بدھ، 15 جون، 2005

ہور چوپو!!ـ

اس لطيفے كو پنجابى ميں هى پڑهنے ميں مزا ہے ـ اس لئے پنجابى ميں ہى نقل كر رہا هوں ـ يه صرف ايک لطيفه هى نهيں ـ پاكـ فوج كے پاكستان كے ساتهـ سلوكـ کی بپتا بھی ہے ،،،،


اک سردار جی دے پریوار وچ چار پنج بھرا سن۔
 اک دن بہہ کے صلاح مشورا کرن لگے۔
پئی ایتکی کیہڑی کیہڑی پیلی وچ کیہ کیہ ویجنا چاہی دا اے۔
 وڈے صلاح دتی پئی مڈھلا کلا جھونے ۰مونجی) لئی۔
 اگلا کپاہ(کپاس) لئی تے اُہنوں اگلے چاچے کیاں دے نال والے کلے چ کماد دے بروٹے سٹنے چاہی دے نیں۔
اک نے اگارا بھردے ہوئے آکھیا۔
پئی چاچے کیاں نے تاں کماد نوں اجاڑ پاء دینی ایں۔ اک ہور بولیا اِہدا علاج تاں اج ای بلکہ ہنے ای کر لیندے آں۔
چلو اٹھو آئو میرے نال۔ سارے بھرا ڈانگاں پھڑی چاچے کیاں ول ٹر گئے۔
اگے اُہ اپنے اپنے کمیں کاریں رجھے ہوئے سن۔
اِہناں جاندیاں ای آدیکھیا نہ تائ۔ ڈانگاں اگریاں تے داڑ داڑ ورھویناں شروع کر دتیاں۔
کسے نوں کھرلی وچ سٹیا۔
کوئی ویڑھے وچ ڈگا پیا۔
تے کوئی اگے لگ کے بھج وگیا۔
پر بہتیاں دے کھنے کھل گئے۔
چاچے نے بڑا پچکار کے ترلیاں نال پچھیا!!'
پئی تہانوں کیہ وگیاں؟؟
اگوں جواب ملیا۔
ہور چوپو۔
تہانوں چپا لیندے آں گنّے!!۔
لوکاں وچاریاں نال تاں ہور چوپو والا ای ہتھ ہو رہیا اے۔
کہ
کماد اجے بیجیا وی نئیں تے چاچے نال ڈانگو ڈانگی۔
 

4 تبصرے:

Hypocrisy Thy Name کہا...

اگر آپ عنوان لطیفہ کی بجائے ہور چوپو لکھ دیتے تو پڑھنے میں آسانی رہتی ۔
یہ ہور چوپو والا عمل پرویز مشرّف نے امریکہ کے حکمرانوں سے سیکھا ہے ۔ انہوں نے عراق اور افغانستان میں کیا کیا ہے ؟

rai کہا...

ھاھاھا۔ اسی سے کچھ ملتا جلتا قصہ مجھے یاد آیا جو کچھ یوں ھے۔
ایک مرتبہ ایک پڑھا لکھا شخص دیہات میںکچھ سرداروں کے بچوں کو پڑھانے آتا ھے۔اسے اپنے پڑھا لکھا اور شہری ھونے کا بڑا زعم ھوتا ھے۔ سرداروں کی اولاد کی کم عقلی سے تنگ آ کر وہ ایک دن انہے پیٹ ڈالتا ہے ۔اب اس کے خیرخواہ اسے بڑا سمجھاتے ھیں کہ سردار تجھے زندہ نھیں چھوڑیں گے اس لیے ان کے آنے سے پہلے گاؤں سے فرار ھو جاؤ۔ لیکن وہ کھتا ھے کہ میرے پاس بڑا دماغ ھے ، یہ ان پڑھ سردار میرا کیا بگاڑیں گے ۔اس سے پہلے کہ وہ مجھ پر حملہ کریں میں اپنے کیمرے سے ان کی تصویریں لے لوں گا ثبوت کے طور پر اور پھر وہ مجھے کچھ نہیں کہ پایں گے ۔ تھوڑی دیر بعد سردار ڈنڈے اٹھاے وہاں پہنچتے ھیں اور وہ کیمرا پکڑ کر تیار بیٹھ جاتا ہے۔اب جو سردار اس کا دروازہ توڑ کے اندر آتے ھیں تو پھلا ڈنڈا ماسٹر صاحب کے کیمرے پر پڑتا ہے اور آگے آپ خد سمجھدار ھیں۔
ویسے میں نے سنا ہے کہ یہی سب لطیفے انڈیا میں لوگ سردار کی جگہ پاکستانی لگا کر سناتے ہیں۔۔۔۔

Khawar کہا...

ميرے علم اور تجربے كے مطابق سكهـ لوگ مسلمانوں سے بەت نفرت كرتے ەيں
مسلمان كەلوانے كو يه لوگ گالى سمجتے ەيں ليكن جەاں يه لوگ مجبور ەوں وەاں مسلمان پنجابيوں كے بهائى بهائى بن جاتے ەيں ـ
خاور كهوكهر

مصطفیٰ ملک کہا...

واقعی اس وقت ہمارا یہی حال ہے

Popular Posts