جمعرات، 11 اپریل، 2013

لطیفے

بھٹی نے بٹ کو بتایا
کہ
اج  ہماری بکری نے انڈھ دیا ہے۔
بٹ ھیرانی سے  اچھل ہی بڑا۔
اوئے بھوتنی کے  ، بکری اور انڈہ ؟؟
ہاں !! بھٹی نے بٹ کو بتایا کہ
ہم گریٹ لوگ ہوا کرتے ہیں ۔
ہم نے اپنی مرغی کا نام بکری رکھا ہوا ہے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حیرانی کی انتہا کیا ہے؟؟
جب اپ دو بندوں کو ٹوائیلٹ سے نکلتے دیکھیں
کہ ایک نالہ باندھ رہا ہو
اور دوسرا !
انگلیاں چاٹ رہا ہو!!!۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 ساقو بھٹی کی بیوی ،ڈاکٹر کے پاس "پوٹی" ٹیسٹ کے لئے گئی۔
ڈاکٹر نے اس کو بتایا کہ
یہ پوٹی نہیں ، حلوہ ہے ! حلوھ!!۔
ہائے میں مر گئی ڈاکٹر صاحب کیا میں ایک فون کر لوں؟
کیوں کہاں کرنا ہے؟
" اٗن " کو بتانا ہے کہ
پوٹی
ٹفن میں چلی گئی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماں کون ہے؟
یہ ماں ہی ہے جو اپنے بچوں صبح اٹھا کر کہتی ہے۔
اٹھ جاؤ کنجرو ۔
گیارہ بجھ رہے ہیں ۔
کتوں کی طرح پڑے رہتے ہو، تمہارے باپ نے چار پانچ نوکر نہیں رکھے ہوئے
جو تمہیں ناشتہ بنا کر دیں ۔
زندگی حرام کر رکھی ہے کمینوں نے۔
۔
۔
۔
ماں کی ہر بات پر جذباتی نہیں ہو جانا چاہئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بٹ نے بھٹی سے پوچھا
کہ
عقل بڑی کہ بھینس؟
ساقو بھٹی نے بڑا سوچا لیکن سمجھ نہیں آئی
لیکن اوپر سے ہو کر کہتا ہے
اوئے بٹا توں مینوں پاگل سمجھتا ہے
دونوں کی دیٹ اف برتھ تو بتائی ہی نہیں ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ٹیسٹ دے کر  پریشان لڑکا
رات کو چھت پر ٹہل رہا تھا
کہ
اس نے ٹوٹا ہوا ستارہ (شہاب ثاقب) کو دیکھ کر ٹیسٹ میں پاس ہونے کی دعا مانگی
تو
پاس کھڑے اس دوست نے کہا کہ
دنیا چاند پر پہنچ گئی ہے
سائینس نے اتنی ترقی کر لی ہے لیکن
تم رہے
کمہار کے کمہار ہی !!!۔
لڑکے نے جواب دیا
کہ
اب سائینس نے ترقی کر کے ٹیسٹ ٹیوب بی بی پیدا کر لی ہے
تو
کیا
تمہارے خاندان میں شادی کا رواج ختم کر دیا گیا ہے کیا؟؟

کوئی تبصرے نہیں:

Popular Posts