جمعہ, مارچ 17, 2017

جاپان اور معدنی دولت

جنگ کے بعد کے جاپان ، یعنی جنگ عظیم دوم کے بعد !،۔
جاپان نے جو معاشرت ترتیب دی ہے اس کی نظیر اقوام عالم کی تاریخ میں نہیں ملتی ،۔
سو سال کی تعلیم کو اس ترقی کی اساس کہوں گا
اور
معدنی دولت  کو اپنی منظم محنت سے ترقی کی معراج بنا دیا ،۔
معدنی دولت   کوئلہ اور سیمنٹ   ،جی ہاں جاپان کوئلہ اور سیمنٹ  کی معدنی دولت سے مالامال ہے ،۔
جنگ کے بعد چالیس اور پچاس کی دھائی  جاپان  آبادی کی اکثریت کان کنی میں مصروف تھی ، اور باقی کی لوہے کو  ڈھالنے میں لگی ہوئی تھی ،۔
زلزلوں کی سرزمین جاپان  میں فلک بوس عمارتیں  لوہے اور سیمنٹ   انبار ہیں ،۔
یہاں گنماں کین کے پہاڑوں میں اتنا سیمنٹ ہے کہ جاپان کی سو فیصد ضرورت کو پورا کرتا ہے ،۔
گنماں کی پہاڑیوں سے زمین دور ٹرینیں سائیتا کین کے کوما گایا شہر تک چلتی ہیں ،۔
کوماگایا  جہاں جاپان  ایک عظیم سیمنٹ فیکٹری کام کر رہی ہے ،۔

پاکستان ، بھی ان دو چیزوں کوئلہ اور سیمنٹ کی دولت سے مالا مال ہے ،۔
لیکن عربوں کی سنت ہے کہ تیل کی دولت مالامال لیکن ریفائنری کی تکنیک میں نا اہل ،۔
پاکستان  بھی عربوں کی سنت پر عمل پیرا نظر آتا ہے
کہ
کوئلے اور سیمنٹ کو استعمال کرنے کی تکنیک سے نااہل،۔
فارن کی کمائی سے لاکھوں ڈالر پاکستان بھیجنے والا ایک محنتی شخص جب دس سال بعد پاکستان گیا تھا
تو اس نے دیکھا کہ اس کی کمائی ساری کی ساری ضائع ہو چکی ہے ،۔
گھر پر وہی  برتن ، وہی چمچ اور وہی رضائیاں تھیں جو وہ چھوڑ کر گیا تھا ،۔
ابا جی نے اس کو بتایا کہ
جو بھی کاروبار کیا اس میں نقصان ہوا 
بس جی میری قسمت ہی خراب تھی ،۔پاس ہی گاما کھڑا تھا
کہنے لگا
چاچا تیری قسمت نئیں ،دماغ خراب اے ،۔
آپ کا کیا خیال ہے ؟
پاکستان کے ارباب اقتدار کی بھی قسمت ہی خراب لگتی ہے ،۔

کوئی تبصرے نہیں:

Popular Posts