سوموار، 22 فروری، 2010

فیس بک ؟؟

فیس بک ؟؟
یار جی هوا یه که میری ای میل پر میلیں انے لگیں
که فیس بک پر یاری کی خواہشمند لڑکیاں اور اور لڑکے آپ کا نتظار کررهے هیں
جب اس پر کلک کیا تو اس نے پاس ورڈ مانگا
جب میں نے بناے کی کوشش کی تو ایرر انے لگا کی آپ کا ای میل پہلے هی ممبر بن چکا ہے
لو جی کرلوگل !!ـ
میں بنایا هی نہیں که بن بھی گیا
جب ایم میل پر پاس ورڈ منگوا کر اینٹر هوئے تو جی کسی نے عجیب سے فی میل نام سے میری ای میل سے اکاؤنٹ بنا لیا هواتھا
عجیب چیز ہے جی یه فیس بک که بندھ کر کچھ نهیں رھا ہے بس گپیں مارے اور سنے
اون لائیں ٹھرک جھاڑے اور بس
یار مسلمان تو سنا ہے بڑے مادی سوچ کے مالک هوتے هیں که وھ جانور بھی پٹ کےطور پر نهیں پالتے جس کو بعد میں ذبع کرکے کھا ناں سکیں
لیکن جی
هوا میں تیر چل رهے هیں

می كبھی بھی چاٹنگ کا شوقین نهیں رھا هوں
که اس سے احساس هوتا ہے که کچھ لڑکیاں اور کچھ لوگ لڑکیاں بن کر مردوں کے پرزے کو پریشان کرنے کی تحریک پر نکلے هوئے هیں
اس لیے میں کسی یونیورسٹی میں یا بارونق علاقےميں جاکر کسی رحم دل سی خاتون سے گپ شپ کرنے کو ترجیع دیتا رھا هوں
اس لیے یار لوگوں سے درخواست ہے که میں فیس بک کو وقت نہیں دے سکتا
کیوں که کام بہت هیں جی کرنے کو
کمائی بھی کرنی هوتی هے
حالات سخت هی
اس لیے فیس بک
پر انا جانا بڑا اوکھا لگتا ہے

جمعرات، 18 فروری، 2010

خاصاں دیاں باتاں

میاں محمد بخش صاحب جنہوں نے منظوم سیف الملوک پنجابی لکھی ہے ان کا ایک شعر هے
خاصاں دی گل عاماں اگے تے نہیں مناسب کرنی
دودھ دی کھیر بنا محمد کتاں اگے دھری
معنی هیں اس کے که اہل فکر یا اهل دانش کی باتیں عام لوگوں کے سامنے کرنا ایسے هی هے جیسے که دودھ کی بنی کھیر کتے کے سامنے کھانے کو رکھ دی جائے
که کتے کو تو پیٹ بھرنے هے مطلب ہے ناں کی کھانے کی کوالٹی سے ـ
یہاں میاں عاصم رضا صاحب هیں جاپان میں یه صاحب کسی حد تک خاصاں میں شامل هیں
کسی حد تک اس لیے که پورے خاصاں نہیں هیں
انہوں نے جب یه شعر میرے منه سے سنا تو کہنے لگے که اب کو شعر میں غلطی لگ رهی هے
میاں صاحب نے دودھ کی کھیر نهیں میٹھی کھیر کها تھا
کیونکه کھیر تو دودھ کے سوا بن هی نهیں سکتی
تو میں نے ان کو بتایا که کھیر گنے کے رس کی بھی هوتی هے جس کو پنجابی میں رو دی کھیر کهتے هیں
کھیر بنولے کی بھی هوتی هے جو بھینسوں کو کھلائی جاتی ہے
اس کو پنجابی میں وڑیویاں دی کھیر کہتے هیں اور کھیر باجرے کی بھی هوتی هے !!ـ
یه سن کر میاں عاصم رضا نے خاموشی اختیار کرلی تھی ،
اج موضوع هے جی که خاصاں دی گل
عاماں اگے
وه استاد دامن نے بھی کہا تھا
جے چاھنا ایں ناں دامن تینوں ٹھیس لگے
تے جاھلاں وچ دانائی تقسیم ناں کر

قبر پرست ، شخصیت پرست ، بت پرست وغیرھ سے اگر اپ ناں نظر انے والے اللّه کی بات کرکے توحید سے معاشرے کو کیا فوائد حاصل هوتے هیں اور یه کتنے دائیمی هوتے هیں
ان فوائد کی وضاحت یا تصیل بتانے لگیں تو
یه عامان جو حال آپ کا کریں گے وھ
آپ خود کو عاماں تو کیا ذلیل سے محسوس کریں گے
چمچے بن کر یا بنا کر رکھنے والے معاشرے کے بظاهر بااثر لوگوں کو برابری کی بنیاد پر ملنے اور دوستیان بنانے کے معاشرتی فوائد بتا کر دیکھیں
هو سکتا هے که علاقے کا تھانے دار آپ کی تشریف کو لال سرخ کردے
آپ کے گاؤں کا کوئی لڑکا فرانس مزدوری کے لیے پہنچ جاتا ہے آپ اس کو کرسچن ڈیور ، یا ایو سینلورن کی یا کسی بڑے برانڈ کی شرٹ لے دیتے هیں
اور وھ اس شرٹ کو پہن کر رنگ کے کام میں کام والے كپڑوں کے طور پر استعمال کرنے لگتا هے تو
خاصاں دی گل عاماں اگے والی بات هو جاتی هے
کھانے کے شوقین عام لوگ جن کے نزدیک کھانے کی کوالٹی نهیں کوانٹٹی هوتی هے ان کو آپ سوشی کھانے کے لیے لے کر جاتے هیں تو ان کا منه دیکھ کر آپ کو شرمندگی هو گي
که
خاصاں دی گل عاماں اگے کرکے دیکھیں
وھاں فرانس میں ایک لڑکا تھا ہمارے گاؤں کے پاس کے گاؤں گا ، ایک دن کہنے لگا میں بھی دنیا بھر کے کھانے کھا کر دیکھے هیں ، کوئی زیادھ فرق نهیں هوتا ہے
میں نے اس سے پوچھا که آووکیٹ نامی کالا سا بدھا سبزی کی دوکانوں پر دیکھا ہے اس کا مزھ کیسا هوتاهے ؟
اس کا جواب تھا
واھ واھ هوندا اے
یعنی اچھا مزے دار هوتا ہے
میں نے دوبارھ پوچھا
میٹھا هوتا ہے نمکین هوتا هے
یا پھر ؟
تو جی اس کا جواب تھا
که تم بتاؤ که کہاں هوتا ہے پنجاب میں
چیز نان؟؟
یہان فرانس ميں هر ریسٹورینٹ میں ملتا هے
اب اس کے نزدیک هو ریسٹورینٹ کا مطلب تھا
جی دیسی ریسٹورینٹ
بات هو رهی تھی
خاصاں دی گل عاماں اگے
تو جی اپ دن میں پانچ دفعه مسواک کےکرنے سے کھانے کی اشتہا کم هونے کا بتا کر دیکھیں
کسی موٹے سے پاکستانی کو
جس کا پیٹ توند بنا هو جس کا گند کا ایگزیٹ مٹکے بنا هو
تو
جی
خاصاں دی گل عاماں اگے
ایک دن یہاں میں ایک ٹرانسپوٹر کے دفتر ميں بیٹھا تھا
ٹرک خریدنے کے لیے گیا تھا
اس سے کوئی بھٹی نامی پاکستانی پہلے ٹرک خریدتا تھا
اس جاپانی ٹرانسپوڑر کی بیوی نے پوچھا که وھ اتنا بے ہنگم موٹا کیوں هے ؟؟
تو میں اس کو بتایا که بچپن سے کھانے کو ترسے هوئے لوگوں کو جب کھانا میسر اتا ہے تو بس کھائے هی چلے جاتے هیں
اور اس کو وھ لوگ کھاندے پیندے گھر کا کہتے هیں
اصلی والے کھاندے پیندے گھر میں آپ برطانیه کے شاہی خاندان دیکھ لیں یا جاپانی شاھی خاندان
بل گیٹس کو دیکھ لیں یا کسی اور خاصاں کے امیر کو
لیکن جی بات پھر وھیں آتی هے
خاصاں دی گل عاماں اگے
جمہوریت کی ڈیفینیشنز، دین (سسٹم ) کی بات
سیاسی پارٹیوں کی خاصیت اور ساخت ، صفائی ، طہارت ، تکینک ، کسی بھی معاملے میں اپ خاصاں دی گل عاماں اگےکر کے تو دیکھیں

ساری باتیں ایک طرف اور ایک حقیقت که میں خود بھی ایک عاماں میں سے هوں
اور تکنیکی طور پر اور علمی طور پر بھی مجھے سے کہیں زیادھ علم اور سمجھ رکھنےوالے لوگ انٹر نیٹ پر بھی اس وقت یه پوسٹ پڑھ رهے هیں
هو سکتا ہےکه ان میں سے کچھ زیر لب مسکرا کر سوچ رهے هوں
خاصاں دی گل عاماں اگے!!!ـ

بدھ، 17 فروری، 2010

پاک جمہوریت

جمہوریت کو انگریزی میں کہتے هیں
لوکاں کی حکومت لوکاں کے ذریعے لوکاں پر
لیکن جی اس کا پاک ستان ترجمعه ہے
کرسی نشینوں (چئرمین) کی حکومت چمچوں (پارٹی ورکر) کے ذریعے لوکاں پر ـ
پاک ستان کو جب عربی لوگ لکھتے یا کہتے هیں تو باک ستان بن جاتا ہے
اور جاپان زبان ميں کم عقل کو باکا کہتے هیں
اس لیے جب کسی عربی کی زبان سے باکستان سنتے هیں تو لگتا هے که کمعقلوں کے رہنے کی جگه کہـ رها هے
اور مزے کی بات هے که هماری چیزوں کی ڈیفینیشن نے هم لوگوں کو کم عقل هی بنا کے رکھ دیا هے
استعمار کو هم لوگ جمہوریت کهتے هیں ـ
سلیکشن کو هم لوگ الیکشن کہتے هیں ـ
میٹھے کو مزھ کہتے هیں
گورے کو سوھنا کہتے هیں
چالاک کو سیانا کہتے هیں
پاکستان کی سیاست اب کچھ لوگ باہر کے ممالک میں متعارف کروانے کی کوشش کررهے هیں
یه لوگ کون هیں ؟
یه وھ لگ هیں جو یا تو کسی کو ماتحت بنا کر رکھتے هیں یا کسی کے ماتحت رھ کر هی مطعمن هوتے هیں
ان لوگوں کو برابری کی بنیاد پر دوستیوں تعلقات کا علم هی نہیں هے ـ
باہر کے ممالک ميں هم لوگ کیوں هیں ؟
اس لیے که پاکستان کے پاکستان کے سیاسی ، معاشی ، اور معاشرتی حالات میں هم لوگ مس فٹ تھے ـ
پاک معاشرے نے همیں رد کردیا که هم نے اس معاشرے کو چھوڑ کر رد کردیا اس میں اختلاف پایا جاسکتاہے لیکن یه حقیقت ہے که باہر رهنے والے لوگ جن میں میں بھی شامل هوں ، پاکستان کو رہنے کے قابل نهیں سمجھتے ـ
اگر کسی کو میرے اس لکھے پر سیاست چمکانے کی کوشش کرنی ہے تو میرے ساتھ بحث کرنے سے پہلے جاپان کا ویزھ چھوڑ کر دے اور بات کرئے ـ
باہر کا ویزھ لینے کے لیے کیا کیا پاپڑ بیلنے پڑے ؟؟
اس کا مطلب کیا هے ؟
پاکستان چھوڑنے کے لیے کتنی کوشش کی !!ـ
تکنیکی طور پر باصلاحیت لوگوں سے معذرت کے ساتھ جن کو کچھ ممالک نے خود بلا لیا هو گاـ
یورپ امریکه اور جاپان میں سیاسی پارٹیاں اور ان کے ورکر ان ممالک کے حالات پر کیا اثر کرسکتے هیں ؟؟
نشستن ، گفتن ، خوردن، برخاستم
اایک چھوٹی سی بات ہے جس کا که هر بندے کو علم هونا چاھیے که اگر جاپانی حکومت هم پناھ گزینوں سے کوئی بات کرنی چاھے گی تو وھ کسی بھی سایسی پلیٹ فارم پر بات نهں کرئے گی بلکه یہاں موجود لوگوں کی کسی تنظیم یا لیڈر سے بات کرنا پسند کرئے گی
لیکن پارٹیاں بن رهی هیں اور مزے کی بات یه هے که ان پارٹیوں ميں اس بات کا مقابله ہے که ان ميں سے کسی بندے کے پاکستان میں سایسی پارٹی کے لیڈر سے کتنے تعلقات هیں
اور پاکستان والا لیڈر کیا ہے اور اس کے جمہوریت سے کتنے تعلقات هیں ؟
تاحیات چئیر پرسن!!!ـ
ختم شد
یہان تک لکھ کر ذہن بدل گیا که که بات کچھ بور سی هو گئی هے

بدھ، 10 فروری، 2010

جاپان میں مشہوری کا گر

یملے نے خود خاور کو آواز دی که بات سنو جی خاور صاحب ـ
خاور اوکشن میں میزوں کے پاس سے گزر رها تھا جبکه یملا میز پر بیٹھا هواتھا
خاور نے کرسی سنبھالی اور پوچھا جی ؟
تم بڑے اون لائین اخبار نکال کر مشہور هونے کے لیے ایڑھی چوٹی کا زور لگا رهے هو ، اوؤے آؤ میں تم کو جاپان میں مشہور هونے کا گر بتاؤں !ـ
میں سستی شہرت کا قائل نهیں هوں جی ، خاور نے کہا
اور جاپان میں سستی شہرت بھی کوئی اتنی سستی نهیں هے
سب ملا جلا کر ایک لاکھ ین تو لگ هی جاتا هے ماھانه اور زیادھ بھی هو سکتے هیں اور تمہاری اوقات کیا هے ؟ یملا سانس لینے کو رکا تو
خاور نے کہا جی میری اوقات صبح ساڑھے تین بجے سےلے کر شام تھک جانے تک ہے
یملا شروع هو گیا
اوئے میں اوقات کار نہیں ، وھ والی اوقات پوچھ رها هوں جو نسلی لوگ پوچھتے هیں هم لوگوں سے ، لیکن چھڈو جی ناں تم نسلی ناں میں نسلی ، ویسے یار یه گورے لوگ سنا ہے اپنے کتوں کا بھی شجرھ رکھتے هیں ، که کس کتی سے تھا اور کس کتے کا تھا یه بلونگه ، اور اپنا ان کو ماں کے بوڑھے هونے پر پته جلتا ہے که جس ابا سمجھتے رہے وھ تو صرف ماں کا خصم تھا ، اصلی ابا تو گامے کمیار کا انگریز ماڈل تھا ـ
خود اپنی نسل اک معلوم هو یا ناں هو یه انگریز لوگ کتے نسلی رکھتے هیں ، نہیں اعتبار تو ان کے کالونی ممالک میں حکمران دیکھ لو !!ـ
خاور نے ھنگورا مار کر اس روکا اور کہا که جی موضوع سے ناں ھٹیں ـ
اپ نے مجھے کس لیے بلایا تھا؟؟
او جاپان ميں شہرت کا گر بتانے کے لیے ، اور یه میں تم کو اس لے بتا رها هوں که اس کو ٹائیپ كركے نیٹ پر چڑھا دو که جن کو علم نهیں هے ان کو بھی معلوم هو جائےکه جاپان ميں خود کو سیاسی حلقوں میں متحرک اور پی آر(پبلک ریلیشنز)والا کیسے شو کیا جاتا ہے
خاور نے یملے کو روک کر پوچھا یه پی آر کیا هوتا ہے
اوئے پی آر هوتا ہے پبلک ریلیشن ، تم کیا اس کا مطلب پاکستان سے رفیوز یا پاکی رولا یا کچھ اور تو نهیں سمجھ رهے ؟؟ یملے نے الٹا سوال کیا لیکن جواب سے پہلے هی خاور کو بتانے لگا که سن یار یہان جاپان میں دین (سسٹم) چلتا ہے اس لے یہان ساستدانوں کو حکومت ( معاشرے ) کی طرف سے اتنا زیادھ خرچا پانی دیا جاتا ہے که اس بندے کو کاروبار کرنـےکی ضرورت نهیں رھتی هے بلکه کاروبار کرهی نهیں سکتا که بد نام هو جائے گا
لیکن کچھ ناں کچھ کمائی کا شوق تو هوتا هےناں جی ہر بندے کو اس کے لیے ان جاپانی سیاستدانوں نے ایک طریقه اپنا رکھا ہے جس کو یه پارٹی کہتے هیں
ٹی پارٹی کہـ لو یا پین پلان کی پارٹی ، جس میں شمیولت کی شرط هوتی ہے که دو مان ین یعنی بیس ہزار ین سکه رائیحج الوقت بمطابق پاک روپیے کے تقریباً بس ہزار روپیه کی ٹکٹ لو اور شامل هو جاؤـ
بڑی مہنگی ٹکٹ ہے خاور کے منه سے نکل گیا
اوئے جاپان میں شہرت سستی نهیں هے
تم بھی تو روز خبریں ٹائپ کرکر کے پھاوے هو ئے جارهے هو که نهیں ؟؟
یملے نے کہا اور بات جاری رکھتے هوئے کہنے لگا
که اس ٹکٹ کو بیچنے کے لیے سیاسی پارٹیوں کے ورکر بے چین رهتے هیں که اس طرح ان کا ایک اچھا ایمج بنتا هے ان کا ان کے لیڈر کی نظروں میں ، اگر کسی نے بھی یه ٹکٹ لینی هو تو اپنے نزدیکی ساسی پارٹی کے دفتر میں جا کر پوچھ لے ، دفتر کی پہچان تو تم کو معلوم هی هو گي اور اگر جس کو معلوم نهیں هے وھ پھر بلکل هی کم علم هے اس مشہور هونے کے لے کچھ اور سوچنا پڑے گا ـ
اس کے بعد تم کو اتنا هو کرنا پڑے گا که جس وزیر کی پارٹی میں دو مان دے کر شامل هو اس کے ساتھ ایک تصویر ضرور بنوانی هے ، زیادھ هو جائیں تو اچھا ہے
اس کے بعد اگر تم خود ان پیچ پر خبر تیار کرسکتے هو تو ٹھیک ہے ورنه جاپان میں تین سے چار مان لے کر خبر تیار کرکے دینے والے کاریگر هیں ان سے رابطه کیا جاسکتا هے
یہان آ کر یملا رکا اور اور ظنزیه لہجے میں خاور کو کہنے لگا که تم بھی هو ناں جی کاریگر !!!ـ
تم هی تیار کردینا اور اور اچھا سا بیان بھی بنا دینا ، مثال کے طور پر اگر وزیر خارجه کی پارٹی ميں جاؤ تو بیان هو گا
مشہور بلاگر خاور کمیار نے جاپان کے وزر خارجه سے ایک ملاقات میں کہا ،دەشت گردی کی جنگ میں پاکستان گے کردار کو نظر انداز نهیں کیا جاسکتا
اور اگر وزیر داخله کی پارٹی میں جاؤ تو بیان هو سکتا هے
موٹے پداں والے نے جاپانی وزیر داخله سے ایک میٹنگ ميں اس بات پر سیر حاصل گفتگو کی که پاکستان سے سبزیاں اور مزدور ایمپورٹ کرنے پر غور کریں ـ
خاور نے پوچھا که اگر اگلے دن وزیر صاحب نے کہـ دیا که ان سے اس طرح کی کوئی بات نهیں هوئی تو؟؟
اوئے تم نے ویزر صاحب کا کوئی بیان نهیں لکھنا ہے بس پاک لوگوں کا لکھنا ہے که انہوں نے کیا کہا ، وزیر صاحب نے سنا یا نهیں ان کو یاد هے که نهیں ، بس پاک بندے نے کیا کہا تھا تم اگر یه لکھو گے تو پکڑے نهیں جاؤ گےـ
اس کے بعد انٹر نیٹ پر اس پیغام کو لگوانے کے لیے پیسے تو دینے هی پڑیں گے چاھے خبر لگانے کے دے دو چاھے آپنی کمپنی کی مشہوری کی پبلسٹی کے ماھانه دو دو
کیسا لگا میرا آئیڈیا ؟؟ مشہور هونے کے لیے والا ، یملے نے سوال کیا
خاور نےکہا که تم خود یه فارمولا کیوں نهیں کرتے؟؟
تم کیوں نہیں کرتے تم کو بھی تو یه سارا علم تھا ناں ؟؟ یملے نے الٹا سوال کردیا
میری انا اور خودداری یه برداشت نهیں کرتی !!ـ خاور نے جواب دیا
تو کیا میرے اندر ایک بلونگڑا چھپا هوا هے جو هر وقت کسی مالک کی تلاش میں ہےکه کوئی میرا پٹه پکڑے اور میں دم ہلا ہلا کر کسی کے قدموں میں لوٹنیاں لینے لگوں ؟؟
اگر ایسا هوتا تو تم لوگ مجھے پیٹھ پیچھے یملا نهیں کہتے ـ
بڑا معتبر اور سیانا اور ماہر بندھ کہتے
یملے نے یه بھی کہا که اگر اس آئیڈے کو کوئی استعمال کرنا چاھے تو بے جھجک پوچھ لینا میں گائیڈ کردوں گا
اور اگر کوئی بات خود سے یاد آئی تو بعد میں تم کو بھی کہـ دوں گا

منگل، 2 فروری، 2010

زبان یار من

یه شعر که مجھے بھی اس کا دوسرا مصرع معلوم نهیں تھا کهه ایک کالم میں پڑھا تو اس کی دو منعی پر پنجابی کے دومنعی سے مماثلت نظر آئی
اگر اپ کو فارسی نهیں اتی تو رہنے دیں اس کا ترجمعه ناں هی کروائیں
زبان یار من ترکی و من ترکی نمی دانم
چه خوش بودے اگر بودے زبانش در دہن من
باقی جی بات هو کسی ملک کی که جو تکنیکی طور پر پاک ملک جیسا هو تو بات نهں هے لیکن جاپان میں
ایک سائیٹ بنائی تھی ایک جاپانی دوست کے لیے
http://www.kuwagatasite.com/
میں نے اس دوست کو سائیٹ پر مسلسل کام سے معذرت کی تھی ، که یه دوست کیڑے بیچنا چاھتا ہے سائٹ پر یه جو تصویر ہے اس کو کابوت موشی کہتے هیں جاپانی میں اور اس سے لڑکے بھالے کھیلتے هیں گرمیوں میں یه مہنگے بکتے هیں شہری لوگوں میں ، اس لیے دیہات سے پکڑ کر ان کو سائیٹ بر بیچنے کا آئیڈیا اس دوست کا تھا جس کا نام ہے سگی موتو
اس کی بیوی نےایک دن فون پر سائیٹ پر تصویریں لگانے کےلیے مجھے طریقه پوچھا
میں نے اسکو لوگ ان هونے کا طریقه بتانے کے لیے کہا که ہسٹری بار میں دومین لکھو
اس کا سوال تھا ہسٹری بار کیا هے ؟
میں نے بتایا که جہاں ڈبلیو ڈبلیو لکھاهوتا ہے اس نے کہا که وھ تو نهیں ہے
میں نے کو فائیل سے یو آر ایل ڈالنے کا بتایا
جب میں نے اس کو کہا کوواگاتا سائیٹ ڈاٹ کوم تو اس کا سوال تھا
ڈاٹ کو سپیلنگ ڈی او ٹی هی هیں ناں ؟؟
ایک اور جاپانی ہے ان دنوں ٹی وی پر کلاسک جاپانی گانوں ميں سیکھ رها ہے
اس کی ایک کوالٹی ہے که وھ جاپانی زبان کا وھ ایڈیشن بولتا ہے جو اردو میں لکھنو کے پرانے نوابوں کا هوتا تھا
اس کی جاپانی سن کر سننے والے کو ہنسی ضبط کرنا مشکل هوجاتا ہے
که ایسی پاکیزھ زبان تو اب شہنشاھ کی فیملی هی بولتی ہے یا شاھی خاندان کے نوکر که شاھ کو مخاطب کرنے کے بھی تو آداب هوتے هیں ناں جی
یه لڑکااس سال بیس سال کا هوا ہے
بیس سال کا هونے پر جاپان میں جنوری کے دوسرے سوموار کو ایک دن منایا جاتا ہے جس دن سارے بیس سال کی عمر کو پہنچے جوان لڑکے اور لڑکیاں آپنے آپنے شہر یا گاؤں اکٹھے هوتے هیں
اس دن اس سنگر لڑکے نے گول گول گیندوں کے ڈیزائین والا کی مونو (جاپانی روایتی لباس) پہنا هوا تھا
جو که معمول سے ھٹا هوا سا ڈزائین ہے
جس پر اس سے میڈیا والوں نےپوچھا که اس کے هم عمروں نے اس لباس پر کوئی بات تو نهیں کی هے؟؟
تو اس نے بتایا که سب لوگ کہ ـ رهے تھے
ڈاٹ ڈاٹ
فیر ڈاٹ
آگے وی ڈاٹ هی ڈاٹ
کمپئیر کو ہنسی ضبط کرنا مشکل هو رها تھا که اس لڑکے نے سوال جڑ دیا
یه ڈاٹ ہے کیا چیز؟؟
یه باتیں هیں جی ان لوگوں کی جو جاپان کے براٹ اپ هیں
تو جی پاک دیهاتیوں کا کیا هو گا
وهاں امریکه میں کافی میں میٹھا گولنے کے لیے سٹرا کی ایک قسم ہے جس کو لمبائی میں درمیان سے دبا دیا گیا ہے که سٹرا سخت هوجائے
اس سٹرا کو پانی میں ڈال کر اگر بندھ کوشش کرے تو بھی کافی زور لگا کرهی کوئی قطرھ کھینچا جاسکتا ہے
ایک دن زلفی نے بتایاکه جب وھ نیا نیا امریکه آیا تھا تو اس نے کوشش کی تھی کی اس سٹرا کے ساتھ کافی پینے کی لیکن بعد میں کسی نے بتایاکه یه کافی پینے کےلیے نهیں هے
چینی گھولنے کے لیے هے
بھر زلفی پوچھنے لگا که تم نے بھی تو یه چیز امریکه آکر هی دیکھی ہے تم نے یه غلطی کیوں نہیں کی ؟
میں نے کها که مجھے سٹرا سے کافی پینے سے زبان کے جلنے کا خطرھ تھا اس لیے ميں اپنی دانست میں اس سٹرا کو استعمال ناں کرکے پینڈو سا فیل کررها تھا
لیکن یار جی ایک جاپانی نے لاس اینلس ائیر پورٹ پر مجھے یه بتا کرحیران کردیا که امریکه کا کافی پینے کا سٹرا استعمال میں بڑا مشکل ہے کافی کھینچی هی نهیں جاتی
بندھ پوچھے که جاپان میں تم نے کبھی کافی کو سٹرا سے پیا ہے
حاصل مطالعه
ساری دنیا امریکه کو سیانا سمجھتی ہے
فارسی کے شعر کا دوسرا مصرع
ہر خواهش په دم نکلے
تاڈا کی خیال اے ؟؟