جمعرات, فروری 23, 2017

حکومت کون ہے ؟

حکومت ؟ یہ حکومت کیا ہے ؟
قائد اعظم کو خراب ایمبولینس !!!۔
راول پنڈی سازش ،افشاء ہو گئی تھی اس لئے سازش کہلوائی ، کمپنی باغ میں جب واقعی لیاقت علی قتل ہو گئے تو؟
قاتل نامعلوم ،۔
کشمیر میں قبائلی داخل کر کے جونا گڑھ اور حیدر آباد میں انڈیا کی مداخلت کو جواز فراہم کر دیا ،۔
ایوب نے حکومت سنبھال لی ، ملک پر قبضہ ، یہ قبضہ واگزار ہو ہی نہیں سکا اس کے بعد کی ہر حکومت فوج کی حکومت ہے ،۔
الیکشن میں ایوب نے خود کو سلیکٹ کیا
اور مادر ملت فاطمہ جناح ہار گئیں ،۔
سارے ملک میں “جھرلو” پھیر دیا ۔
 الیکشن کے نام پر سلیکشن ،۔

باری باری ،۔
اس دوران کی بات رہ گئی کہ ایوب سے ملک کا قبضہ یحی خان نے لے لیا یعنی فوجی سے فوجی نے ،۔
اس کے دور میں الیکشن کروائے گئے
لیکن مجیب الرحمان کی بجائے سلیکشن بھٹو صاحب کی حکومت بنائی گئی وہ بھٹو ایوب کو ڈیڈی کہتا تھا ،۔
ملک ٹوٹ گیا ، الیکٹ مجیب نے بنگلہ دیش میں حکومت سنبھال لی اور سلیکٹ بھٹو نے  پاکستان کی ،۔
اقتدار فوج کے ہاتھ میں تھا ، اقتدار الیکٹ لوگون کو منتقل نہیں کیا ، ملک ٹوٹ گیا الزام سیاست پر رکھ دیا ،۔
موجودہ پاکستان کی آبادی کی ننانوے فیصد آبادی کو ملک ٹوٹنے کے اسباب کا ہی علم نہیں ہے ،۔

پھر جنرل ضیاء " خود فوجی " آ گئے ،۔ ان کی حکموت کو مذہبی سہارا جماعت نے دیا ، سیاسی سہارے کے لئے شریف پیدا کئے گئے ،۔
سیاست کی نس بندی کر دی گئی ،۔
تعلیمی اداروں میں سایسی سرگرمیاں ختم کر دی گئیں
لیکن

کالج یونورسٹیوں میں قوم کی بیٹویں کی عصمت اور قوم کے بیٹوں کے کردار کے محافظ پیدا کر دئیے گئے جن کے نزدیک مخالف سٹوڈنس کی ٹانگیں تورنا ہی امت مسلمہ کی خدمت قرار پایا ،۔
معاشرے میں سے سیاست  کا بیج ہی ختم کر دیا گیا
سیاسی طور پر خصی قوم میں ستر کی دہائی کے بعد کوئی سیاست دان پیدا نہیں ہوا ،
اگر کوئی سیاست کے نام پر آگے آیا بھی تو وہ جی ایچ کیو کے گملوں میں اگا ہوا بونسائی ہی ایا ۔

پھر مشرف صاحب آ گئے ، انہوں نے چوہدری متعارف کروائے ،۔
مجھے یہ بتائیں کہ حکومت ہے کیا ؟
سب کے سب یا تو خود فوجی ہیں یا فوجیوں کے لائے ہوئے لوگ !،۔
تو حکومت کیا ہوئی ؟
ہم لکھنے والوں کو پہلے اپنا ذہن واضع کرنے کی ضرورت ہے کہ
حکومت ہے کیا ،۔ اداروں کا کردار کیا ہونا چاہئے اور اور کیا ہوا جا رہا ہے ؟
غلط کیا ہے صحیح کیا ہے ،۔
اس بات کا ادراک کرنے کے بعد ہمیں صرف اور صرف اپنے ملک کے ساتھ مخلص ہو کر پارٹیوں ، اداروں کے معاملے میں انتہائی غیر جانبدار ہو کر لکھنا چاہئے ،۔
روٹی روزی کی مجبوریاں بندے کو مجبور کر دیتی ہیں ،۔
اس کے لئے اپنی یونینز مضبوط کرنے کی ضرورت ہے،۔
یونییز کی مضبوطی کا مطلب ہے کہ ہمیں ٹیم ورک کی تربیت اور تعلیم کی ضروت ہے
یونین میں ہر بندہ صدر ہی نہیں بنے ، بلکہ مینجر ، ورکر ، اور دیگر کئی عہدے بھی ہیں اور ہار جانے کی صورت میں خود کو سابق صدر کہلوانے میں بھی کوئی ہتک نہیں ہے ،۔

اس کے لئے بھی انے والی نسلوں کا اگر خیال ہو تو ؟
ایسے معاشرے کی تعمیر کے لئے ذہن سازی کی کوشش ہونی چاہئے ، جس میں ادارے اپنا اپنا کردار نیک نیتی سے ادا کریں عدالتوں کو مضبوط کریں تاکہ انے والی نسلیں ہی سہی ، محفوظ ماحول میں اسان زندگی گزار سکیں ۔۔


کوئی تبصرے نہیں:

Popular Posts