ہے
اور اتوں

مرسیڈیز کا ائر کنڈیشن کام نهیں کررها
شائد گیس نهیں هے
مجھے گیس نکالنے کا طریقه هی آتا ہے ڈالنے کا نهیں
حالانکه گیس کی مشین بھی هے اور گیس بھی
کاروں کے ٹرانسپورٹ والے ٹرگ کا ائیر کیڈیشن بھی مرضی کا مالک هے
چاهے تو سارا دن ٹھنڈ ڈال دے اور چاهے تو
صرف هوا اور وھ بھی گرم اور حبس والی
کرین والے ٹرک میں ائیر کنڈیشن کام کرتا هے لیکن
کام کی نویت بھی هوتی ہے ناں جی که کس گاڑی پر کام جانا ہے
بس جی گرمی نے مت ماری هوئ هے
اور رمضان بھی انے ولا هے
اس دفعه کام لگتا ہے که نهیں هو گا
تے فیر گزارا کیسے هو گا؟
اے گل رزق دےمالک هون دا دعوا کرن والے رب کولوں پچھاں گے
پر جی اک
کل ہے
که
جب کی هوش سنبھالی ہے
ناں پیسے مکے نیں تے ناں کھانا
تو
فیر
رب دی گارنٹی پکی هوئی ناں جی

سوموار، 11 جولائی، 2011

بخدمت جناب امریکہ صاحب

جناب چوہدری امریکہ صاحب
سلاما لیکم
جناب میں نے سنا ہے کہ اپ پاک فوج کو دی جانے والی خیرات میں کمی کر رہے ہیں
جناب والا
کمی کیا کرنی ہے ، ساری ہی بند کردیں جی
خاص طور پر جی
جس رقم سے پاکستان کے اندر بندے مارنے کے لیے گولیان خریدتے ہیں ناں جی
اس رقم کو تو جی
یک مشت ہی بند کردیں جی
لکھاریوں کو گائیب کرنے والی گاڑیوں کے پٹرول کا خرچا بھی بند کردیں
اور جن ڈنڈوں سے مار مار کر لکھاریوں کو مسخ شدہ لاش میں تبدیل کرتے ہیں ناں جی
ان ڈنڈوں کی رقم جی اگر اپ کے پاس فضول پڑی ہے تو
جی یہ رقم اپ اپنی ہی فوج کو دے دیں
جی
زرا انگریزی چیخوں کی اواز بھی سنوا دیں جی دنیا کو جی
جوہدری صاحب میری اس درخواست پر جی
ولولہ انگیز اور والہانہ غورفرمائیں جی
درخواست گزار
اپ اور اپ کے سٹریجک پاٹنروں سے بہت ہی دہشت زدہ
ایک کمہار

اتوار، 10 جولائی، 2011

پاکستان کے اہل علم

پاکستان میں کسی کا کسی بڑے عهدے پر هونا
اس کے سیانے هونے کی دلیل نهیں هوتی هے
بلکه اس کی
سفارش کے تگڑے هو نے کی دلیل هوتی هے
جاپان میں خبروں کی سائیٹ کے ایڈیٹر اور جاپان انٹرنیشل پریس کلب کے صدر شاہد چوھدری صاحب کا فون آیا که
جمعه کی رات اتھ بجے ٹوکیو پہنچ جائیں
جنگ کے کالم نگار عرفان صدیقی صاحب کی دعوت کی هے
اس لیے میں جمعے کی شام ٹوکیو گیا
پینڈو شهر میں
اکے بکرو کے اسٹیشن کے قریب مرحبا ریسٹورینٹ ميں تقریب تھی
اهل علم سے ملاقات بندے کو صدیوں کے مطالعه گا چسکا دو جاتی هے جی
اہل علم سے ملاقات
لیکن جی
جس طرح که میں نے اوپر ذکر کیا ہے که
پاکستان میں کسی کا کسی بڑے عهدے پر هونا
اس کے سیانے هونے کی دلیل نهیں هوتی هے
بلکه اس کی
سفارش کے تگڑے هو نے کی دلیل هوتی هے
اس لیے
عرفان صدیقی صاحب سے ملاقات میں علم میں اضافه هو تو
لیکن
اس بات کے علم کا که پاکستان میں گزار کرنا کیسے هے
ان کی تقریر میں سب سے پہلے اس بات کا ذکر کیا گیا که جی پاکستان ميں انے والی هر حکومت دباؤ میں هوتی هے
اور تیس سال تو جی " انہوں " نے خود هی حکومت سنبھالے رکھ هے جی پاکستان کی ساتھ ساله تاریخ میں !!!ـ
لو جی نون لیگ خوش
لیکن یه بات سن کر میں نے سوچا که عرفان صدیقی صاحب
پاکستان پہنچ کر غائب ناں هو جائیں
لیکن جی
صدیقی صاحب نے
اس کے بعد پاک فوج کے ایک بڑے اور منظم ادارے هونے کی بابت بڑی وضاحت سے بتایا
اور ان کے پاکستان کے لیے ناگزیر جیسا هونا وغیرھ وغیرھ
اس کے بعد جی
پاکستان کے بڑے بڑے دماغوں
لیڈروں
اور پردھانوں کی سوچ کی انتہا کی بات شروع کردی جی
انهوں نے که پاکستان کے لوگ بڑے دل والے هیں اور چندھ وغیرھ دینے میں بڑے سخی هیں جی
اور میں نے اس کے لیے چندے کا کها تو
اتنا پیسه جمع هو گیا اور میں نے کسی کے لیے کها تو
یه هو گیا
ایک بیمار بچے کے لیے
کوشش کی وغیرھ وغیرھ
تقریر لمبی هی هوتی جارهی تھی
تو میں نے جی
ان کے منه سے دعائیه خواهش نکلتے هیں
اونچی آواز میں آمین کهنا شروع کر دیا
دوسری آمین میں کچھ اور بھی شال هو گئے اور تیسری امین پر صدیقی صاحب نے تقریر ختم کرنے کی مہربانی کی اور
کھانا شروع هوا
کھانا بڑا مزے دار تھا
گوشت پالک
تے
لونے چاول
سب لوگ تقریباً کھانا کھا چکے تھے میں صدیقی صاحب کی کرسی کے پاس گیا اور پوچھا که
کیا اپ کو علم ہے که
لوگ اردو میں بلاگ بھی لکھتے هیں؟؟
ان کا جواب تھا که جی نهں جی
مجھے علم نهیں هے
اردو کے انسائکلوپیڈیا کے متعلق علم هے ؟؟
جی نهیں جی علم نهیں هے
پھر میرے منه سے نکل گیا که
اچھا جی یعنی که جو لکھنے والے کسی میڈیا کے جغادری سے تعلق نهیں رکھتے
اپ ان کا علم هی نهیں رکھتے؟
تو ان کا جواب تھا جی مجھے ان باتون کا کچھ علم نهیں هے
تو جی یه حال هے
ان اهل علم کا
ان کو اج کی دنیا میں کیا هو رها هے
کتنے نئے ستارے طلوع هو رهے هیں
ان سیاستدانون کے حاشیه آراؤں
نے
اپنے سپانسروں کے مفادات کے گرد اتنے حاشیے لگائے هیں که
اج کے پاکستان میں ناں سیاست
هے ناں ادارے
ناں سسٹم ہے
ناں ڈسپلن
بس جی حاشیے هی حاشیے هیں
حالانکه تحریر هو گی تو اس کا حاشیه بھی اچھا لگے گا
یا تصویر هو گی تو اس حاشیه بھی هو سکتا هے
لیکن
جی
پاکستان میں تو پچھلی تین نسلوں نے صرف حاشیے دیکھے هیں
مغالطے هی مغالطے
اور مبالغے هی مبالغے

اس لیے اگر میری یه تحریر آپ کو خاور کی بونگی ماری لگے
تو
یاد رهے
که
خاور تو ایک عام سا بندھ ہے ناں جی
ناں که تگڑی سفارش سے کسی جغادری اخبار کا
کالم نگار

اتوار، 3 جولائی، 2011

ضرورت ہے

یهاں جاپان میں میں نے ایک اخبار شروع کی تھی کچھ سال پہلے
http://gmkhawar.net/
جس کو که مندرجه ذیل لنک پر بھی دیکھا جاسکتا هے
http://urdunetjapan.com/
اصل میں تو یه سائیٹ ، ایک طرح کے بیلٹن بورڈ کی طرح کی چیز بنانے کی کوشش تھی لیکن
پاکستان میں بیلٹن بورڈ کی افادیت تو کجا ، استعمال کا بھی کم هی لوگوں کو معلوم هے
اس لیے
اس سائیٹ کو اخبار نما بنا دیا گیا تھا
پچھلے کچھ ماه سے میں اس کو روزانه کی بنیاد پراپ ڈیٹ کرنے کی فرصت نهیں پا رها
اس لیے
میں چاهتا هوں که
انگریزی سے اردو میں ترجمعه اور ٹائپ کر سکنے والا کوئی ترجمان مل جائے
روزانه کوئی ایک هزار الفاظ کا ترجمعه کرنا هو گا اور ان کو اردو یونی کوڈ میں ٹائیپ کر کے مجھے میل کرنا هو گا
میں نے اپنے بجٹ میں اس کام کے لیے
دس هزار ین ماهانه رکھے هیں
جو که
دس هزار پاک روپیے بنتے هیں
دلچسپی رکھنے والے خواتین حضرات ای میل پر رابطه کریں
جس طرح پاک ملک کے اشتہاروں میں هوتا ہے که
رٹائیر فوجی کو ترجیع دی جائے گی
اسی
طرح
یهاں
اردو کے بلاگر یا فیس بکیوں کو ترجیع دی جائے گی
میں یه سائیٹ کسی منافع کے لیے نهیں چلا رها هوں
اور ناں هی میں اسے خدمت خلق کا الزام دے کر چندے کا خواهشمند هوں
اور ناں هی تعاون کے نام کر کس مخلص نیت بندے سے بیگار کروانا چاہتا هوں
میں یه سائیٹ
صرف اور صرف
اپنے شوق کے لیے چلا رها هوں
اس لیے میں جو افورڈ کر سکتا هوں اس کا لکھا ہے
بلاگر خواتین حضرات سے اپیل ہے که مشورھ دیتے رهیں
میرا پروگرام هے که اس سائیٹ پر هر روز ایک یا دو جاپان کی لوکل خبروں کا سمری نما ترجمعه هو
اور دو هی جاپان کی سیاست کی خبروں کا
اور
دو هی تکنیک کی خبروں کا
سائیٹ کا ٹمپلٹ بھی بدلنا ہے
میرے خیال میں جو ٹمپلٹ
talwandi.net
اس سائیٹ کا هے اس کو لگا دیا جائے

جمعرات، 30 جون، 2011

وقت اور حقائیق

آج عیسوی کے سال دو ہزار گیارہ میں جب کہ بلوچستان عملی طور پر
پاک فوج کا تختہ مشق بن چکا ہے
اور بلوچستان میں میں لوگوں کو گم کرکے اور پھر قتل کیا جارہا ہے
تو لا محالہ بلوچ بھی مزاحمت کر رہے ہیں
تو جی
یاد رہے
کہ
دوہزار چار کے اخر میں ایک فوجی افسر نے ڈاکٹر شازیہ نامی ایک پاکستانی معزز ڈاکٹر کوریپ کیا تھا
جس پر بلوچ سرداورں انصاف کا تقاضا کیا تھا
جس کا جواب پاک فوج نے یہ دیا کہ بکلٹی سردار نواب اکبر خان بگٹی کو قتل کرکے اس بات کا پروپیگیڈا کیا کہ یہ غدار تھا
اور پورے بلوچستان کو جہنم بنا کر رکھ دیا ہے
یہ لکھ دیا گیا ہے تاکہ سند رہے
کیوں کہ
اب
فوج ماحول کو بدل کر رکھ دے گی کہ
غیر ملکی سازش
ہنود یہود کا کام
بلوج سرداروں کی برائیاں
جس پر انے والے سالوں میں کسی کو یاد ہی نہیں ہو گا کہ اصل میں بلوچ لوگوں نے ایک معزز ڈاکٹر کی عزت خراب کرنے والے فوجی کو سزا کا مطابہ کیا تھا کہ فوچ نے سارے بلوچستان کو سزا میں مبتلا کردیا
جس طرح کہ
اس ویڈیو میں ایدھی صاحب ایک حقیقت بتا رہے ہیں
جس بات کا میں بھی گواہ ہوں کہ

یہی باتیں انہوں نے بندرہ سال پہلے بھی کہیں تھی
اگر یہ جھوٹ ہیں تو
بڑی یاد داشت ہے جی ایدہی صاحب کہ کہ
ایک ہی جھوٹ کی تکرار کئے جارہے ہیں

ہفتہ، 25 جون، 2011

ڈسپلن ہوتا کیا ہے

وار اون ٹیرر

یعنی کہ دہشت پھلانے کی جنگ

امریکہ نے یہ جنگ اپنی دہشت دنیا پر بٹھانے کے لیے شروع کی تھی

اور اس میں

سٹریجک پاٹنر تھا جی

پاک فوج اور دیگر

یہ دیگر کی ٹرم اپنے اردو کے اخباروں میں بڑی استعمال ہو ا کرتی تھی

چلو جی امریکہ بڑا ملک ہے اس کے کام بھی بڑے

اور پاک فوج ؟؟

انہوں نے پاکستان میں اپنی دہشت بٹھانے کی خواہش مکمل کر لی ہے

کیوں کہ میں ان سے دہشت زدہ پو چکا ہوں

کہ اب پاکستان میں چھوٹے شہروں کے صحافی بھی غائیب ہونے لگے ہیں

اور اٹھائے جانے کے بعد اپنا :محفوظ ہاتھوں : میں ہونے کا بتاتے ہیں

لیکن

سیاستدانوں کو مسلسل برا کہنے والی اس فوج کو ایک بات یاد نہیں تھی کہ پاکستان سیاسدانوں نے بنایا تھا ناں کہ

فوج نے


اور جی سیاستدانوں میں بھی بکٹیریا کی طرح اپنی بقا کی کوشش ہونی شروع ہو گئی ہے

کیسے؟

جی

اب جیسے فوج سیاستدانوں کو

ڈوائیڈ اینڈ رول کرتی تھی ناں جی

اسی طرح


اب فوج بھی اپس میں لڑے گی

میں نے بہت پہلے فوج کے کچھ افسران کو یہ بتایا تھا کہ

فوج کا زور توڑنے والے فوج کے اندر سے ہی پیدا ہوں گے

ایک کرنل اور دو برگیئڈیر تھے جی

انہوں نے پوچھا کہ

یہ کیسے ہو سکتا ہے

کہ ایک انتہائی ڈسپنڈ ادارے کے لوغ اپس میں لڑ پڑیں

میرا جواب تھا کہ

کیونکہ

عام فوجی کی تربیت پاکستان کے ساتھ وفاداری کی بنیادوں پر ہوتی ہے

اس لیے کسی ناں کسی دن ان ہی پاکستان کے ساتھ وفاداری کی خاصیت اود کر ائیے گی

اور پھر

ہووے کا دھک دھنا دھن

اور جہان تک اس ادارے کے ڈسبلنڈ ہونے کا تعلق ہے تو جی

یہ صرف ایک پروپگینڈا ہے

جس کا پول جلد ہی کھل جائے گا

جس ادارے کا سربراہ اگر دا لگے تودوسروں کا حق مار کر اپنی نوکری پکی ہی کرتے چلا جائے

او اس ادارے میں اور بھی ہوں گے جو دوسروں کا حق مارتے ہوں گے

ایک اسی بات سے اس ادارے کے ڈسپنڈ ہونے کا اندازہ ہو جاتا ہے

اور

آڈٹ وگیرہ ناں کروانا

تو جی

فوج کی طاقت کا اظہار ہے ناں جی

اور ڈسپنلنڈ لوگ

اپنی طاقت کا اظہار ۰۰۰۰۰۰۰۰۰۰۔

ہم دیکھیں گے کہ

فوج کے اندر عنقریب

پھوٹ پڑنے والی ہے

اور اس بھوٹ کا بیج ڈال رہے ہں جی سیاستدان


منگل، 14 جون، 2011

ہوشیار باش

I'm a professional killer and I kill for money.
But you are my people,
I'll kill you for nothing and free.

منجانب
اسحلہ بردار پاک ادارے

ہفتہ، 11 جون، 2011

دهشت گرد فوج

کچھ دن پہلے اپنے جرنل کی جانی کا بیان تھا جی بی بی سی پر
که

http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/05/110430_kayani_address_ha.shtml
پاکستان کی فوج کے سربراہ جنرل اشفاق پرویز کیانی نے کہا ہے کہ محض پاکستان کی خوشحالی کے لیے ہم اپنی عزت اور وقار کا کبھی سودا نہیں کریں گے

جس کے متعلق خاور کا خیال تھا که جرنل صاحب کے الفاظ معنی کچھ اس طرح هوتے هیں
قومی مفاد کے معنی هیں فوجی مفاد
نظریاتی سرحدوں کا مطلب هوتا هے
پاکستان کو قابو رکھنے کا جرنلوں کا نظریه اور اس کی حفاظت
جفرافیائی سرحدوں کا مطلب هوتا هے چھاؤنیوں کی جغرافیائی سرحد
محفوظ هاتھوں کا مطلب هوتا هے امریکه کا انتظام
اور اب تازه بیان ہے
که

http://www.bbc.co.uk/urdu/pakistan/2011/06/110609_corps_commander_meeting_nj.shtml

پاکستانی بری فوج سے سربراہ جنرل اشفاق پرویز کیانی کی صدارت میں ہونے والی کور کمانڈر کانفرنس میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کے لیے فوجی سے زیادہ معاشی مدد زیادہ ضروری ہے۔
خاور کے خیال میں امریکه جو قرضه دیتا هے اس کا اسلحه خریدنے کا مشوره نما حکم بھی دیتا هے اس لیے کیش میں مدد کم ملنے کی وجه سے جرنل صاحب امرکه سے کیش کو کیش کی صورت ميں عطا کرنے کی درخواست کر رهے هیں تاکه یه کیش کسی باهر کے ملک میں رکھ کر اپنے پیش رو جناب سید ناں شرفو صاحب کی طرح لندن میں مہنگی وائین اور چینی مرغابیاں کھا کر ڈکار مارے جائیں
لیکن
لوکو کچھے کس لو
ورنه ٠٠ وج جانے والی هے

اپنی فوج
جو که اپنوں کو تقل کرنے کی ماهر هے
اور اپنی پرورش کرنے والے ملک کی دشمن هے اس نے
کور کمانڈر کی میٹنگ میں " بعض متعصبانہ حلقوں کی جانب سے مسلح افواج کو نیچا دکھانے کے بدقسمت رجحان" کو انجام تک پہنچانے کا جو فیصله کر لیا ہے
بس جی سر جی
میں نے پاکستان کوئ نئیں جانا
جب تک که یه امریکه اور پاک فوج کی دهشت بٹھانے کی جنک جاری هے
وار اون ٹیرر
یعنی که دهشت بٹھانے کی جنگ میں امریکه اور پاک فوج کی ایک کامیابی کا میں ضرور اقرار کروں گا
که پاک فوج کی دهشت میرے دل پر بیٹھ گئی ہے
اور میں انتظار کروں گا
که
وه
معصوم اور چھوٹا سا بچه جو سڑک کنارے کھڑا
فوجی ٹرک کو دیکھ کر
فوجی جی سلام!!!!!ـ
کا نعرھ لگاتا تھا
کب فوجی ٹرک پر پتھر اٹھاتا ہے

Popular Posts