منگل، 29 دسمبر، 2009

نئی صدی کے جرنلسٹ اور فرقه تصویریه

مولوی سرمے دانی کو طرح یه کہـ کر که جس کسی کے پاس دو سو ڈالر آجاتے هیں وھ سائیٹ بنا لیتا هے !!ـ میں سرمے دانی کے لیول پر نہیں اترنا چاھتا
اج کی بات ہے جاپان میں بننے والی ایک سائیٹ ناپاک نیٹ کی جو که مفت والی سائیٹ هے
بندے کو پیسے سے تولنے والی کنجر سوچ کو تو یه هی کافی هے که سائیٹ بغیر پیسے کے بھی بن جاتی هے
جیسے که خاور کا بلاگ ، بلاگ سپاٹ والاہے اور کتنے هی لوگ هیں جن میں صلاحیت تھی اور انہوں نے بغیر پیسے کے کام شروع کرلیا ، اور جب پیسے کےاستعمال کا وقت آیا تو پیسے بھی استعمال کیے اور اپنے اپنے دومین پر کتنے هی بلاگروں نے بلاک بنا لیے ـ
جی تو بات یه هے که جاپان میں بھی سائیٹں بنانے کا مقابله ہے
اس کے پیچھے شوق هے جرنلسٹ بننے کا
جی هاں بننے کا شوق جرنلازم هے کیا اس کا چھڈو جی ، مٹی پاؤ جی ، عقل کا زیادھ استعمال ؟؟
پاک سوچ بڑی کفایت شعار هوتی هے
اتنی کفایت شعار کی حکومتی پالیسیاں بھی ڈنگ ٹپاؤ ٹائپ هوتی هیں دور کی سوچ کر سوچ کی فضول خرچی !!!ـ
لیکن جی یه جاپانی لوگ بڑی عجیب سوچ کے هیں کہتے هیں دماغ میں مغز ایک کچی چیز هوتی هے اگر اس کا استعمال ناں کیا تو بدبو چھوڑ جائے گا!!!ـ
اللّه عالی شان کا فرمان بھی قران میں کچھ اسی طرح کا هے جو سوچنے کے متعلق هیں ـ
جرنلسٹ بننے کے شوقین لوگ جن میں اب مجھے بھی شامل کرلیں ان کا علم اتنا هےکه سیاسی وابستگیوں پر فخر ہے مذہبی فرقه بندی سے تعلق کو اسلام سمجھتے هیں ،
اور یه لوگ جرنلسٹ بننے جارهے هیں
اللّه دی شان اے جی !!!!ـ
کپڑے ميں بھی جان اے جی

جب 2007 میں میں جاپان آیا تو میں نے دیکھا که لوگوں میں انٹرنیٹ پر جاپان میں مقیم پاکستانیوں کے حالات جاننے کا شوق هے
ان دنوں ایک هی سائیٹ تھی جو میری نظر سے گزری وھ تھی پاک جاپان نیوز ڈاٹ کوم
تکنیکی طور پر اس وقت بھی اور اج بھی یه سائیٹ بہت پیچھے هے یعنی پچھلی صدی کی تکنیک میں ان پیچ والی عکسی تکنیک
بہرحال اس کے بعد ایک بندے کو میں نے کچھ دوستوں کے سہارے چیف ایڈیٹر بنا دیا ،
لیکن اس بندے کے ساتھ وھ هوا جو که ایک کمہار کے گدھے کے ساتھ هوا تھا ، کمہار نے گدھا ایک استاد کو دیا تھا که جی اس کو بندھ بنا دو لیکن کچھ عرصے بعد استاد نے کمھار کو بتایا که مساله زیادھ لگ گیا ہے
اس لیے تمہارا گدھا جون پور کا قاضی لگ گیا ہے
ایڈیٹنگ سے ناواقف یه بندھ مساله زیادھ لگنے سے اب چیف ایڈیٹر ہے ـ
اور جاپان سے فرقه تصویریه کا ماننے والا هے
یه فرقه تصویریه کیا هے ؟
یه ایک نیا فرقه ہے جو کہلواتے تو مسلمان هی هیں لیکن یه وھ لوگ هیں جو پاکستان سے نکلنے میں کامیاب هو کر باهر کے ممالک میں پناھ گزین هو گئے (میری طرح) اور جب اِن ممالک کی مہربانی سے حالات ٹھیک هوئے هیں تو ان کو نیٹ پر تصویریں لگوانے کا بڑاشوق ہے
یه ایک نیا فرقه ہے اس لیے ابھی کسی لکھنے والے نے ان پر تفصیل سے لکھا نهیں هے ، اس لیے ان کی عبادات کی ترتیب ماحول وغیرھ ابھی عام لوگوں كے لیے نامانوس هے ـ

پھر میں نے خود بھی جی ایم خاور ڈاٹ کوم بنا لی
http://gmkhawar.net
باقی کی سائیٹوں کی فہرست آپ جی ایم خاور ڈاٹ نیٹ پر سائیڈ بار میں دیکھ سکتے هیں ـ
اس سائیٹ پر بھی فرقه تصویریه کوکسی حد تک سپورٹ کیا جاتا هے ـ
اب جی پچھلے دنوں ایک ان پڑھ بندے شیرو نے جو که لکھنا پڑھنا نهیں جانتا هے اس نے ایک سائیٹ بنائی ہے جس پر اس کو چيف ایڈیٹر لکھا گیا هے ـ
اس کا ایڈریس ہے
http://www.paknetjapan.com/
جو که بدل کر بعد میں
http://www.paknetjapan.net
هو گئی ہے
اس سائیٹ کا نام رکھا گیا هے جی پاک نیٹ
یه پاک نیٹ شیرو کا هے جس کے متعلق میں پہلے بھی ایک پوسٹ لکھ چکا هوں
یه سائٹ فرقه تصویریه کو بڑا اجاگر کرتی هے،
بلکه فرقه تصویریه کے لیے هی بنائی گئی هے ـ
اور اس کے مقابلے میں کسی ستم ظریف نے بنا دیا هے ناپاک نیٹ
جس کا ایڈریس هے
http://www.paknetjapan.webs.com/
اب جی ان سائیٹوں پر مقابله هے مصرع اور طرح مصرح کا
خاصا دلچسپ ماحول بنا هوا هے
لیکن یه سائیٹ فرقه تصویریه کی اصل تصویریں بھی لگا دیتی هے جس کے لیے فرقه تصویریه کے لوگوں کو غالباً پیسے دے کر اپنی تصاویر اتروانی پڑتی هیں ـ
منافق لوگوں کا توبه توبه کرنے کا شوق بھی پورا هو رھا ہے ، اور مذھبی لوگوں کا مذہب جھاڑنے کا شوق بھی پورا هو رها هے
عام لوگ جو جاپان میں کم هی هیں ، لطف اندوز هو رهے هیں ـ
خاص لوگ جو جاپان میں زیادھ هیں ان بے چاروں کو سمجھ هی نهیں آ رهی که هو کیا رھا ہے کیونکه یه خاص لوگ حادثاتی طور پر خاص لوگ هیں ، جاپان کی کمائی سے !!!ـ

سوموار، 28 دسمبر، 2009

سیاسی بیانات کی تعریف

اخبار پڑھ کر طبیت خراب هو جاتی هے
منافقت نہیں دھٹائی کی انتہا ہے
جس میں جو کمی هے وھ اسی کو للکارے مار رها ہے
حکومت ، آہنی ھاتھوں کے للکارے
بیانات کچھ اس طرح کے هیں
شر پسندوں کو اجازت نهیں دی جائے گی !!ـ
تہاڈے کولوں اجازت منگن گے تے ناں جی
وھ ایک پرانا لطیفه ہے
که گاؤں میں چوری هو گئی تو سب سیانے گویڑ لگا رهے تھے که چوری کس نے کی هو گی
تو جی باهر کی کمائی سے سیانا بن گیا
بندھ کہنے لگا که جی مجھے پته چل گیا هے که چوری کس نے کی هے
جب سب کا دھیان اس کی طرف هوا تو اس نے بتایا که
میرے خیال میں یه کسی چور کاکام ہے
اس دن سے غالباً یه محاورھ بنا ہے
جنہان دے گھر دانے اونہاں دے کملے وی سیانے
کملے جی !!ـ
سیانے تے سیانے هی هوتے هیں ناں جی دانے هوں یا ناں هوں

پاکستان میں قیادت اورجمہوریت کاشدیدفقدان ہے۔فلاں خان
لیکن یه صاحب خود ایک سیاسی جماعت کے کارکن هیں ان سے بندھ پوچھے که آپ کی جماعت میں کیا ااندورونی انتخابات کا رواج هے جو آپ جمہوریت چاھتے هیں ؟؟
ملک میں جمہوریت چاھیے اور جماعت میں صرف سجادھ نشین


ایک صاحب کا بیان ہے
مسلم لیگ(ن) جہاں ایک طرف ملک میں جمہوری عمل کے تسلسل پر کسی قسم کا سمجھوتہ نہیں کرے گی،فلاں اقبال

ان صاحب کے نزدیک غالباً جمہوریت کا تسلسل شریفین کی جماعت پر گرفت کا نام ہے
پچھلی دفعه مسلم لیگ نے جماعت کے اندر الیکشن کروا کر جمہوری هونے کا ثبوت کب دیا تھا؟؟

ایک صاحب کا بیان ہے

این آراوکے انجام سے ملک میں نئے دورکاآغازہوگا۔
هاهاهاهاهاهاها
نیا دور ؟؟
جس کے بعد یه صاحب باھر کے ملک کا ویزھ چھوڑ کر پاکستان منتقل هو جائیں گے


یه پڑھیں
سترہ ججوں نے سترہ کروڑعوام کا مستقبل تاریک ہونے سے بچالیا۔ فلاں پرنس
مستقبل اور روشن؟؟
غالباً اپنی جماعت کے سجادھ نشین کے بچوں کے مستقبل کی بات هے
ورنه اگر خاور کے بچوں کا مستقبل ذرا سا بھی روشن نظر اتا هوتا تو خاور باہر ناں آتا
اور ناں هی آپ باہر اتے اگر آپ کا کوئی مستقبل پاکستان ميں هوتا

یه دیکھیں
مضبوط اداروں کی مدد سے پاکستان ہرقسم کے خطرات سے نمٹ سکتا ہے۔ فلاں احمد خان
بات تو ٹھیک ہے ، اور سارے هی سیانے یه جانتے هیں
لیکن ان اداروں کا حال کیا هے اور یه حال کیا کس نے هے
اور ان کا حل کس کے پاس ہے؟؟
قول اور فعل کا تضاد اتنا زیادھ ہے که عام فہم بندھ تو جی اس کا جواب بھی دینا فضول سمجھنے لگا ہے
اسی لیے یه سیاسی لوگ اور بھی " بھوتر " گئے هیں
غالباً؟؟
بیانات دینے والوں کے نام اس لیے بدل دئیے هیں که ان لوگوں میں اتنی بھی اخلاقی جرأت نہیں ہے که اپنی کسی بات پر مشورھ بھی سن سکیں چاھے وھ مشورھ تعمیری هی کیوں ناں هو

بدھ، 23 دسمبر، 2009

پاک ناپاک باتیں

نیا سال انے کو ہے ، ایک اور سال چلا گیا ، عمر بڑھتی جارهی ہے وه حسن جو همیں حسین نظر اتا هے ، اس حسن کو ہم بابے نظر انے لگے هیں ـ
یارو بنانے والے نے یه وقت بھی کیا چیز بنایا هے ؟؟
خود لامکان میں هے بنانے والا !!ـ لامکان کے معنوں پر غور کریں ـ
اور وقت میں قید مخلوقات مکان میں هیں وقت نام کے مکان میں وقت جو گزرتا هی چلاجارها ہے ـ
وھ جو بڑے بڑے ولی اللّه بنتے هیں وقت ان کو بھی رگیدتا چلاجاتا ہے ـ
اگر کسی کو اپنی زندگی کے بڑھانے تک کا هی پرمیشن مل جاتا ناں تو جی تو وھ بندھ خدا بن هی جاتا
لیکن جی ه سیاسی پارٹیوں کے گدی نشین ، جو پارٹیوں کے اندرونی الیکشن نام کی رسم کا ذکر بھی پسند نهیں کرتے اور ان سجادھ نشینوں کے چمچے لوگ ؟؟
شخصیت پرستی ایک لعنت هے ، ایک روگ ہے ، ایک کوڑھ ہے انسانیت کے جسم پر ،اور قران اس بات سے اتنی بار منع کرتاہے که کسی بھی اور بات سے اتنا منع نهیں کرتا ہے
لیکن جی بنی ادم بھی ایک هی احمق ہے که هر دور میں کچھ لوگ گھڑ هی لیتا ہے
پرستش کے لیے
روحانیت کے نام پر شخصیات کی پرستش سے بہتر هیں وھ لوگ جو شہوت کے لیے کسی حسین کی وقتی پرستش کا ڈرامه کرکے کسی اور حسین کی تلاش میں نکل جاتے هیں ـ
پاکستان کا باوا آم هی نرالا ہے
ہر چیز اپنی اپنی پوزیشن سے نکلے جارهی هے
ایک انجن میں کچھ پرزے هوتے هیں جو اپنی اپنی ذمه داری پوری کرکے انجن کو انجن بناتے هیں اور انجن روز بناتا ہے اور زور ؟؟ ایک حقیقت ہے چاہے بستر پر هو یا میدان ميں ـ
اکر ایک ملک کو انجن سے تشبیع دیں تو پاکستان کے انجن کی کرنک پسٹن بننے کی کوشش میں ہے ، اور پسٹن کیم شافٹ کا کام کرنا چاھتا ہے ـ
فوج سیاست میں اتی ہے اور اتی هی چلی جاتی هے ، سیاستدان فوج کے ٹیسٹیکل کی پرستش میں مصروف هیں ـ
که وھ پنجابی میں کہتے هیں ناں جی جس کے ـ ـ ـوں میں گریس هو گی وھی پردھان هو گا ناں جی ـ
تو یه سیاسی لوگ جس جس کے ٹیسٹیکل میں گریس دیکھتے هیں ماتھا ٹیکنے لگتے هیں ـ
اب جب جی ہر پرزھ مرضی کے کام کرنا چاھتا ہے تو پھر انجن انجن نهیں رھتا کچھ اور هی کہلوائے گا
کیا؟؟
کوئی پاک چیز !!ـ
پاک روپیه ؟ بے قدر
پاک لوگ ؟ بے قدر
پاک فوج ؟ بے قدر
لفظ کے معنے هی بدل گئے هیں
پاک ؟؟
وھ کورین زبان میں کاکروچ کو پاکی کہتے هیں ـ
اور کاکروچ کو هی فرانسیسی میں کافر کہتے هیں (کچھ تھوڑا سا لہجه کافر سے مختلف هوتا ہے لیکن کافر هی سنا جاتا هے )
پاک ملک ، پاک لوگ ، پاک چیزیں
سنا ہے پاکستان نے گوشت ميں پانی ملانے کی تکنیک میں بڑی ترقی کی هے
قوت مردانه کی اتنی کمی که دیواروں پر حکیموں کےاشتہارات لگے هیں
وھ جب بیل زیادھ ستانے لگے تو اس کو مشک کافور دیاکرتے تھے روٹی میں لپیٹ كر
که اس سے بیل کی شہوت کم هوجایا کرتی تھی
میرا یه حال تھا مڈل سکول کے دور ميں که
میں نے کئی دفعه مشک کافور کی گولیاں کھائیں تھیں
لیکن جی یه اتناکام نهیں کرتی هیں
پھر وهی واردات !!ـ
جس کے بعد زیاں کا ایک زبردست احساس !!!ـ
بڑے دنوں بعد اج وقت ملاتھا کچھ لکھنے کا لیکن ذہن میں کچھ خاکه نهیں تھا
اس لیے جو لکھا ہے اس کو برداشت کریں

جمعہ، 4 دسمبر، 2009

قادری اور قادیانی مسالک میں فرق

قادری اور قادیانی مسالک میں فرق کی بات چلی تھی تو میری رائے یه ہے که
ان دونوں مسالک میں فرق صرف اتنا ہے که مکتبه قادیان والے صاحب تصوف میں سلوک کی منزلیں تہ کرتے کرتے نبوت کے مرتبے پر پہنچ گئے تھے لیکن
قادری صاحب تصوف میں سلوک کی منزلیں ابھی کر رهے هیں آگے اگے دیکھیے که کہاں تک جاتے هیں ؟
لیکن میرے خیال میں یه غوث سے ایک درجه نیچے قطب تک جا کردیکھيں گے که لوگوں کا رویه کیا هے اگر مخالت ناں هوئی تو غوث کی منزل بھی ته کرلیں گے لیکن اگر مخالفت کم هوئی تو غوث هی بن جائیں گے
اور قادری صاحب کے ماننے والے اپنی دوکانداری کی مشہوری کے لیے پاکستان کی مقبول ترین پروڈکٹ قادیانی مخالفت کو کیش کرواتے هیں
باقی جی مکتبه قادیان والے لوگ ان کی نسبت اعلی ظرف هیں که ان کی مخالفت میں کمر بسته نهیں هیں
یا شائد پرانی دوکان والے (قادیانی) اس نئی دوکان (قادری) کی مخالفت کی ضرورت محسوس نهیں کرتے
شائد اس لیے بھی که قادری صاحب ایک طرح سے قادیانی مسلک کے لیے راہیں صاف کررهے هیں
تصوف کی راہیں ، که جن پر چل کرهی مرزا غلام احمد صاحب نے نبوت کا دعوھ کیا تھا ،
باقی جی مقصد ان دونوں کا ایک هی هے که کسی طرح اسلام میں سے جہاد کو ختم کرکے سفید نسل کےلوگوں کی مخالفت ختم کی جائے
چاھے برطانیه هو که امریکه
شائد که تیرے دل میں اتر جائے میری بات
وھ جب گیارھ ستمر والا واقعه هواتھا امریکه میں تو امریکه افغانستان پر حمله آور هوا تو ان دنوں قادری صاحب نے بھی کچھ جہاد کی اس طرح کی وضاحتیں کی تھیں که جن سے ایسا لگتا تھا که اب قادری صاحب جہاد کو کینسل هی کردیں گے
سیانی بات یه هے که جب معاشرے تعلیمی اور اقتصادی طور پر کمزور هوں یا یه کہ لیں که زوال پذیر ہوں تو ان میں روحانیت طاقتور هوجاتی هے
ایک طرح کی افیم که لوگ اپنے دکھوں کا علاج ڈھونڈنے کی بجائے هر نقصان کا الزام رب کو دے لیں اور رب کے شفارشی لوگوں کو چندھ دے کر غریبی دور کریں
اج پاکستان میں روحانیت کی دوکانداری چمک رهی هے بنگالی بابے چل رهےهیں که ان کے پاس چھوٹی دوکان داری ہے ، ان کا علم کالا ہے ، پیر فقیر چل رهے هیں که ان کا علم سفید (نوری) ہے
وھ جی سارا زمانه هی گورے (یورپی) کو سیانا اور کالے کو برا کہ رها ہے
اس لیے اج زمانے میں سفید رنگ چنگا ہےاور کالا برا
چاہے وھ انسانوں کا رنگ هو که علم کا کپڑوں کا هو که خون کا !!-