بدھ، 15 اگست، 2012

سازشی ذہن


ایک تو جی یہ یہودی لوگ  لگتا ہے کہ کچھ زیادہ ہی" ویلے لوک" ہوتے ہیں
پاکستان کی بربادی کے لیے دن رات کام کرتے رہتے ہیں
پاکستانیوں سے جب بھی بات کریں پاکستان کی ہر خرابی کی جڑ امریکہ اور یہودی کو بتاتے ہیں
کچھ کچھ ہندو کا بھی قصور ہوتا ہے لیکن
بلکل ہی پڑوس میں ہونے کی  وجہ سے ہندو اتنا بھی سیانا نہیں لگتا
اس لیے سارا الزام یہودی اور امریکہ پر اتا ہے
یہودی بہت سیانا ہے
اس نے دنیا کو توحید کا تصور دیا
اور پھر اس پر عسائیت اور اسلام نامی مذاہب بھی  دنیا نے استعمال کیے
هو سکتا ہے که کوئی اس سے متفق ناں هو
لیکن یه حقیقت ہے که اسلام اور عسائیت  یہودیت کی هی بدلی هوئی شکلیں ہیں
جس طرح که ہمارے علاقے کی پیدائش ،هر دھرم ہندو دھرم کی بدلی هوئی شکل هوا کرتا هے
پہلے بده  اور سکھ دھرم کا نام لیتے ہیں پھر
بریلوی دھرم کا نام آتا ہے
دنیا کو بہت زیاده متاثر کرنے والے  مذاہب !۔ ان یهودیوں کے ہی بنائے هوئے هیں جی۔

لیکن اسلام نے خود کو دین هونے کا دعوی کیا
جی هاں دین
یعنی سسٹم
لیکن یه سسٹم  جیسا بھی ہے ۔ اس باتیں ہوتی ہی رہتی ہیں ۔
لیکن

اب جو زمانہ جا رها هے
یه زمانہ هے جی
نئے دھرم کا
جس کو اپ کیپٹل ازم یا  سرمایہ دار نظام کہہ لیں یا
اج کا دین بھی کہہ سکتے ہیں ۔
یه دین ایک مکمل ترین ضابطه حیات ہے
اس ميں زندگی گزارنے کے سارے اصول پائے جاتے ہیں
سڑکوں کی تعمیر سے لے کر سڑکوں پر چلنے تک کے ضوابط موجود ہیں ، تو
رقم کے لین دین سے لے کر خرچ کرنے تک کا نظام ہے ۔
بنکنگ کے نظام اور مال کی ، دنیا بھر ميں ترسیل کا نظام بھی بہت منظم اور موجود  ہے
انصاف کا نظام هو که ، فوج کا نظام !۔ اس وقت دنیا میں اسی دین ( کیپٹل ازم ) کے نظام ہی چل رهے هیں
اس دین کو پورا پورا اپنانے والے سارے ممالک خوشحال ہیں ۔
اور ان ممالک کا معاشره جنت نظیر بنا ہوا  هے
لیکن جو ممالک اج بھی انارکی اور بدحالی کا شکار ہیں
ان کی اس بدحالی کی وجہ منافقت ہے۔
یه لوگ اج کے دین ( کیپٹل ازم ) میں پورے پورے داخل نہیں ہیں ۔
یه لوگ عدالت کا نظام
سڑکوں کا نظام
بنکنگ کا نظام
یا جو جو بھی نظام  دین ( کیپٹل ازم )  ميں پائے جاتے ہیں ان کو اپناتے بھی ہیں اور
اور ان کو برا بھی کہتے ہیں
اور اس ساری منافقت کے پيچھے یهودی کی سازش ہے
که یهودی نے
کچھ ایسا چکر چلایا ہے که
کسی بھی مسلمان ملک میں کوئی طاقتور بنک بننے میں رکاوٹ  دالنے کے لیے۔
 یهودی نے سازش کر کے مسلمان ملکوں کے باشندوں کو بے ایمان کردیا هے۔
 که یه لوگ امانت میں خیانت کرنے والے بن چکے ہیں ، اس لیے خود مسلمان لوگ بھی ، اسلامی بنکوں ميں اپنی دولت کو محفوظ نهیں سمجھتے
اسی طرح یهودی نے مسلمانوں ميں جھوٹ بولنے کی عادت ڈال دی ہے ۔
اب تو یه یه عادت کچھ ممالک میں ، اتنی پختہ ہو گئی ہے ۔
که لوگ خود سے بھی جھوٹ بول رہے هوتے ہیں
پھر کام چوری کی عادت بھی یهودی کی سازش ہے
اسی طرح کی کئی بری عادات هیں جو یهودی کی سازش سے مسلمانوں ميں شامل هو چکی ہیں
لیکن یه ہوا کیسے؟؟
اس بات کا مجھے بھی علم نہیں ہے
کیونکه میں بھی مسمان هوں ،اور یهودی کی سازش کی وجہ سے میں بھی اتنی سوچ کا مال نهیں رها هوں که یهودی کی اس سازش  کی تفصیل سمجھ سکوں ۔
کہ
مسلمانوں میں اخلاقی بد حالی کس طرح سے داخل کی گئی ۔

مجھے تو سمجھ نہیں لیکن
گاما پی ایچ ڈی جو که مسلمان بھی کم ہی هے
کافر بھی نہیں ہے
گامے کی پی ایچ ڈی کی ڈیفینیشنز ناں پوچھیں تو اچھا ہے
پرزه ہیوی ڈیوٹی جیسا کوئی فقره کہتا ہے ۔
جس میں پرزے کی جگه انگریزی کا لفظ استعمال کرتا ہے
گاما یہودیوں کو گالیاں دیتا هے اور یہودیوں کی سازش کی بات کو مانتا ہی نهیں هے
سازش کے رشتے ملانے لگتا هے اسلامی لوکاں کے  اور خواتین کے
اور مجھے اور اسلامی لوکاں کو بیوقوف اور احمق اور بہت کچھ کہتا هے
نئیں پتہ لگتا که گاما یهودی کے خلاف ہے که اسلام کے خلاف
نمازں ساریاں پڑھتا ہے ۔
اور اسلام کو مانتا ہی نهیں
پاسپورٹ پاکستانی ہے
اور پاکستان کو آزاد ملک ہی نہیں  سمجھتا
بس جی پاگل هے ۔
گاما بھی یهودیوں کی سازش کا شکار ہو چکا ہے اور اس کو بھی علم نهیں هے

لیکن میں بھی کبھی کبھی سوچتا هوں که
یهودی اینے ای ویلے نیں  تے فیر امیر کیوں نیں ؟؟

7 تبصرے:

fikrepakistan کہا...

خاور بھائی کتنی محنت سے یہ نام نہاد مذہبی لوگ اپنے پٹرھے جاہلوں کا دماغ بناتے ہیں یہودی و نصاریٰ کے خلاف اور آپ نے ایک ہی پوسٹ میں سب کا دماغ ہی الٹ کہ رکھہ دیا، یہ نا انصافی ہے۔

گمنام کہا...

خاور بھائی آپ بھی ایک پلڑے کی خرابی بیان کر کے دوسرے پلڑے میں جا بیٹھے ہیں۔ میرے خیال میں بات ہمیشہ کچھ بیچ کی ہوتی ہے۔ یہودیوں کا ہمارے مثائل سے شاید کچھ لینا دینا نہ ہو لیکن اس بات میں مجھے کوئی شک نہیں کہ ان کے اثر رسوخ کو کوئی چیز بھی دنیا میں مات نہیں کرتی۔آپ اس سے ہی اندازہ کر لیں کہ ہر کوئی ایران پر چڑھا آرہا ہے لیکں اسرائیل کاے نیوکلر پروگرام کے پارے میں کوئی چوں تک نہیں ہے۔ عادل

Asad Habeeb کہا...

نہیں جی! یہودی کہاں سازشیں کرتے ہیں سازشوں کا کام تو آج کل پاکستانیوں کے سپرد ڈال دیا ہے انہوں نے۔وہ ہم سے کب ڈھکے چھپے ہیں۔ جب ہم برباد ہوتے ہیں تو وہ ماتم کرتے ہیں اور بہت غمگین ہوتے ہیں۔ ان کی ایجنسیاں یہاں کام کرتی ہیں تا کہ کوئی علیحدگی پسند پاکستان کی سالمیت کو نقصان نہ پہنچا دے

Dohra Hai کہا...

جِس طرح شیطان آج کل آرام کرتا ہے کیونکہ کہ اُس کے ٹرینڈ بندے اُس کے کرنے کے کام بخوبی ادا کرے ہیں اسی طرح یہودی کو بھِی اب کُچھ کرنے کی ضرورت نہیں ہے کیونکہ خود کو خراب کرنے کے لئے خود ہم ہی کافی ہیں

افتخار اجمل بھوپال کہا...

امید ہے کہ آپ نے سنی ہوں گی دو کہانیاں
ایک کہانی ۔ شیطان سے کسی نے کہا کہ "تم زمین پر فساد کیوں ڈالتے ہو؟" اس نے جواب دیا "میں تو کچھ نہیں کرتا ۔ سب کچھ انسان خود ہی کرتا ہے اور نام میرا لگا دیتا ہے"۔ پوچھا "وہ کیسے؟" تو شیطان نے شہد میں انگلی لگائی اور ایک انسان کی گردن پر پیچھے شہد لگا دیا ۔ ایک بھڑ آ کر اس پر بیٹھ گئی ۔ ایک اور انسان جو پیچھے کھڑا تھا بھڑ کو ہٹانے لگا تو بھڑ نے پہلے والے کی گردن پر ڈنک مارا ۔ اس نے سمجھا کہ پیچھے والے نے سوئی چبھوئی ہے تو اس نے اسے بُرا کہا ۔ بات بڑھی اور دونوں گتھم گتھا ہو گئے ۔ شیطان بولا "دیکھ لو ۔ انہیں کوئی میں نے لڑنے کا کہا ہے ؟"۔

دوسری کہانی ۔ ایک آدمی کہنے لگا کہ "مجھے اگر عزرائیل نظر آ جائے تو میں دیکھوں گا کیسے وہ میری روح نکالتا ہے ۔ ایک رات خواب میں عزرائیل نے اسے اپنی شکل دکھا دی ۔ ایک شام وہ آدمی لیٹا ہوا تھا کہ دیکھا کہ عزرائیل سرہانے کھڑا ہے ۔ وہ جلدی سے اُٹھ کر پوانتی یا پواندی (پاؤں کی طرف) ہو گیا تو دیکھا کہ عزرائیل وہاں موجود ہے ۔ وہ پھر سرہانے کی طرف ہو گیا ۔ اس طرح تین چار بار کیا تو گھر والوں نے سمجھا کی دماغ میں کوئی خرابی ہو گئی ہے ۔ اُنہون نے اُسے چارپائی کے ساتھ باندھ دیا تو وہ عزرائیل سے بولا "میں نے تمہارے قابو تو نہیں آنا تھا ۔ گھر والون نے بادھ کر مروا دیا ہے"۔

عبدالروف کہا...

مسلمانوں کے خلاف امریکی ومغربی ممالک کے نفرتی پروپیگنڈے سےان ممالک میں عیسائی انتہا پسند گروپ وجود میں آرہے ہیں، جیسے جرمنی میں پرو ڈوایچ لینڈ نامی گروپ جس نے عدالت سے آزادی اظہار کے نام پر متنازع خاکے بنانے کی اجازت حاصل کرلی ہے، جبکہ ہولو کوسٹ کا مذاق اُڑانے پرجرمنی ہی کی عدالت نے ممبر پارلیمنٹ کو 6ہزار یورو جرمانہ اور 8 ماہ کی معطل سزائے قید سُنائی ہے ۔۔اب اس کیس میں آزادی اظہار کا معیار کیوں بدل گیا ؟؟۔۔اس طرح کے یہودیوں کے حق میں کئے گئے جانب دارانہ فیصلوں نے اس دنیا کو جہنم بنایا ہُوا ہے۔

نقل شدہ : http://universe-zeeno.blogspot.com/2012/08/blog-post_17.html

عبدالروف کہا...

یہ لیں جی ایک اور ربط بھی پڑھ لیں اور اپنی جان مزید جلایئں : http://www.snopes.com/photos/technology/insectdrone.asp

Popular Posts