جمعرات، 12 اپریل، 2012

لائیک کا بٹن

فیس بک پر ابھی تک لائیک بٹن تو هے
لیکن ڈس لائیک یا
تنقید کا بٹن نهیں هے
اسی طرح قوموں کے مزاج میں بھی کچھ بٹن هوتے هیں
جیسا که پاک  ملک کے لوکاں میں ایک بٹن هے
صرف لائیک  کا
مردوں کی میتوں کی جنازوں کی بات پر ان کا صرف لائیک کا هی بٹن هے
ڈس لائک کا بٹن چھوڑیں
حقیقت کی نظر تک بند هو جاتی هے جی
میتوں مردوں کی زندگی کے متعلق
وه فیس بک هے
جس ميں صرف لائک کا بٹن هے
اور یه فیس پاک ہے
بے نظیر کا هی معامله دیکھ لیں
پنکی سے لے کر دختر مشرق بننے تک
کیا کیا مقامات وصل و فراق تھے
اور کن کن رنگوں کے تھے؟
میت بنتے هی
سب کا لائیک  بٹن اون هو گیا
بی بی شهید ، بی بی زنده ،بی بی وه بی بی یه
فیس پاک ایک دوسرے کا فیس دیکھتے هیں اور
کهتے هیں
بس جی مرن والی برائی ناں کرو
اور پھر جھوٹ بولتے هیں مردے کی اچھائیوں کا
اور دوسری نسل میں جاتے جاتے یه جھوٹ ، اس مردے کی کواٹی بن کر روحانیت کی منزلیں طے کرنا شروع کردیتا هے
اور پھر چل سو چل
پاکستان میں جب بھی لاش گرتی هے تو
اس کے لائیک کا بٹن دبانے میں اتنے هی لوگ شامل هوتو هیں جتنا اس کا میڈیا
مضبوط هوتا هے
عام بندے کا میڈیا کمزور هوتا هے
اس لیے اس کو رونے والے بھی کم هوتے هیں
اور مضبوط میڈیا والے
بلے بلے
دوسری بات
پاکستان رهنے کے لیے بنا هے
پاکستان همیشه قائم رهے گا
یا اس طرز کی بڑهکیں
باتیں  بهت مل جاتی هیں پڑھنے کو سننے کو
مجھے یه باتیں ایسی لگتی هیں جیسے اندھیرے میں ڈرا هوا بچا
جو للکارے مار رها هو که مجھے ڈر نهیں لگ رها
ملک!!ـ
اداروں کے کومبینیشن سے بننے ولا ایک نظام هوتا ہے
اداروں کی گراریوں سے بننے والی مشین هوتی هے
پاکستان کی گراریوں میں سے کون سی گراری
ہے جو اپنی ذمه داری کا دس فیصد بھی پورا کر رهی هے ؟؟
فوج کے منظم ترین ، اصول پسند، ڈسپلنڈ هونے کا پروپیگینڈا هے
اندر کا حال تو معلوم نهیں هے
لیکن
اس ادارے کے چیف یعنی چیف آف آرمی سٹاف کی مدت هوتی ڈھائی سال !!!ـ
پچھلے پچاس سالوں میں کتنے چیفوں  نے یه مدت ضابطوں کے ساتھ پور کرکے اپنے جونئیر کو اگے انے کا موقع دیا هے ؟؟؟
برف کے تودے سے مرنے والوں کے لیے
فیس پاک کے سبھی لوگوں کا لائیک بٹن ان هے
لیکن
ان لوگوں نے کهان کهان ضابطوں کے پورا کرنے میں کاهلی کی ہے اس کو چھپانے کا انتظام تو پاک فوج کے پاس هو گا لیکن
نظام قدرت کا اپنا صول ہے
جس ميں سزا معطل نهیں هوا کرتی
اور موت کا دن مقرر ہے تو
اب قوم کے ترس کی کیا ضرورت هے ؟؟

5 تبصرے:

گمنام کہا...

Pakistan National Assembly and Government controlled by Saudi King
http://www.youtube.com/watch?v=CCYmMLRKg1Y

علی کہا...

لا ئیکا گیا

umar کہا...

زبردست

Mohsin Hijazee کہا...

بہت خوب۔ برجسہ اور برحق۔

Dohra Hai کہا...

بہت بڑی بات کہ دی آپ ۔ بہت زبردست